Urdu Articles Archive

پاکستان کے لبرل انگریزی پریس میں کمرشل ازم کا بڑھتا رجحان – عامر حسینی: پاکستان میں لبرل پریس سیکشن پہ کمرشل ازم کا غلبہ اس قدر زیادہ ہوگیا ہے کہ اب یہ اپنی لبرل اقدار کو بری طرح سے پامال کرتا ہے۔ جنگ-نیوز میڈیا گروپ سے وابستہ اور ایسے ہی فرائیڈے ٹائمز کی
بلوچ ـ مذہبی شدت پسندی – ذوالفقار علی ذوالفی: بلوچستان میں ہزارہ برادری کی نسل کشی میں ملوث افراد کی اکثریت ، جامعہ حفصہ اسلام آباد کے سربراہان غازی عبدالرشید و مولانا عبدالعزیز اور سیہون دھماکے کے ماسٹر مائنڈز ڈاکٹر غلام مصطفی مزاری، صفی اللہ مزاری اور نادر
لعل شہباز قلندر کے مزار پہ بم دھماکے میں تکفیری دیوبندی خطیب لال مسجد کے رشتے دار ملوث ہیں – سندھ پولیس/ رپورٹ بی بی سی اردو: قلندر کے لعل شہباز کے مزار پر خودکش بم حملے میں 87 افراد ہلاک جبکہ 329 زخمی ہوئے تھے سندھ کے صوفی بزرگ لعل شہباز قلندر کے مزار پر خودکش حملے میں لال مسجد اسلام آباد کے خطیب مولانا
پاکستانی بورس اور روستوف : ٹالسٹائی کے ناول “وار اینڈ پیس ” پہ ایک استاد کا نوٹ – تحریر : پروفیسر گولسٹین: “وار اینڈ پیس” ناول میں، ٹالسٹائی کسی بھی ادارے میں دو قسم کی درجہ بندیوں کا ذکر کرتا ہے۔خاص طور پہ آرمی میں۔ بیرونی درجہ بندی: کرنل، جنرل وغیرہ،اور ایک خفیہ درجہ بندی: کمانڈر کے قریب لوگ، سٹاف،سیکرٹری وغیرہ۔
بین المذاہب پسند کی شادی اور مسلم مخالف جذبات – رافعہ زکریا: “ہاں،جنھوں نے میرے بیٹے کو مارا مسلمان تھے لیکن ہر مسلمان کو اس میں لپیٹا نہیں جاسکتا۔فرقہ وارانہ کشیدگی پھیلانے کے لئے مجھے استعمال مت کریں،مجھے اس میں مت گھسیٹیں۔میں ہر ایک سے درخواست کرتا ہوں کہ اس کو
پشتون لانگ مارچ کو ہائی جیک مت ہونے دیں تحریر – محمد عثمان عبداللہ فاروقی: آپ جب یہ کہتے ہیں کہ پشتون لانگ مارچ میں کسی کو آنے سے روکا نہیں گیا۔اور نہ ہم روک سکتے ہیں۔تو اس کے ساتھ ذہن میں یہ بات آتی ہے کہ جب پاکستان پیپلزپارٹی کے نمائندے اس لانگ
پشتون قوم کے حقوق کی بازیابی کے لئے دھرنا: کالعدم تنظیم کی لاٹری کیسے نکلی ؟: پشتون قبائل کی جانب سے اسلام آباد میں نقیب اللہ محسود کا جعلی پولیس مقابلے میں مارا جانا ثابت ہونے کے بعد بھی ایس ایس پی راؤ انوار کے پکڑے نہ جاںے پہ دھرنا ابتک جاری ہے۔اور یہ دھرنا
پشتون و بلوچ قوم پرستی سے سپاہ صحابہ کو نتھی کرنے والے کون ہیں؟ – ریاض ملک: نقیب اللہ محسود کے ماورائے قتل کا ایشو اور پشتون قوم پرستوں کو اسٹبلشمنٹ نے تکفیری دیوبندی دہشت گرد تنظیموں کو مین سٹریم کرنے کے لیے استعمال کیا۔ اس کا ثبوت پشاور اور کراچی میں کالعدم اہلسنت والجماعت/سپاہ صحابہ
شیعہ نسل کشی کی نفی کرنے والا ادب ،ادب نہیں پروپیگنڈا ہے – محمد عامر حسینی: ظالم اور مظلوم میں برابری کی تلاش شیعہ نسل کشی پہ ابہام کا پردہ ڈالتی ہے ۔چاہے یہ فکشن کے راستے سے ہو یا تاریخ کے راستے سے یا پھر جعلی خبریں بناکر کی جائے۔جنگ اخبار میں ‘سو لفظوں
کیا عدلیہ نواز شریف سے ہار جائے گی؟ – عامر حسینی: پاکستان کی سب سے بڑی عدالت سپریم کورٹ نے سابق سینٹر اور مسلم لیگ نواز کے رہنماء نہال ہاشمی ایڈوکیٹ کو توہین عدالت کا جرم ثابت ہونے پہ ایک ماہ قید سنادی ہے۔جبکہ اسلام آباد ہائی کورٹ میں ایک
صحافت کے راجا گدھ – پیجا مستری: گدھ جاتی کی ایک عادت یہ بھی ھے کہ جب ان کے خاندان کا کوئ رکن بیمار ھو جاتا ھے تو وہ اسکے مرنے سے پہلے ھی اس پر ٹوٹ پڑتے ھیں۔ ایک اور عادت یہ بھی ھے کہ
جنسی ہراسانی اور روشن خیال مرد – حسنہ علی: جنسی ہراسانی کا کیس جو پچلے دو سالوں سے خبروں میں تھا. بلاخر اپنے انجام کو پہنچا – نامور ادیب پروفیسر سحر انصاری پر ساتھی ٹیچر ڈاکٹر نویں حیدر کو جنسی طور پر حراساں کرنے کا الزام ثابت ہوا
شیخ احمد سرہندی بھی بلاسفیمی کے الزام سے محفوظ نہیں رہے تھے – عامر حسینی: پاکستان میں کیوں کے تاریخ کا قتل بار بار ہوتا ہے۔اور ہمارے ہاں شحضیات اور ان کے افکار کو بھی اپنے مطابق ڈھال لینے کی روایت بہت پختہ ہے تو کسی شحضیت کو اس کی تاریخ میں موجود شخصیت
کابل بم دھماکہ: تکفیری دیوبندی دہشت گردی پہ کمرشل لبرل کے ہاں سناٹا کیوں ہے؟ – گل زہرا رضوی: کابل بم دھماکہ تکفیری دیوبندی دہشت گردی بارے ایک اور المناک یاد دہانی ہے۔ تکفیری دیوبندیت کا پاکستان اور افغانستان کے اندر شیعہ کا قتل عام بہت چالاکی اور آسانی سے کمرشل لبرل مافیا کی کوششوں سے چھپادیا جاتا
لہو میں ڈوبا دیرہ پھُلاں دا سہرا ( تیسرا حصّہ) – حیدر جاوید سید: پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کی ترجیحات کیا ہیں اس کا اندازہ اس بات سے لگا لیجئے کہ ہفتہ 20جنوری کی شام ڈیرہ اسماعیل خان میں ’’ نامعلوم ‘‘ موٹر سائیکل سواروں کی اندھا دھند فائرنگ سے 18سالہ نوجوان حسن
لہو میں ڈوبا دیرہ پھُلاں دا سہرا ( دوسرا حصّہ) – حیدر جاوید سید: اپنی تاریخی تہذیبی ثقافتی اور جدا لسانی شناخت کے حامل ڈیرہ اسماعیل خان کے مسائل انگنت ہیں۔ اہم ترین مسئلہ تو یہی ہے کہ سرائیکی بولنے والی شیعہ اور صوفی سُنی آبادی کی ٹارگٹ کلنگ کا سلسلہ رکنے کا
معذور بیٹی کی جان بچانے کے لئے ملک سے جارہا ہوں- ڈاکٹر محمد اعظم وائس چانسلر بارانی یونیورسٹی کا خط: پاکستان کی ایک یونیورسٹی کا وائس چانسلر اور میسا چیوسسٹ امریکن یونیورسٹی سے پی ایچ ڈی کئے ہوئے اپنی جان کے خوف سے نہیں بلکہ معذور بیٹی جس کا نام زینب ہے کی زندگی کی خاطر ملک بدر ہونے
شیعہ نسل کشی کی مہم پہ کمرشل لبرل مافیا کی خاموشی کا مطلب؟ – نور درویش: نفرتوں کی سوداگر تکفیری دیوبندی انتہا پسند تنظیم سپاہ صحابہ پاکستان شیعہ کمیونٹی کے خلاف نفرت کی آگ بھڑکانے کا نیا سامان لیکر پنجاب کے علاقے شکردرہ اٹک میں ایک پمفلٹ کے ساتھ نمودار ہوئی۔یہ پمفلٹ تقسیم ہوئے کئی
منّو بھائی کی یادیں: اپنے آپ سے زیادہ مایوسی نہیں:   نوٹ : بائیں بازو کے معرو صحافی،ادیب،ڈرامہ نگار اور شاعر منّو بھائی کا 19 جنوری،2018 بروز جمعہ لاہور میں انتقال ہوگیا۔وہ 1933ء کو وزیرآباد میں پیدا ہوئے تھے اور ان کا اصل نام منیر احمد قریشی تھا لیکن
کہنے کے قابل کوئی بھی بات اشتعال انگیز قرار پاجاتی ہے ۔ نندتا داس: انٹرویو: مناتی سنگھا Minati Singha مترجم: عامر حسینی اداکارہ-ہدائت کار نندتا داس کی اپنی فلم ‘منٹو’،سنسر شپ اور آزادی تقریر بارے بات چیت ‘منٹو’ بنانے کا خیال کیوں آیا آپ کو؟ میری زندگی میں کوئی بھی چیز بائی ڈیفالٹ
دودھ پینے والے مجنوں ۔ اینٹی ایسٹبلشمنت کمرشل لبرل مافیا – پیجا مستری: حکایت ھے کہ جب مجنوں کو صحرا بدر کردیا گیا تو لیلیٰ نے مجنوں کی مدد کی ٹھانی اور اپنے ایک معتمد کو دودھ سے بھرا ایک کٹورا دیا اور کہا کہ صحرا میں میرا مجنوں بھوکا پیاسا ھے
مال روڈ دھرنا ۔ چند باتیں کچھ سوال – حیدر جاوید سید: آگے بڑھنے سے قبل ایک سوال ہے۔ کیا شریف خاندان کو سانحہ ماڈل ٹاؤن کے 14مقتولین کا خون اس لئے معاف کردیا جائے کہ وہ پنجابی اشرافیہ کا سیاسی چہرہ ہیں؟۔ عجیب بات یہ ہے کہ طاہر القادری کی
پھر ہمیں قتل ہوئیں یارو چلو – پیجا مستری: شہر جاناں میں اب باصفا کون ھے دست قاتل کے شایان رھا کون ھے غصہ اور شرم اس بات پر آتی ھے کہ شہر جاناں میں دست قاتل کے شایان اب صرف ستر سال کے وہ جوان بچے ھیں
شبِ ہجراں کو آنسوؤں کی زکوٰۃ دینے والا شاعر – حیدر جاوید سید:   بیس سال پہلے جاڑے سے سرد جنوری کی ایک شام کی طرف بڑھتی ہوئی سپہر کے وقت اردو اور سرائیکی کے بلند پایہ شاعر اور ترقی پسند سیاستدان سید محسن نقوی مون مارکیٹ اقبال ٹاؤن میں دہشت گردی
کیا تم جانتے ہو کون تھا یہ مرد جری؟ – تنویر عارف: نوٹ: ڈاکٹر حسن ظفر عارف جن کی لاش پراسرار حالت میں ان کی گاڑی میں الیاس گوٹھ کراچی میں پچھلی نشست پہ ملی۔ان کی موت کیسے ہوئی؟گاڑی وہ خود چلارہے تھے جبکہ وہ ڈی ایچ اے میں ایم کیو
ستر سال کا بوڑھا پروفیسر قومی سلامتی کے لئے خطرہ تھا؟ عامر حسینی: ڈاکٹر حسن ظفر عارف کی عمر ستر سال تھی۔69 سال کی عمر میں ان کو اکتوبر کے میہنے میں سندھ رینجرز نے کراچی پریس کلب سے اس وقت گرفتار کیا تھا جب وہ پریس کلب میں اردو بولنے والی
زینب کا خط اپنے باپ امین کے نام – عامر حسینی: پیارے بابا! میں نے اپنے خدا سے کچھ لمحات مستعار لیکر آپ کو یہ خط لکھ رہی ہوں۔آپ سے مخاطب ہونے کا خود مجھ میں حوصلہ نہیں ہے۔مگر کیا کروں آپ اور امی کی تکلیف دیکھی نہیں جاتی تو
اصل ایشو تو زینب کو انصاف دلانا ہے – ریاض ملک: ظالموں کو چھوڑ کر مظلوموں مجرم ٹھہرانے والے قافلہ یزیدیت کے سالار ہیں رانا ثناء اللہ ! شرم تم کو مگر نہیں آتی وہ لوگ جو معصوم پامالی ہوگئی مقتول بچی کے والدین کو اس قتل و ریپ کا
شہباز شریف: شرم تم کو مگر نہیں آتی: الیکشن کمیشن کالعدم تنظیموں کے نام بدل کر انتخابی سرگرمیوں میں حصہ لینے کا نوٹس لے پنجاب کے چیف منسٹر میاں محمد شہباز شریف نے اتوار کے روز لاہور میں’سرکاری’ علماء و مشائخ کونسل کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے
عالم ارواح سے شہید باقر النمر کا پہلا خط: السلام علیکم میں باقر نمر عالم ارواح سے آپ کو یہ خط لکھ رہا ہوں اور آپ سب کو بتانا چاہتا ہوں کہ مرا سر قلم کیوں کیا گیا میری پہلی غلطی یہ ہے کہ میں نے شیعہ اور
لبرل اشراف مقدس گائے نہيں ہیں – عامر حسینی: زھرا صابری نے پاکستان کے (نیو) لبرل (پوسٹ مادرنسٹ) اشرافیہ کی طاقت اور اثر بارے اپنے بلاگ میں جن حقائق کی جانب اشارہ کیا تھا،اس بارے میں لبرل سیکشن کی جانب سے ردعمل آنا شروع ہوگیا ہے۔یہ ردعمل زیادہ
پاکستانی میڈیا اعلانیہ بے نظیر کے قاتل طالبان کو چھپارہا ہے۔ ملک ریاض: ایسے طرز سے بات کرنا جس سے توجہ طالبان سے ہٹے اور کنفیوژن پیدا ہو اور پھر اسٹبلشمنٹ بارے بات کرنا ایسے جس سے طالبان اور اسٹبلشمنٹ کے درمیان رشتوں کی نفی ہو اس کنفیوژن کو اور بڑھانے کی
کرسمس مبارک مائیکل مندر – عامر حسینی: خانیوال شہر میں مسیحی برادری کی ایک بڑی تعداد آباد ہے۔یہ آبادی تین بڑے علاقوں میں آباد ہے۔ایک کرسچن کالونی ہے جو سول لائن سے ملحق ہے۔دوسری بڑی آبادی خرم پورہ کالونی کہلاتی ہے اور یہ پیپلزکالونی سے ملحق
A curious Muslim boy’s love for Christmas in Karachi:   As a first grader, there are a few things that cause wonderment and excitement, and for me, the sight of a huge green decorated tree was right up there. It was just before the winter break and as
اداریہ : کرسمس تکفیری فاشزم کے خلاف جدوجہد کے عہد کی تجدید کا دن ہے: پاکستان سمیت دنیا بھر میں حضرت مسیح علیہ السلام کے یوم پیدائش کی مناسبت سے کرسمس /عید میلاد المسیح علیہ السلام منایا جارہا ہے۔ہم اس موقعہ پہ نہ صرف دنیا بھر کی مسیحی برادری کو مبارکباد پیش کرتے ہیں
APS incident – Molvi Tariq Jameel’s message – by Peja Mistry: Note of the author: Please note I wanted to title this article as “APS – 144 suicide bombers” but it appears to be provocative although ironically the readers of this article will not consider molvi Tariq Jameel’s message as
Why is there no mention of the Deobandi identity of the ISIS terrorists who perpetrated yesterday’s church massacre in Quetta:   Last month as the spineless and complicit PML N government fomented the thug and abuse rally of Khadim Rizvi, PML N’s blind supporters all remembered the Barelvi identity of Khadim. Pakistan’s civil society is quick to call out
تاریخ کی خالی جگہیں فکشن سے بھری جاتی ہیں – عامر حسینی: صفدر نوید زیدی ہالینڈ کے شہر ہیگ میں رہتے ہیں۔میری ان سے فیس بک دوستی کو کئی سال ہوگئے تھے اور اس مرتبہ وہ ہیگ سے پاکستان آنے کا جب سے منصوبہ بنائے بیٹھے تھے تب سے مجھے کہہ
پاکستان بارے آئی ایم ٹی کا مارکسی نکتہ نظر ۔ پہلا حصّہ – محمد عامر حسینی: سی پیک پاکستان کے لئے معاشی قیامت ہے پاکستان کی فوج میں جہادی اثاثوں اور کاروباری ایمپائر نے تقسیم پیدا کررکھی ہے حکمران طبقات امریکی ، چینی اور سعودی سامراجوں کی گماشتگی کا کردار ادا کرنے کے ساتھ خود
سانحہ پشاور کے تین سال، تکفیریت کا دیو آج بھی بے قابو: پاکستان میں تکفیری دہشتگردی کی تاریخ بہت تلخ ہے لیکن اس تاریخ میں سانحہ اے پی ایس پشاور جیسا المناک سانحہ کوئی دوسرا رونما نہ ہوا، جس میں معصوم بچوں کو بیدردی سے قتل کیا گیا۔ ایسا سانحہ جس