طاہر اشرفی اورلدھیانوی کی نفرت کا نشانہ فقط ایل یو بی پی کیوں – علی عباس تاج

Snip20150731_4

دیوبندی علما کونسل کے صدر، دہشت گرد ملک اسحاق کے قریبی دوست اور کالعدم سپاہ صحابہ پاکستان کے سابق رہنما طاہر اشرفی نے تعمیر پاکستان بلاگ کے مدیر علی عباس تاج اور تعمیر پاکستان بلاگ کو ایک مرتبہ پھر اپنے بے بنیاد الزامات کا نشانہ بنایا ہے – سوشل میڈیا پر ان کے اس الزامات کو کالعدم تکفیری دیوبندی دہشت گرد تنظیم سپاہ صحابہ نام نہاد اہلسنت والجماعت کے سربراہ احمد لدھیانوی نے بھی ری ٹویٹ کیا

اپنے ایک ٹوئٹ میں طاہر اشرفی نے بلاگ پر یہ الزام عائد کیا کہ تعمیر پاکستان کے مدیر اور انسانی حقوق کے کارکن علی عباس تاج عالمی دہشت گرد ہیں اور پاکستان کے اندر فرقہ وارانہ عصبیت پھیلاتے ہیں

ان کا یہ الزام بھی ہے کہ علی عباس تاج پاکستان سے دہشت گردوں کو بھرتی کر کے عراق و شام بھجواتے ہیں جو وہاں سے تربیت لیکر پاکستان آکر دہشت گردی کرتے ہیں

طاہر اشرفی نے یہ بھی دعوی کیا کہ پاکستان کی وزرات خارجہ اور حساس ادارے پہلے ہی اس دہشت گرد کے خلاف تحقیقات کررہے ہیں ، اس دہشت گرد کی معلومات ایف آئی اے کو ارسال کی گئی ہیں

اپنے ایک اور ٹوئٹ میں طاہر اشرفی نے تعمیر پاکستان بلاگ کو قادیانی بلاگ قرار دیا اور شیعہ حضرات سے اپیل کی ہے کہ وہ اس بلاگ سے ہوشیار رہیں

اسی طرح کے بے بنیاد اور گھٹیا الزامات کالعدم سپاہ صحابہ اور اس کے کمرشل لبرل حواریوں کی جانب سے تعمیر پاکستان کے ایک اور ایڈیٹر خرم زکی پر بھی لگائے جا رہے ہیں، مقصد ان تکفیری خوارج اور ان کے ہمدردوں کا فقط یہ ہے کہ ان کی منافقت اور دہشت گردی کی نقاب کشائی کا سلسلہ بند ہو جائے

طاہر اشرفی کی جانب سے تعمیر پاکستان بلاگ پر کسی ثبوت اور شواہد کے بغیر الزامات کی بوچھاڑ کا یہ سلسلہ کسی وقفے کے بغیر اس لئے جاری ہے کہ اس بلاگ نے گزشتہ چند سالوں میں پاکستان کے اندر جعلی امن پسندوں اور تکفیری فاشزم کے ہمدردوں اور پاکستان کے اندر شیعہ ، صوفی سنی ، مسیحی ، احمدی ، ہندووں پر دہشت گردانہ حملے کرنے والوں کے پشتیبانوں کو شواہد اور ثبوت کے ساتھ بے نقاب کیا ہے اور ان بے نقاب ہونے والوں میں طاہر اشرفی بہت نمایاں ہے

طاہر اشرفی کالعدم سپاہ صحابہ پاکستان / اہلسنت والجماعت کے ان بنیادی اراکین میں سے ایک ہے جنھوں نے سپاہ صحابہ پاکستان کے کالعدم قرار دئیے جامے کے بعد اور سپاہ صحابہ پاکستان کے بدنام ہوجانے کے بعد دیوبندی تکفیری فاشزم کا کاروبار پاکستان علماء کونسل کے نام سے سجایا اور اس میں ان کا پورا ھاتھ سپاہ صحابہ پاکستان کی سپریم کونسل کے چئیرمین مرحوم ضیاء القاسمی کے بیٹے زاہد القاسمی سمیت سپاہ صحابہ پاکستان کے کئی ایک کیڈرز نے بٹایا ، پاکستان علماء کونسل دیوبندی تکفیریوں کا ایک سافٹ پلیٹ فارم اور سعودی عرب کی پراکسی ہے اور اسی پلیٹ فارم سے طاہر اشرفی طالبان سمیت دیگر دیوبندی تکفیری دہشت گردوں کا دفاع اور ان کی دہشت گردی کے لئے اپالوجسٹک موقف اور بیانیہ تیار کرنے کا کام کرتے آرہے ہیں

طاہر اشرفی تعمیر پاکستان بلاگ پر اس لئے بھی سیخ پا ہیں کہ اس بلاگ نے کارلوٹا گیل کی کتاب رانگ اینیمی میں طاہر اشرفی کے دہشت گردوں کی حمائت اور دیوبندی تکفیری دہشت گردوں سے اس کے روابط ، ان سے ہمدردی ، تکفیری سلفی دیوبندی نام نہاف جہاد ازم سے اس کی وابستگی کی قلعی جو کھلی اس کا اردو ترجمہ و تلخیص بھی لوگوں کے سامنے پیش کی اور اس کے دیوبندی تکفیری فاشزم کے نظریہ ساز ہونے کی پول بھی کھولی

تعمیر پاکستان بلاگ نے طاہر اشرفی کے پاکستان سے محبت اور وابستگی کے دعوے کا پول بھی کھولا اور اس حوالے سے اس کی جو آل سعود اور عرب کے حکمرانوں سے وفاداریاں ہیں ، اس کو بھی سامنے لاکر رکھا اور یہ پورے دلائل کے ساتھ واضح کیا کہ کیسے یہ شخص اور اس کے رفقاء اور اس کی تنظیم پاکستان کے اندر سعودی عرب اور آل سعود کی ایجنٹی کا کردار ادا کررہی ہے اور یہ شخص پاکستان کے اندر دیوبندی تکفیری فاشسٹ لابی کا اہم رکن ہے جس لابی کو سعودی عرب پاکستان کے اندر اپنی پراکسی کے طور پر استعمال کررہا ہے

تعمیر پاکستان بلاگ نے پاکستان کے اندر ریال خوری ، تومان خوری ، ڈالر خوری سمیت ہر اس کلچر کو بے نقاب کیا جو پاکستان کی بجائے اپنی وفاداری پہلے کسی اور ملک کی حکومت کے مفادات سے استوار کرتا ہے یا پاکستان کے خلاف جنگ کرنے والی تکفیریت کے علمبرداروں کی دہشت گردی ، بربریت اور نسل کش پالیسیوں اور ان کے افعال کا جواز تلاش کرتا ہے

طاہر اشرفی اور اس کی قبیل کے دیگر کئی ایک دیوبندی مولوی ریال خور غلامان آل سعود کے قبیلے کے اہم ترین افراد ہیں اور ان کا کام پاکستان کے اندر ہر حال میں سعودی مفادات کا تحفظ کرنا ہے اور یہ پاکستان کے تکثیریت پسند ، روادار اور شناختوں کے تنوع کے حامل کلچر کے خلاف یک نوعی ، یک خطی وھابیت زدہ ، ریڈیکل دیوبندیت پر مبنی فرقہ پرست ثقافت کا تسلط چاہتے ہیں

تعمیر پاکستان پر طاہر اشرفی اور احمد لدھیانوی جیسے سعودی نواز ، طالبان نواز ، لشکر جھنگوی نواز دیوبندی تکفیری مولویوں کی تنقید یہ ثابت کرتی ہے کہ بلاگ واقعی ایک لبرل ، سیکولر انسانی حقوق کا علمبردار بلاگ ہے، آخر کچھ وجہ تو ہے کہ اشرفی اور لدھیانوی بعض نام نہاد لبرلز کی تو تعریف کرتے ہیں، بعض کے لئے خاموش رہتے ہیں لیکن علی عباس تاج، خرم زکی اور تعمیر پاکستان کے دیگر متعلقین پر ان کا سارا غضب اور کینہ کھل کر سامنے آ جاتا ہے

Snip20150805_164

Comments

comments

Latest Comments
  1. Gullu
    Reply -

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


*