A Pakistani schoolgirl’s resistance to Taliban terrorists: LUBP’s compilation of Malala Yousafzai’s diary

With effect from 15 January 2009, Taliban impose ban female education in Swat.

Not 14 October 2012: Back in January 2009, when Deobandi right0wing Islamo-fascists and commercial or fake liberals were unanimous in abusing or/and ignoring Malala Yousafzai, LUBP published this post to give wider publicity to a Pashtun Sunni Sufi schoolgril’s resistance to takfiri khariji Deobandi cult known as Taliban (TTP) and Sipah-e-Sahaba (ASWJ). We condemn Taliban’s attack on Malala Yousafzai but also condemn those who continue to hide or obfuscate the common Deobandi identity of TTP, LeJ, ASWJ etc terrorists who continue to target kill Sunni Sufis, Shias, Ahmadis, Christians, Hindus etc in Pakistan.

Note 19 January 2009: Private schools in Pakistan’s Swat district have been ordered to close in a Taliban edict banning girls’ education. Deobandi takfiri Taliban seeking to impose their austere interpretation of Deobandi Salafi Sharia law have destroyed about 150 schools in the past year. Many more are being blown up despite a government pledge to safeguard education. Here a seventh grade schoolgirl from Swat chronicles how the ban has affected her and her classmates. This girl’s struggle against Deobandi, Salafi and takfiri forces of darkness needs wider global recognition. In particualr her struggle for peace and education deserves highest global awards such as Nobel Prize or the Lenin Peace Prize. While Deobandi right-wing bigots and pseudo-liberal elites of Lahore, Karachi and Islamabad remain indifferent to the sufferings of innocent Pashtuns and other innocent Pakistani citizens at the hands of Deobandi militants, LUBP considers it important to highlight voices such as that of Gul Makai, voices that represent feeble ray of hope in a country characterized by apathy, hypocrisy and selective morality. Her diary first appeared on BBC Urdu online. 

Diary of a Pakistani schoolgirl (vi)

A seventh grade schoolgirl in the north-western Pakistani district of Swat has been writing a diary after Taleban militants there ordered schools to close as part of an edict banning girls’ education. The ban was lifted in February, but before it was revoked militants seeking to impose their austere interpretation of Sharia law destroyed about 150 schools within a year. This extract of her diary covers the days after the Sharia law deal between the government and the militants. The diary first appeared on BBC Urdu online.

WEDNESDAY 4 MARCH

Today our teacher asked us how many girls listen to FM radio and most of the girls said that they used to but not anymore. But few girls said that they still listen to it. Girls were of the view that once FM radio transmission is stopped only then peace can return to Swat.

The Taleban say that they use FM radio to propagate teachings of the Koran but commander Khalil after a brief teaching of the Koran subtly switches over to threaten opponents. Announcements regarding fighting, activities and murders are made on FM radio.

During our recess today we saw helicopters flying. The helicopters fly very low over our school. Girls called out to the soldiers and they waved back. Soldiers seem to be tired of waving now.

TUESDAY 3 MARCH

My younger brother does not like going to school. He cries while going to school and is jubilant coming back home. But today he came back home crying and he said that he was scared. He said that whenever he saw someone he got scared that he might be kidnapped.

My brother often prays “O God bring peace to Swat and if not then bring either the US or China here”.

There was another skirmish between the army and the Taleban and such incidents have taken place in the past few days. Today I heard the sound of mortar shells. People are again scared that the peace may not last for long. Some people are saying that the peace agreement is not permanent it is just a break in fighting.

MONDAY 1 MARCH

Attendance is getting better day by day and today 19 students were present out of 27. Exams are scheduled for 9 March and we try to spend more time studying.

Today I went to Cheena Market with others and shopped a lot because one of the shopkeepers was shutting down and had a clearance sale. Most of the shops in Cheena Market have been closed down.

Teachers in Swat

Teachers greet each other in Mingora as a school reopens

We sleep well because there is no shelling these days. It is said that the Taleban are still carrying out their activities in their areas. They also loot the relief goods meant for the displaced persons.

My friend told me that her brother was quite amazed to see his acquaintance searching vehicles at night along with the Taleban. Her brother said that his acquaintance works as a labourer in the morning and along with the Taleban at night. Her brother asked him why he was with them if he was not a Talib. He replied that he earns in the morning and then at night while working with the Taleban.

FRIDAY 27 FEBRUARY

I was so glad to see my two friends in school today. During the operation they had gone to Rawalpindi. They said that there was peace in Rawalpindi and the standard of life was also good but they both were anxiously waiting for peace to return in Swat so that they could come back.

WEDNESDAY 25 FEBRUARY

My mother is not feeling well and father is out of town for a meeting so I prepared the breakfast and then went to school.

Today we played a lot in class and enjoyed ourselves like we used to before.

Nowadays helicopters don’t appear frequently nor do we discuss much about the army and Taleban. In the afternoon my mother, cousin and I and went to the market. There was a time when I used to like wearing the burqa but not any more. I am fed up with this because it is a hindrance in walking.

There is gossip in Swat that one day a woman was wearing a traditional burqa. She fell and when a man tried to help her she refused and said “Don’t help me brother, as this will bring immense pleasure to [Taleban leader] Maulana Fazlullah”.

When we entered the shop in the market where we used to shop the shopkeeper laughed and told us he got scared thinking that we might be suicide bombers.

MONDAY 23 FEBRUARY

When I got up I was very happy knowing that I will go to school today. At school some girls were wearing uniform whereas others were in casual clothes. During assembly girls looked extremely happy and were hugging each other.

After assembly the headmistress advised us to cover ourselves properly and wear the burqa because it is a condition put by the Taleban.

There were only 12 girls present in my class because some have migrated from Swat and some were not sent to school by their parents because of fear.

Four of my friends have already left Swat and another told me today that they are also moving to Rawalpindi. I was upset with her and asked her not to go as there is a peace accord and that situation is getting better gradually. But she said that conditions were very uncertain.

I am very sad. Four of my friends have already left and the last one is also leaving.

SUNDAY 22 FEBRUARY

Today we went to Mingora’s “cheena” market where one can only find things for women. We were very scared on our way to the market as the Taleban have imposed a ban on women going out for shopping.

On entering the market we were shocked to see that there were only a few women there, where as earlier it used to be a very crowded place and women used to push each other.

SATURDAY 21 FEBRUARY

The situation in Swat is calming down gradually. Firing and artillery fire has also reduced. But people are still scared and they are afraid that the peace deal might be broken.

There are rumours that some Taleban commanders don’t agree with this deal and say that they will keep fighting till their last breath. My heart beat rises when I hear such rumours. Why are they doing this? They say that they want to take revenge for Jamia Hafsa and the Red Mosque, but we are not the ones responsible for what happened there so why don’t they take revenge on people who are responsible?

Moments ago Maulana Fazlullah (a pro-Taleban cleric) announced on his FM radio that he is lifting the ban from female education. He announced that girls can go to school till exams which are to be held on 17 March but they have to cover themselves.

I am very happy to hear this as I never thought this would ever happen.

Diary of a Pakistani schoolgirl (v)

A seventh grade schoolgirl in the north-western Pakistani district of Swat has been writing a diary after Taleban militants there ordered schools to close as part of an edict banning girls’ education. Militants have been seeking to impose their austere interpretation of Sharia law and have destroyed about 150 schools in the past year. This extract of her diary takes in the latest Sharia law deal between the government and the militants. The diary first appeared on BBC Urdu online.

THURSDAY 19 FEBRUARY: PEACE NOT WAR

My father prepared breakfast today because my mum is not feeling well. She complained to my father, asking why did he tell her about the journalist’s death? I told my brothers that we will not talk of war but peace from now on. We received the information from our school headmistress that examinations will be held in the first week of March. I have stepped up my studies.

WEDNESDAY 18 FEBRUARY: HOPE SMASHED

I went to the market today. It was crowded. People are happy about the deal. I saw a traffic jam after a long time. In the evening my father broke the news of the death of a Swat journalist (Musa Khankhel). Mom’s is not feeling well. Our hopes of peace have been smashed.

TUESDAY 17 FEBRUARY: HUSTLE AND BUSTLE

Today I started preparing for the examinations because after the peace deal there is a hope that girls’ schools could reopen. My teacher did not turn up today because she went to attend an engagement.

Swat people escape a Taleban attack

The people of Swat have become tired of the violence

When I entered my room I saw my two brothers playing. One had a toy helicopter while the other had a pistol made of paper. One would yell “fire” and the other would say “take position”. One of my brothers told my father he wanted to make an atomic bomb.

Maulana Sufi Mohammad is in Swat today. The media are here too. The city is witnessing a lot of rush. The city’s hustle and bustle has returned. May God help make this agreement successful. I am optimistic.

MONDAY 16 FEBRUARY: REOPENING?

Today I was very happy because the government and the militants were to sign a peace deal. Today the helicopters were flying very low too. One of my cousins remarked that with the gradual return of peace the choppers were coming down too.

In the afternoon people started distributing sweets. One of my friends called me to greet me. She said she hopes she could go out of her home now because she was imprisoned in her room for the last several months. We were also happy hoping the girls’ schools might open now.

SUNDAY 15 FEBRUARY: DON’T BE SCARED

Some guests from our village and Peshawar came today. When we were having lunch, firing started outside. I had never heard such firing. We got scared, thought that the Taleban had arrived. I ran towards my father who consoled me by telling me ‘Don’t be scared – this is firing for peace’.

He told me that he read in the newspaper that the government and the militants are to sign a peace deal tomorrow and he firing is in jubilation. Later, during the night when the Taleban announced the peace deal on their FM station, another spell of more stronger firing started. People believe more in what the militants say rather then the government.

When we heard the announcement, first my mother and then father started crying. My two younger brothers had tears in their eyes too.

FRIDAY 13 FEBRUARY: FAZLULLAH CRYING

Today the weather is good. It rained a lot and when it rains my valley looks more beautiful. As I got up in the morning, my mother told me about the murder of a rickshaw driver and a night watchman. Life is getting worse with the passage of each day.

Hundreds of people are arriving daily in Mingora from surrounding areas while residents of this city are moving to other areas. The rich have moved out of Swat while the poor have no place but to stay here.

We asked our cousin on the telephone to take us around the city in this splendid weather. He picked us up but when he came to the bazaar we found out that the markets were closed and the road wore a deserted look. We wanted to head towards the Qambar area but somebody told us a big procession has been brought out there.

That night Maulana Fazlullah (a pro-Taleban cleric) came on his radio and kept crying for a long time. He was demanding an end to the military operation. He asked people not to migrate but instead return to their homes.

THURSDAY 12 FEBRUARY: HEAVY SHELLING

There was heavy shelling last night. Both my brothers were sleeping but I could not. I went to lie down with my father but then went to my mother, but could not sleep.

Pakistani women activists in Lahore protest over girls' school closures in Swat

The closure of girls’ schools in Swat have angered many Pakistanis

That was why I also woke up late in the morning. In the afternoon I had tuition, then my teacher for religious education came. In the evening I continued playing with my brothers amid fighting and arguments. Also played games on computer for a while.

Before the Taleban imposed restrictions on the cable network, I used to watch the Star Plus TV channel and my favourite drama was ‘Raja Kee Aye Gee Barat’ (My dream boy will come to marry me).

Today is Thursday and I am scared because people say that most suicide attacks take place either on Friday mornings or on Friday evenings. They also say that the reason behind this is is because the suicide attacker thinks that Friday has a special importance in Islam and carrying out such attacks on this day will please God more.

WEDNESDAY 11 FEBRUARY: EXPLOSION WARNINGS

I was scared the whole day and also bored. We do not have a TV set now. There was a burglary in our house while we were away in Mingora for 20 days.

Earlier such incidents did not happen, but they have become rampant since the security situation in Mingora deteriorated so rapidly. Thank God there was no cash or gold in the house. My bracelet and anklet were also missing but I later found them. Maybe the burglar thought of them as gold ornaments but later found out they were artificial.

Maulana Fazlullah in a speech last night on his FM channel said that a recent attack on a police station in Mingora (the largest town in the Swat valley) was akin to a pressure cooker blast. He said that the next attack would resemble a cauldron exploding and after that a blast the size of a tanker exploding would take place.

At night my father updated us on the situation of Swat. These days we frequently use words like ‘army’, ‘Taleban’, ‘rocket’, ‘artillery shelling’, ‘Maulana Fazlullah’, ‘Muslim Khan’ (a militant leader), ‘police’, ‘helicopter’, ‘dead’ and ‘injured’.

MONDAY 9 FEBRUARY: PRECARIOUS

Boys’ schools in Swat have reopened and the Taleban have lifted restrictions on girls’ primary education – therefore they are also attending schools. In our school there is co-education until primary level.

My younger brother told us that out of 49 students only six attended his school including a girl. In my school, only a total of 70 pupils attended out of 700 students who are enrolled.

Today the maid came. She normally comes once a week to wash our clothes.

She comes from Attock district but she has been living in this area for years now. She told us that the situation in Swat has become “very precarious” and that her husband has told her to go back to Attock.

People do not leave their homeland on their own free will – only poverty or a lover usually makes you leave so rapidly.

SUNDAY 8 FEBRUARY: SCHOOL MEMORIES

I am sad watching my uniform, school bag and geometry box.

Map showing Swat valley

I felt hurt on opening my wardrobe and seeing my uniform, school bag and geometry box. Boys’ schools are opening tomorrow. But the Taleban have banned girls’ education.

The memories of my school flashed before me, especially the arguments among the girls.

My brother’s school is also reopening and he has not done his homework. He is worried and does not want to go to school. My mother mentioned a curfew tomorrow and my brother asked her if it was really going to be imposed. When my mother replied in the affirmative he started dancing with joy.

SATURDAY 7 FEBRUARY: EERIE SILENCE

My brother and myself left for Mingora in the afternoon. My mother had already gone there. I was happy and scared at the same time at the thought of going back after 20 days. Before entering Mingora, there was an eerie silence in Qambar.

There was no one else besides people with long hair and beards. From their appearance they looked like Taleban. I saw some houses damaged due to shelling.

The streets of Mingora were thin. We went to supermarket to buy a gift for our mother but it was closed, whereas earlier it used to remain open till late. Many other shops were also closed. We had not informed our mother about our plans to go back to Mingora because we wanted to surprise her. As we entered the house she was quite surprised.

Diary of a Pakistani schoolgirl (iv)

A man carries his elderly mother on his back as they flee from Swat

Many are opting to flee from Swat on foot with no belongings

A seventh grade schoolgirl in the north-western Pakistani district of Swat is writing a diary after Taleban militants there ordered schools to close as part of an edict banning girls’ education. Militants there are seeking to impose their austere interpretation of Sharia law and have destroyed about 150 schools in the past year. The fourth extract of her diary is written during and after her return home from the relative safety of Islamabad. The diary first appeared on BBC Urdu online.

MONDAY 2 FEBRUARY: SCHOOL CLOSED ON TALEBAN ORDERS

I am upset because the schools are still closed here in Swat.

Our school was supposed to open today. On waking up I realised the school was still closed and that was very upsetting. In the past we used to enjoy ourselves on school closure. But this is not the case this time because I am afraid that the school may not reopen at all on the orders of the Taleban.

My father told me that following the closure of private girls’ schools, private schools for boys had decided not to open until 8 February. In this regard notices have appeared outside the schools saying that they will reopen on 9 February. My father said that because no such notices have been displayed outside girls’ schools, that meant they would not be re-opening.

SATURDAY 31 JANUARY: WHO WILL AVENGE THOSE KILLED?

On our way back to Peshawar from Bannu I received a call from my friend.

Site of a suicide attack in Swat Valley

Swat has been hard-hit by Islamic militancy

She was very scared and told me that the situation in Swat was getting worse and I should not come back. She told me that the military operation has intensified and 37 people have been killed only today in the shelling.

We arrived in Peshawar in the evening and were very tired. I switched on the TV and there was a report on Swat. The channel was showing empty-handed people migrating on foot from Swat.

I switched the channel and a woman was saying “we will avenge the murder of Benazir Bhutto”. I asked my father who would avenge the deaths of hundreds of people of Swat.

SATURDAY 24 JANUARY: ‘MAKING A GRAVE’

The only good thing that has come out of the war in Swat is that our father has taken us away from Mingora (the largest city in the Swat valley) to many other cities. We arrived in Peshawar from Islamabad yesterday. In Peshawar we had tea at one of our relative’s houses before travelling to Bannu.

My five-year-old brother was playing on the lawn. When my father asked him what he was playing, he replied ‘I am making a grave’.

Map showing Swat valley

Later we went to a bus stand to travel to Bannu. The wagon was old and the driver was using his horn excessively. On our way the vehicle hit a pot-hole – and at the same time the horn started blowing – waking up my 10-year-old brother.

He was very scared and asked our mother: ‘Was it a bomb blast?’

On arrival in Bannu, we found my father’s friend waiting for us. He is also a Pashtun but his family spoke a Bannu dialect so we could not understand him clearly.

We went to the bazaar and then to the park. Here women have to wear a veil – called a shuttle veil – whenever they leave their homes. My mother also wore one but I refused to wear one on the grounds that I found it difficult to walk with it on.

Compared with Swat, there is relative peace in Bannu. Our hosts told us that there was a Taleban presence was in the area but there was not as much unrest as in Swat. They said that the Taleban had threatened to close down the schools, but they were still open.

Diary of a Pakistani schoolgirl (iii)

A Pakistani seventh grade schoolgirl is writing a diary after Taleban militants in the troubled north-western Swat district ordered schools to close as part of an edict banning girls’ education. Militants seek to impose their austere interpretation of Sharia law and have destroyed about 150 schools in the past year. In the third extract of her diary written in part from the relative safety of Islamabad, she chronicles her first impressions of the city after arriving from Swat and events leading up to her family’s departure. The diary first appeared on BBC Urdu online.

WEDNESDAY 28 JANUARY: TEARS IN THE EYES OF MY PARENTS

My father fulfilled his promise and we reached Islamabad yesterday. On our way from Swat I was very scared because we had heard that the Taleban conduct searches. But nothing of the sort happened to us. It was instead the army who conducted the search. The moment we left Swat our fears also subsided.

Protesters hold placards condemning the attacks on girls' schools in Swat

Many are opposed to the militants’ policy of closing girls’ schools

We are staying with our father’s friend in Islamabad. It is my first visit to the city. It’s beautiful with nice bungalows and wide roads. But as compared to my Swat city it lacks natural beauty. Father took us to Lok Virsa museum and I learnt a lot. We also have such a museum in Swat but I don’t know if it will remain undamaged from the fighting.

My father bought popcorn from an old man outside Lok Virsa. When the vendor spoke to us in Pashtu my father asked him if he was from Islamabad. The old man replied: “Do you think Islamabad can ever belong to Pashtuns?”

He said that he hailed from Momand Agency, but because of an ongoing military operation was forced to leave his abode and head for the city. At that moment I saw tears in my parents’ eyes.

MONDAY 26 JANUARY: HELICOPTER TOFFEES

I woke to the roar of heavy artillery fire early in the morning. Earlier we were afraid of the noise of helicopters and now the artillery. I remember the first time when helicopters flew over our house on the start of an operation. We got so scared that we hid.

Pakistani army chief Gen Ashfaq Kayani (R) meets a soldier in Swat

The army is accused of not doing enough to protect schools

All the children in my neighbourhood were also very scared.

One day toffees were thrown from the helicopters and this continued for some time. Now whenever we hear the choppers flying we run out and wait for the toffees but it does not happen anymore. A while back my father gave us the good news that he was taking all of us to Islamabad tomorrow. We are very happy.

SATURDAY 24 JANUARY: NO NAMES ON THE HONOURS BOARD

Our annual exams are due after the vacations but this will only be possible if the Taleban allow girls to go to school. We were told to prepare certain chapters for the exam but I do not feel like studying.

Map showing Swat valley

As from yesterday the army has taken control of the educational institutions for protection. It seems that it is only when dozens of schools have been destroyed and hundreds others closed down that the army thinks about protecting them. Had they conducted their operations here properly, this situation would not have arisen.

Muslim Khan (a Swat Taleban spokesman) has said that those schools housing the army would be attacked. We will be more afraid of having the army in our schools than ever. There is a board in our school which is called the Honours Board. The name of the girl achieving the highest marks in annual exams is put on this board. It seems that no names will be put on it this year.

 

Diary of a Pakistani schoolgirl (ii)

A Pakistani seventh grade schoolgirl is writing a diary after Taleban militants in the troubled north-western Swat district ordered schools to close as part of an edict banning girls’ education. Militants seek to impose their austere interpretation of Sharia law and have destroyed about 150 schools in the last year. News of further attacks and a Taleban invitation to public floggings appears in the latest extracts of the diary, which first appeared on BBC Urdu online.

THURSDAY 22 JANUARY : VERY DANGEROUS SITUATION

I am quite bored sitting at home following the closures of schools.

Some of my friends have left Swat because the situation here is very dangerous. I do not leave home. At night Maulana Shah Dauran (the Taleban cleric who announced the ban on girls attending school) once again warned females not to leave home.

Taleban militants (centre)  publicly flog an alleged narcotic smuggler in Swat

The Taleban routinely carry out public floggings in Swat

He also warned that they would blow up those schools which are used by the security forces as security posts.

Father told us that security forces have arrived at the boys’ and girls’ school in Haji Baba area. May God keep them safe. Maulana Shah Dauran also said in his speech on FM radio that three ‘thieves’ will be lashed tomorrow and whoever wants to see can come and watch.

I am surprised that when we have suffered so much, why people still go and watch such things? Why also doesn’t the army stop them from carrying out such acts? I have seen wherever the army is there is usually a Taleban member nearby, but where there is a Taleban member the army will always not go.

MONDAY 19 JANUARY: ARMY IN THEIR BUNKERS

Five more schools have been destroyed, one of them was near my house. I am quite surprised, because these schools were closed so why did they also need to be destroyed? No one has gone to school following the deadline given by the Taleban.

School destroyed by suspected Taleban militants in Swat

The authorities are accused of doing little to protect schools

Today I went to my friend’s house and she told me that a few days back someone killed Maulana Shah Dauran’s uncle; she said that it may be that the Taleban destroyed the schools in anger at this.

She also said that no one has made the Taleban suffer but when they are hurt they take it out on our schools. But the army is not doing anything about it. They are sitting in their bunkers on top of the hills. They slaughter goats and eat with pleasure.

FRIDAY 18 JANUARY: NO POLICE IN SIGHT

My father told us that the government would protect our schools. The prime minister has also raised this issue. I was quite happy initially, but now I know but this will not solve our problem. Here in Swat we hear everyday that so many soldiers were killed and so many were kidnapped at such and such place. But the police are nowhere to be seen.

Our parents are also very scared. They told us they would not send us to school until or unless the Taleban themselves announce on the FM channel that girls can go to school. The army is also responsible for the disruption in our education.

Today a boy from our locality went to school and he was told by the principal to go back home because a curfew was to be imposed soon. But when he reached home he came to know that there was no curfew, instead his school was closed down because the army was to move through the road near his school.

Diary of a Pakistani schoolgirl (i)

Source: BBC News

Private schools in Pakistan’s troubled north-western Swat district have been ordered to close in a Taleban edict banning girls’ education. Militants seeking to impose their austere interpretation of Sharia law have destroyed about 150 schools in the past year. Five more were blown up despite a government pledge to safeguard education, it was reported on Monday. Here a seventh grade schoolgirl from Swat chronicles how the ban has affected her and her classmates. The diary first appeared on BBC Urdu online.

THURSDAY JANUARY 15: NIGHT FILLED WITH ARTILLERY FIRE

The night was filled with the noise of artillery fire and I woke up three times. But since there was no school I got up later at 10 am. Afterwards, my friend came over and we discussed our homework.

School in Swat allegedly destroyed by the Taleban

The Taleban have repeatedly targeted schools in Swat

Today is 15 January, the last day before the Taleban’s edict comes into effect, and my friend was discussing homework as if nothing out of the ordinary had happened.

Today, I also read the diary written for the BBC (in Urdu) and published in the newspaper. My mother liked my pen name ‘Gul Makai’ and said to my father ‘why not change her name to Gul Makai?’ I also like the name because my real name means ‘grief stricken’.

My father said that some days ago someone brought the printout of this diary saying how wonderful it was. My father said that he smiled but could not even say that it was written by his daughter.

WEDNESDAY 14 JANUARY: I MAY NOT GO TO SCHOOL AGAIN

I was in a bad mood while going to school because winter vacations are starting from tomorrow. The principal announced the vacations but did not mention the date the school was to reopen. This was the first time this has happened.

Map showing Swat valley

In the past the reopening date was always announced clearly. The principal did not inform us about the reason behind not announcing the school reopening, but my guess was that the Taleban had announced a ban on girls’ education from 15 January.

This time round, the girls were not too excited about vacations because they knew if the Taleban implemented their edict they would not be able to come to school again. Some girls were optimistic that the schools would reopen in February but others said that their parents had decided to shift from Swat and go to other cities for the sake of their education.

Since today was the last day of our school, we decided to play in the playground a bit longer. I am of the view that the school will one day reopen but while leaving I looked at the building as if I would not come here again.

FRIDAY 9 JANUARY: THE MAULANA GOES ON LEAVE?

Today at school I told my friends about my trip to Bunair. They said that they were sick and tired of hearing the Bunair story. We discussed the rumours about the death of Maulana Shah Dauran, who used to give speeches on FM radio. He was the one who announced the ban on girls attending school.

Some girls said that he was dead but others disagreed. The rumours of his death are circulating because he did not deliver a speech the night before on FM radio. One girl said that he had gone on leave.

Since there was no tuition on Friday, I played the whole afternoon. I switched on the TV in the evening and heard about the blasts in Lahore. I said to myself ‘why do these blasts keep happening in Pakistan?’

WEDNESDAY 7 JANUARY: NO FIRING OR FEAR

I have come to Bunair to spend Muharram (a Muslim holiday) on vacation. I adore Bunair because of its mountains and lush green fields. My Swat is also very beautiful but there is no peace. But in Bunair there is peace and tranquillity. Neither is there any firing nor any fear. We all are very happy.

Today we went to Pir Baba mausoleum and there were lots of people there. People are here to pray while we are here for an excursion. There are shops selling bangles, ear rings, lockets and other artificial jewellery. I thought of buying something but nothing impressed – my mother bought ear rings and bangles.

MONDAY 5 JANUARY: DO NOT WEAR COLOURFUL DRESSES

I was getting ready for school and about to wear my uniform when I remembered that our principal had told us not to wear uniforms – and come to school wearing normal clothes instead. So I decided to wear my favourite pink dress. Other girls in school were also wearing colourful dresses and the school presented a homely look.

Soldier with suspected militants in Swat

Swat has been a centre of militant activity

My friend came to me and said, ‘for God’s sake, answer me honestly, is our school going to be attacked by the Taleban?’ During the morning assembly we were told not to wear colourful clothes as the Taleban would object to it.

I came back from school and had tuition sessions after lunch. In the evening I switched on the TV and heard that curfew had been lifted from Shakardra after 15 days. I was happy to hear that because our English teacher lived in the area and she might be coming to school now.

SUNDAY 4 JANUARY: I HAVE TO GO TO SCHOOL

Today is a holiday and I woke up late, around 10 am. I heard my father talking about another three bodies lying at Green Chowk (crossing). I felt bad on hearing this news. Before the launch of the military operation we all used to go to Marghazar, Fiza Ghat and Kanju for picnics on Sundays. But now the situation is such that we have not been out on picnic for over a year and a half.

We also used to go for a walk after dinner but now we are back home before sunset. Today I did some household chores, my homework and played with my brother. But my heart was beating fast – as I have to go to school tomorrow.

SATURDAY 3 JANUARY: I AM AFRAID

I had a terrible dream yesterday with military helicopters and the Taleban. I have had such dreams since the launch of the military operation in Swat. My mother made me breakfast and I went off to school. I was afraid going to school because the Taleban had issued an edict banning all girls from attending schools.

Only 11 students attended the class out of 27. The number decreased because of Taleban’s edict. My three friends have shifted to Peshawar, Lahore and Rawalpindi with their families after this edict.

On my way from school to home I heard a man saying ‘I will kill you’. I hastened my pace and after a while I looked back if the man was still coming behind me. But to my utter relief he was talking on his mobile and must have been threatening someone else over the phone.

 

……

Urdu version:

Part 1

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2009/01/090109_diary_swatgirl_part1.shtml

Part 2

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2009/01/090116_diary_swatgirl_part2.shtml

Part 3

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/01/090123_diary_swatgirl_3_zs.shtml

Part 4

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/01/090130_swat_girldiary_si.shtml

Part 5

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/02/090206_swat_diary_5_zs.shtml

Part 6

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/02/090213_swatgirl_diary_6.shtml

Part 7
http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/02/090220_swat_girl_diary_7_zs.shtml

Part 8
http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/02/090227_swat_diary_girl_8_zs.shtml

Part 9

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/03/090306_swat_diary_9_rh.shtml

Part 10

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/2009/03/090313_swat_diary_part10_aw.shtml

طالبہ کی ڈائری: سکول جانا ہے

طالبان نے پندرہ جنوری سے سوات خواتین کی تعلیم پر مکمل پابندی عائد کی ہے

صوبہ سرحد کے شورش زدہ ضلع سوات میں گزشتہ برس اکتوبر میں شروع ہونے والی فوجی کاروائی جاری ہے۔ اگر ایک طرف سکیورٹی فورسز اور مسلح طالبان کی جھڑپوں میں درجنوں عام شہریوں کے ہلاکتوں کا سلسلہ جاری ہے تو دوسری طرف مسلح طالبان نے ایک سو تیس سے زائد سکولوں کو تباہ کرنے کی بھی ذمہ داری قبول کرلی ہے جن میں سے زیادہ تر لڑکیوں کے ہیں۔
اب طالبان نے پندرہ جنوری کے بعد لڑکیوں کے سکول جانے پر بھی پابندی لگانے کا اعلان کیا ہے۔ اس صورتحال میں طالبات پر کیا گزر رہی ہے، بی بی سی ارود ڈاٹ کام ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کرے گا۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھیں گی۔ اس سلسلے کی پہلی کڑی:

سنیچر، تین جنوری: میں ڈر گئی اور رفتار بڑھا دی
کل پوری رات میں نے ایسا ڈراؤنا خواب دیکھا جس میں فوجی، ہیلی کاپٹر اور طالبان دکھائی دیے۔ سوات میں فوجی آپریشن شروع ہونے کے بعد اس قسم کے خواب بار بار دیکھ رہی ہوں۔ ماں نے ناشتہ دیا اور پھر تیاری کرکے سکول کے لیے روانہ ہوگئی۔ مجھےسکول جاتے وقت بہت خوف محسوس ہو رہا تھا کیونکہ طالبان نے اعلان کیا ہے کہ لڑکیاں سکول نہ جائیں۔

آج ہمارے کلاس میں ستائیس میں سے صرف گیارہ لڑکیاں حاضر تھیں۔ یہ تعداد اس لیے گھٹ گئی ہے کہ لوگ طالبان کے اعلان کے بعد ڈرگئے ہیں۔ میری تین سہیلیاں سکول چھوڑ کر اپنے خاندان والوں کے ساتھ پشاور، لاہور اور راولپنڈی جاچکی ہیں۔

آج اسمبلی میں ہیڈ مسٹرس صاحبہ نے کہا کہ طالبان کے خوف سے کل سے سکول کا یونیفارم ختم کیا جا رہا ہے اور آئندہ سےگھرکے کپڑے پہن کر سکول آئیں۔ انہوں نے ہمیں یہ بھی سمجھایا کہ اگر راستے میں ہمارا سامنا طالبان سے ہو تو کیا کرنا چاہیئے۔
آج ہمارے کلاس میں ستائیس میں سے صرف گیارہ لڑکیاں حاضر تھیں۔ یہ تعداد اس لیے گھٹ گئی ہے کہ لوگ طالبان کے اعلان کے بعد ڈرگئے ہیں۔ میری تین سہیلیاں سکول چھوڑ کر اپنے خاندان والوں کے ساتھ پشاور، لاہور اور راولپنڈی جاچکی ہیں۔

ایک بجکر چالیس منٹ پر سکول کی چھٹی ہوئی۔گھر جاتے ہوئے راستے میں مجھے ایک شخص کی آواز سنائی دی جو کہہ رہا تھا: ’میں آپ کو نہیں چھوڑونگا۔‘ میں ڈرگئی اور اپنی رفتار بڑھادی۔جب تھوڑا آگے گئی تو پیچھے مڑ کر دیکھا تو وہ کسی اور کو فون پر دھمکیاں دے رہا تھا، میں یہ سمجھ بیھٹی کہ وہ شاید مجھے ہی کہہ رہا ہے۔

اتوار، چار جنوری: کل سکول جانا ہے، میرا دل دھڑک رہا ہے
آج چھٹی ہے، اس لیے میں نو بجکر چالیس منٹ پر جاگی لیکن اٹھتے ہی والد صاحب نے یہ بری خبر سنائی کہ آج پھر گرین چوک سے تین لاشیں ملی ہیں۔اس واقعہ کی وجہ سے دوپہر کو میرا دل خراب ہو رہا تھا۔ جب سوات میں فوجی کارروائی شروع نہیں ہوئی تھی اس وقت ہم تمام گھر والے اتوار کو پِکنک کے لیے مرغزار، فضاء گھٹ اور کانجو چلے جاتے تھے۔ اب حالات اتنے خراب ہوگئے ہیں کہ ہم ڈیڑھ سال سے پِکنک پر نہیں جاسکے ہیں۔

ہم رات کو کھانے کے بعد سیر کے لیے باہر بھی جایا کرتے تھے۔اب حالات کی وجہ سے لوگ شام کو ہی گھر لوٹ آتے ہیں۔ میں نے آج گھر کا کام کاج کیا، ہوم ورک کیا اور تھوڑی دیر کے لیے چھوٹے بھائی کے ساتھ کھیلی۔ کل صبح پھر سکول جانا ہے اور میرا دل ابھی سے دھڑک رہا ہے۔

پیر، پانچ جنوری: زرق برق لباس پہن کر نہ آئیں۔۔۔

سکول کی چھٹی کے بعد گھر آئی اور کھانا کھانے کے بعد ٹیوشن پڑھا۔ شام کو میں نے ٹیلی ویژن آن کیا تو اس میں بتایا گیا کہ شکردہ سے پندرہ روز کے بعد کرفیو اٹھالیا گیا۔ مجھے بہت خوشی ہوئی کیونکہ ہمارے انگریزی کے استاد کا تعلق اسی علاقے سے ہے اور وہ شاید کل پندرہ دن کے بعد پڑھانے کے لیے سکول آجـائیں۔

آج جب سکول جانے کے لیے میں نے یونیفارم پہننے کے لیے ہاتھ آگے بڑھایا تو یاد آیا کہ ہیڈ مسٹرس نے کہا تھا کہ آئندہ گھر کے کپڑے پہن کر سکول آجایا کریں۔ میں نے اپنی پسندیدہ گلابی رنگ کے کپڑے پہن لیے۔ سکول میں ہر لڑکی نے گھر کے کپڑے پہن لیے جس سے سکول گھر جیسا لگ رہا تھا۔
اس دوران میری ایک سہیلی ڈرتی ہوئی میرے پاس آئی اور بار بار قرآن کا واسطہ دیکر پوچھنے لگی کہ ’خدا کے لیے سچ سچ بتاؤ، ہمارے سکول کو طالبان سے خطرہ تو نہیں؟‘ میں سکول خرچ یونیفارم کی جیب میں رکھتی تھی لیکن آج جب بھی میں بھولے سے اپنے جیب میں ہاتھ ڈالنے کی کوشش کرتی تو ہاتھ پھسل جاتا کیونکہ میرےگھر کے کپڑوں میں جیب سرے ہی نہیں۔

آج ہمیں اسمبلی میں پھر کہا گیا کہ آئندہ سے زرق برق لباس پہن کر نہ آئیں کیونکہ اس پر بھی طالبان خفا ہوسکتے ہیں۔

سکول کی چھٹی کے بعد گھر آئی اور کھانا کھانے کے بعد ٹیوشن پڑھا۔ شام کو میں نے ٹیلی ویژن آن کیا تو اس میں بتایا گیا کہ شکردہ سے پندرہ روز کے بعد کرفیو اٹھالیا گیا۔ مجھے بہت خوشی ہوئی کیونکہ ہمارے انگریزی کے استاد کا تعلق اسی علاقے سے ہے اور وہ شاید کل پندرہ دن کے بعد پڑھانے کے لیے سکول آجـائیں

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2009/01/090109_diary_swatgirl_part1.shtml

’شاید دوبارہ سکول نہ آسکوں‘

طالبان نے پندرہ جنوری سے سوات میں خواتین کی تعلیم پر مکمل پابندی عائد کر دی ہے
صوبہ سرحد کے شورش زدہ ضلع سوات میں فوجی کارروائی جاری ہے۔ اگر ایک طرف سکیورٹی فورسز اور مسلح طالبان کی جھڑپوں میں درجنوں عام شہریوں کے ہلاکتوں کا سلسلہ جاری ہے تو دوسری طرف مسلح طالبان نے ایک سو تیس سے زائد سکولوں کو تباہ کرنے کی بھی ذمہ داری قبول کرلی ہے جن میں سے زیادہ تر لڑکیوں کے ہیں۔
پہلی قسط: سکول جانا ہے۔۔۔۔
اب طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر بھی پابندی لگادی ہے۔ اس صورتحال میں طالبات پر کیا گزر رہی ہے، بی بی سی ارود ڈاٹ کام ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کررہی ہے۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھیں گی۔ اس سلسلے کی دوسری کڑی:

بدھ، سات جنوری: تمہیں سکول جاتے وقت خوف نہیں آتا؟

میں محرم الحرام کی چھٹیاں گزارنےاپنی فیملی کے ساتھ ضلع بونیر آئی ہوں۔ بونیر مجھےبہت پسند آیا، یہاں چاروں طرف پہاڑ اورسرسبز وادیاں ہیں۔ میرا سوات بھی تو بہت خوبصورت ہے لیکن وہاں امن جونہیں، یہاں امن بھی ہے اور سکون بھی، نہ فائرنگ کی آواز اور نہ ہی کوئی خوف۔ ہم سب گھر والے یہاں بہت خوش ہیں۔

آج پیر بابا کے مزار پر گئے تھے، وہاں لوگوں کا بہت زیادہ رش تھا۔ وہ منتیں مانگنے آئے تھے اور ہم تفریح کے لیے۔ یہاں پر چوڑیاں، جھمکے، لاکٹ وغیرہ بکتے ہیں۔ میں نے شاپنگ کرنے کا سوچا تھا مگر کچھ بھی پسند نہیں آیا۔ البتہ امی نے جھمکے اور چوڑیاں خرید لیے۔

میں نے ایک لڑکی کو سکول جاتے ہوئے دیکھا۔ وہ چھٹی کلاس میں پڑھتی تھی۔ میں نے اسے روکا اور پوچھا تمہیں سکول جاتے ہوئے خوف محسوس نہیں ہو رہا ہے۔ اس نے پوچھا کس سے، میں نے کہا طالبان سے، اس نے جواب دیا: ’یہاں طالبان نہیں ہیں۔‘

میں نے ایک لڑکی کو سکول جاتے ہوئے دیکھا۔ وہ چھٹی کلاس میں پڑھتی تھی۔ میں نے اسے روکا اور پوچھا تمہیں سکول جاتے ہوئے خوف محسوس نہیں ہو رہا ہے۔ اس نے پوچھا کس سے، میں نے کہا طالبان سے، اس نے جواب دیا: ’یہاں طالبان نہیں ہیں۔‘

جمعہ، نو جنوری: مولانا شاہ دوران چھٹی پر چلے گئے

آج میں نے سکول میں اپنی سہیلیوں کو بونیر کے سفر کے بارے میں بتایا۔انہوں نے کہا کہ تمہارے یہ قصے سنتے سنتے ہمارے کان پک جائیں گے۔ ہم نے ایف ایم چینل پر تقریر کرنے والے طالبان رہنماء مولانا شاہ دوران کی موت سے متعلق اڑائی گئی خبر پر خوب بحث کی۔انہوں نے ہی لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی کا اعلان کیا تھا۔

کچھ لڑکیوں کا کہنا تھا کہ وہ مرگئے ہیں۔کچھ نے کہا کہ، نہیں زندہ ہیں۔انہوں نے چونکہ گزشتہ رات تقریر نہیں کی تھی اسی لیے ان کی موت کی افواہ پھیلائی گئی تھی۔ایک لڑکی نے کہا کہ وہ چھٹی پر چلے گئے ہیں۔

جمعہ کو ہمارے ٹیوشن کی چھٹی ہوتی ہے اس لیے ہم آج دیرتک کھیلتے رہے۔ ابھی ابھی جونہی میں ٹی وی دیکھنے بیٹھ گئی تو خبر آئی کہ لاہور میں دھماکے ہوگئے ہیں۔ میں نے کہا یا اللہ، دنیا میں سب سے زیادہ دھماکے پاکستان میں ہی کیوں ہوتے ہیں۔

بدھ، چودہ جنوری: شاید دوبارہ سکول نہ آسکوں؟

آج میں سکول جاتے وقت بہت خفا تھی کیونکہ کل سے سردیوں کی چھٹیاں شروع ہو رہی ہیں۔ ہیڈ مسٹرس نےچھٹیوں کا اعلان تو کیا تو مگر مقررہ تاریخ نہیں بتائی۔ایسا پہلی مرتبہ ہوا ہے، پہلے ہمیں ہمیشہ چھٹیوں کے ختم ہونے کی مقررہ تاریخ بتائی جاتی تھی۔اس کی وجہ تو انہوں نے نہیں بتائی لیکن میرا خیال ہے کہ طالبان کی جانب سے پندرہ جنوری کے بعد لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی کے سبب ایسا کیا گیا ہے۔

اس بار لڑکیاں بھی چھٹیوں کے بارے میں پہلے کی طرح زیادہ خوش دکھائی نہیں دے رہی تھیں کیونکہ ان کا خیال تھا کہ اگر طالبان نے اپنے اعلان پر عمل کیا تو وہ شاید سکول دوبارہ نہ آسکیں۔

آج چونکہ سکول کا آخری دن تھا اسی لیے ہم سہیلیوں نےسکول کے گراؤنڈ میں دیر تک کھیلنے کا فیصلہ کیا۔ مجھے بھی یہ امید ہے کہ انشاء اللہ ہمارا سکول بند نہیں ہوگا لیکن پھر بھی نکلتے وقت میں نے سکول کی عمارت پر ایسی نظر ڈالی جیسے دوبارہ یہاں نہیں آسکوں گی۔

کچھ لڑکیاں پرامید تھیں کہ انشاء اللہ فروری میں سکول دوبارہ کھل جائے گا لیکن بعض ایسی بھی تھیں جنہوں نے بتایا کہ ان کے تعلیم جاری رکھنے کی خاطر ان کے ماں باپ نےسوات سے نقل مکانی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

آج چونکہ سکول کا آخری دن تھا اسی لیے ہم سہیلیوں نےسکول کے گراؤنڈ میں دیر تک کھیلنے کا فیصلہ کیا۔ مجھے بھی یہ امید ہے کہ انشاء اللہ ہمارا سکول بند نہیں ہوگا لیکن پھر بھی نکلتے وقت میں نے سکول کی عمارت پر ایسی نظر ڈالی جیسے دوبارہ یہاں نہیں آسکوں گی۔

جمعرات، پندرہ جنوری: توپوں کی گھن گرج سے بھرپور رات

پوری رات توپوں کی شدید گھن گرج تھی جس کی وجہ سے میں تین مرتبہ جاگ اٹھی۔آج ہی سے سکول کی چھٹیاں بھی شروع ہوگئی ہیں اسی لیے میں آرام سے دس بجے اٹھی۔ بعد میں میری ایک کلاس فیلو آئی جس نے میرے ساتھ ہوم ورک ڈسکس کیا۔

آج پندرہ جنوری تھی یعنی طالبان کی طرف سے لڑکیوں کے سکول نہ جانے کی دھمکی کی آخری تاریخ مگر میری کلاس فیلو کچھ اس اعتماد سے ہوم ورک کر رہی ہےجیسے کچھ ہوا ہی نہیں۔

آج میں نے مقامی اخبار میں بی بی سی پر شائع ہونے والی اپنی ڈائری بھی پڑھی۔ میری ماں کو میرا فرضی نام’گل مکئی‘ بہت پسند آیا اورابو سے کہنے لگیں کہ میرا نام بدل کر گل مکئی کیوں نہیں رکھ لیتے۔ مجھے بھی یہ نام پسند آیا کیونکہ مجھے اپنا نام اس لیے اچھا نہیں لگتا کہ اسکے معنی ’غمزدہ‘ کے ہیں۔

ابو نے بتایا کہ چند دن پہلے بھی کسی نے ڈائری کی پرنٹ لیکر انہیں دکھائی تھی کہ یہ دیکھو سوات کی کسی طالبہ کی کتنی زبردست ڈائری چھپی ہوئی ہے۔ ابو نے کہا کہ میں نے مسکراتےہوئے ڈائری پر نظر ڈالی اور ڈر کے مارے یہ بھی نہ کہہ سکا کہ ’ہاں یہ تو میرے بیٹی کی ہے۔‘

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2009/01/090116_diary_swatgirl_part2.shtml

’بلڈنگ کو کیوں سزا دے رہے ہیں‘

’راستے سے فوجیوں نے گزرنا تھا اس لیے سکول کی چھٹی کردی گئی‘
سوات میں طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی لگادی ہے۔ اس صورتحال میں طالبات پر کیا گزر رہی ہے، بی بی سی ارود ڈاٹ کام ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کررہی ہے۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھیں گی۔ اس سلسلے کی تیسری کڑی:
دوسری قسط: ’شاید اب سکول نہ جا سکوں‘
پہلی قسط: سکول جانا ہے۔۔۔۔

اتوار:اٹھارہ جنوری ’طالبان نہیں، سکیورٹی فورسز بھی ذمہ دار‘
آج ابو نے بتایا کہ حکومت ہمارے سکولوں کی حفاظت کرے گی۔ وزیراعظم نے بھی ہمارے بارے میں بات کی ہے۔میں بہت خوش ہوئی۔لیکن اس سے تو ہمارا مسئلہ حل نہیں ہوگا۔

یہاں ہم سوات میں روزانہ سنتے ہیں کہ فلاں جگہ پر اتنے فوجی مرگئے ہیں، اُدھر اتنے اغواء ہوگئے۔ پولیس والے تو آج کل شہر میں نظر آہی نہیں رہے ہیں۔ ہمارے ماں باپ بھی بہت ڈرے ہوئے ہیں۔وہ کہتے ہیں کہ جب تک طالبان خود ہی ایف ایم چینل پر اپنا اعلان واپس نہیں لیتے وہ ہمیں سکول نہیں بھیجیں گے۔

خود فوج کی وجہ سے بھی ہماری تعلیم متاثر ہوئی ہے۔آج ہمارے محلے کا ایک لڑکا سکول گیا تھا تو وہاں پر استاد نےاس سے کہا کہ تم واپس گھر چلے جاؤ کیونکہ کرفیو لگنے والا ہے۔وہ جب واپس آیا تو پتہ چلا کہ کرفیو نہیں لگ رہا بلکہ اس راستے سے فوجی قافلے نے گزرنا تھا اس لیے سکول کی چھٹی کردی گئی۔

پیر:انیس جنوری’سکول کی بلڈنگ کو کیوں سزا دی جا رہی ہے‘
آج پھر پانچ سکولوں کو بموں سے اڑا دیا گیا۔ ان میں سے ایک سکول تو میرے گھر کے قریب ہے۔ میں حیران ہوں کہ یہ سکول تو بند تھے پھر کیوں اِنہیں آگ لگائی گئی۔ طالبان کی ڈیڈ لائن کے بعد تو کسی نے بھی سکول میں قدم نہیں رکھا تھا۔ آخر یہ لوگ بلڈنگ کو کیوں سزا دے رہے ہیں۔

آج میں اپنی ایک سہیلی کے گھر گئی تھی اس نے کہا کہ چند دن پہلے مولانا شاہ دوران کے چچا کو کسی نے قتل کر دیا تھا شاید اسی لیے طالبان نے غصے میں آ کر ان سکولوں کو جلادیا ہے۔وہ کہہ رہی تھی کہ طالبان کو کسی نے تکلیف پہنچائی ہے جب انہیں تکلیف پہنچتی ہے تو وہ پھر اس طرح کا غصہ ہمارے سکولوں پر نکالتے ہیں۔

فوجی بھی کچھ نہیں کررہے ہیں۔وہ پہاڑوں میں اپنے مورچوں میں بیٹھے ہوئے ہیں۔بکریاں ذبح کرتے ہیں اور مزے لے کر کھاتے ہیں۔

جمعرات: بائیس جنوری ’جہاں فوجی وہاں طالب، جہاں طالب وہاں فوجی نہیں‘
سکول کے بند ہونے کے بعد گھر پر بیٹھ کر بہت بور ہوگئی ہوں۔میری بعض سہیلیاں سوات سے چلی گئی ہیں۔سوات میں آجکل حالات پھر بہت خراب ہیں۔ڈر کے مارے گھر سے باہرنہیں نکل سکتی۔رات کو بھی مولانا شاہ دوران نے ایف ایم چینل پر اپنی تقریر میں یہ دھمکی دی کہ لڑکیاں گھر سے نہ نکلیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ فوج جس سکول کو مورچے کے طور پر استعمال کرے گی وہ اسے دھماکے سے اڑادیں گے۔

ابو نے آج گھر میں ہمیں بتایا کہ حاجی بابا میں لڑکیوں اور لڑکوں کے ہائی سکولوں میں بھی فوجی آگئے ہیں۔اللہ خیرکرے۔مولانا شاہ دوران نے اپنی تقریر میں یہ بھی کہا کہ کل تین چوروں کو کوڑے لگائے جائیں گے جو بھی تماشہ کرنا چاہتاہے وہ پہنچ جائے۔ میں حیران ہوں کہ ہمارے ساتھ اتنا ظلم ہواہے پھر لوگ کیوں تماشہ کرنے جاتے ہیں۔

فوج بھی کیوں طالبان کو ایسا کرنے سے نہیں روکتی۔ میں نے دیکھا ہے کہ جہاں فوج ہوگی وہاں طالب ہوگا مگر جہاں طالب ہوگا وہاں فوجی نہیں جائے گا۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/01/090123_diary_swatgirl_3_zs.shtml

’آنر بورڈ پر شاید اس سال کسی کا نام نہ لکھاجائے‘

صوبہ سرحد کے شورش زدہ ضلع سوات میں گزشتہ برس اکتوبر میں شروع ہونے والی فوجی کارروائی جاری ہے۔ ایک طرف سکیورٹی فورسز اور طالبان کی جھڑپوں میں درجنوں عام شہریوں کے ہلاکتیں ہوئی ہیں تو دوسری طرف مسلح طالبان نے ایک سو تیس سے زائد سکولوں کو تباہ کر دیا ہے جن میں سے زیادہ تر لڑکیوں کے ہیں۔
اب طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر بھی پابندی لگادی ہے۔ اس صورتحال میں طالبات پر کیا گزر رہی ہے، بی بی سی ارود ڈاٹ کام ساتویں جماعت کی ایک طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کررہی ہے۔

’بلڈنگ کو کیوں سزا دے رہے ہیں‘
سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھ رہی ہیں۔ ’سوات کی طالبہ‘ سلسلے کی چوتھی کڑی:

سنیچر ، چوبیس جنوری، آنر بورڈ پر شاید اس سال کسی کا نام نہ لکھاجائے

ہمارے سالانہ امتحانات چھٹیاں ختم ہونے کے بعد ہونگے، لیکن یہ اس وقت ہونگے جب طالبان لڑکیوں کو سکول جانے کی اجازت دیں تیاری کرنے کے لیے ہمیں کچھ چپٹر بتائے گئے ہیں مگر میرا دل پڑھنے کو نہیں کررہا ہے۔

کل سے فوج نے بھی مینگورہ میں تعلیمی اداروں کی حفاظت کے لیے کنٹرول سنبھال لیا ہے۔ جب درجنوں سکول تباہ ہوگئے اور سینکڑوں بند ہوئے تو اب جاکے فوج کو حفاظت کا خیال آیا۔اگر وہ صحیح آپریشن کرتے تو یہ نوبت پیش ہی نہ آتی۔

مسلم خان نے کہا ہے کہ وہ ان تعلیمی اداروں پر حملہ کریں گے جن میں فوجی ہونگے۔اب تو سکول میں فوجیوں کو دیکھ کر ہمارا خوف اور بھی بڑھ جائے گا۔

جب درجنوں سکول تباہ ہوگئے اور سینکڑوں بند ہوئے تو اب جاکے فوج کو حفاظت کا خیال آیا۔اگر وہ صحیح آپریشن کرتے تو یہ نوبت پیش ہی نہ آتی

ہمارے سکول میں ایک بورڈ لگا ہواہے جس سے آنر بورڈ کہا جاتا ہے۔اس بورڈ پر ہر سال اس طالبہ کا نام لکھا جاتا ہے جو سالانہ امتحان میں سب سے زیادہ نمبر حاصل کرتی ہے۔لگتا ہے کہ اس بار آنر بورڈ پر کسی کے نام کے لکھنے کا موقع آئے ہی نہیں۔

پیر ، چھبیس جنوری ، ہیلی کاپٹروں کا خوف اور ٹافیوں کی بارش

آج صبح سویرے توپ کے گولوں کی آوازیں سن کر نیند سے جاگ اٹھی۔ بہت زیادہ گولہ باری ہوئی ہے۔ پہلے ہم ہیلی کاپٹروں کے شور سے ڈرتے تھے اور اب توپ کے گولوں سے۔

مجھے یاد ہے کہ جب آپریشن شروع ہوا تھا اس وقت جب پہلی مرتبہ ہیلی کاپٹر ہمارے گھروں کے اوپر سے گزرے تھے تو ہم خوف کے مارے چھپ گئے تھے۔ میرے محلے کے تمام بچوں کی یہی حالت تھی۔

ایک دن ہیلی کاپٹروں سے ٹافیاں پھینکی گئیں اور پھر یہ سلسلہ کئی دنوں تک چلتا رہا۔اب میرے بھائی اور محلے کے دوسرے بچے جونہی ہیلی کاپٹر کی آواز سنتے ہیں تو وہ باہر نکل کر ٹافیوں کے پھینکے جانے کا انتظار کرتے ہیں لیکن اب ایسا نہیں ہوتا۔

تھوڑی دیر پہلے ابو نے خوشخبری سنائی کہ وہ ہمیں کل اسلام آباد لیکر جارہے ہیں۔ ہم سب بہن بھائی بہت خوش ہیں۔

بدھ ، اٹھائیس جنوری ، میں نے امی اور ابو کے انکھوں میں آنسو دیکھے

ابو نے اپنا وعدہ پورا کیا اور ہم کل ہی اسلام آباد آگئے۔ راستے میں ہمیں بہت ڈر لگ رہا تھا کیونکہ میں نے سنا تھا کہ طالبان رستے میں تلاشی لیتے ہیں۔ لیکن اچھا ہوا کہ ہمارے ساتھ ایسا نہیں ہوا۔

اسکے بجائے فوج نے ہماری تلاشی لی۔ جب سوات کا علاقہ ختم ہوگیا تو ہمارا خوف ختم ہوگیا۔ ہم اسلام آباد میں ابو کے ایک دوست کے ساتھ ٹھہرے ہوئے ہیں۔

میں پہلی بار اسلام آباد آئی ہوں، یہ ایک خوبصورت شہر ہے، یہاں بڑے بڑے بنگلے اور صاف ستھرے سڑکیں ہیں لیکن اس میں وہ نیچرل بیوٹی نہیں ہے جو میرے سوات میں ہے۔

ابو ہمیں لوک ورثہ لیکر گئے۔یہاں میری معلومات میں بہت اضافہ ہوا۔سوات میں بھی اسی قسم کا میوزیم ہے لیکن معلوم نہیں کہ وہ محفوظ رہ بھی سکے گا یا نہیں؟

لوک ورثہ سے نکل کر ابو نے ایک بوڑھے شخص سے ہمارے لیے پاپ کارن خریدا۔اس شخص نے جب پشتو میں بات کی تو ابو نے ان سے پوچھا کہ کیا آپ اسلام آباد کے رہنے والے ہیں تو اس بوڑھے شخص نے جواب دیا کہ آپکو کیا لگتا ہے کہ اسلام آباد پشتونوں کا ہوسکتا ہے؟

اس شخص نے بتایا کہ اس کا تعلق مہمند ایجنسی سے ہے جہاں پر فوجی آپریشن شروع ہوگیا ہے۔ ’میں گھر بار چھوڑ آکر یہاں آیا ہوں۔‘ اس وقت میں نے ابو اور امی کی آنکھوں میں آنسو دیکھ لیے۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/01/090130_swat_girldiary_si.shtml

’ڈر ہے سکول ہمیشہ کیلیے بندنہ ہوجائے‘

سوات میں طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی لگادی ہے۔ اس صورتحال میں طالبات پر کیا گزر رہی ہے، بی بی سی ارود ڈاٹ کام ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کررہی ہے۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھیں گی۔ اس سلسلے کی پانچویں کڑی:
طالبہ کی ڈائری: چوتھی قسط

جمعہ ، اکتیس جنوری، میں شٹل کاک پہننے سے انکار کر دیا
سوات کی جنگ سے ہم نےصرف اتنا فائدہ اٹھایا کہ ابو نے زندگی میں پہلی مرتبہ ہم سب گھر والوں کو مینگورہ سے نکال کر مختلف شہروں میں خوب گھمایا پھرایا۔ہم کل اسلام آباد سے پشاور آگئے، وہاں پر ہم نے اپنے ایک رشتہ دارکے گھر میں چائے پی اوراس کے بعد ہمارا ارادہ بنوں جانے کا تھا۔

میرا چھوٹا بھائی جس کی عمر پانچ سال ہے ہمارے رشتہ دار کے گھر کے صحن میں کھیل رہا تھا۔ابو نے جب اسے دیکھ کر پوچھا کیا کر رہے ہو بچوڑی( بچے) تو اس نے کہا ’ مٹی سے بابا قبر بنا رہا ہوں‘۔

بعد میں ہم اڈے گئے اور وہاں سے ایک ویگن میں بیٹھ کر بنوں کے لیے روانہ ہوگئے۔ ویگن پرانی تھی اور ڈرائیور بھی راستے میں ہارن بہت بجایا کرتا تھا۔ ایک دفعہ جب خراب سڑک کی وجہ سے ویگن ایک کھڈے میں گرگئی تو اس وقت اچانک ہارن بھی بج گیا تو میرا ایک دوسرا بھائی جو دس سال کا ہے اچانک نیند سے بیدار ہوا۔

وہ بہت ڈرا ہوا تھا جاگتے ہی امی سے پوچھنے لگا’ ابئی( امی) ’کیا کوئی دھماکہ ہوگیا ہے۔’

رات کو ہم بنوں پہنچ گئے جہاں پر میرے ابو کے دوست پہلے سے ہی ہمارا انتظار کررہے تھے۔میرے ابو کے دوست بھی پشتون ہیں مگر ان کے گھر والوں کی زبان (بنوسی لہجہ) ہمیں پوری طرح سمجھ نہیں آ رہی ہے۔

ہم بازار گئے پھر پارک ۔یہاں پر خواتین جب باہر نکلتی ہیں تو انہیں ٹوپی والا برقعہ ( شٹل کاک) لازمی پہننا ہوگا۔میری امی نے تو پہن لیا مگر میں نے انکار کردیا کیونکہ میں اس میں چل نہیں سکتی ہوں ۔

سوات کے مقابلے میں یہاں امن زیادہ ہے۔ہمارے میزبانوں نے بتایا کہ یہاں بھی طالبان ہیں مگر جنگیں اتنی نہیں ہوتیں جتنی سوات میں ہوتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ طالبان نے یہاں بھی لڑکیوں کے سکولوں کو بند کرنے کی دھمکی دی تھی مگر پھر بھی سکول بند نہیں ہوئے۔

سنیچر، یکم فروری ، سوات کے سینکڑوں لوگوں کے خون کا حساب کون لےگا؟
بنوں سے پشاور آتے ہوئے راستے میں مجھے سوات سے اپنی ایک سہیلی کا فون آیا۔ وہ بہت ڈری ہوئی تھیں، مجھ سے کہنے لگی حالات بہت خراب ہیں تم سوات مت آنا۔ اس نے بتایا کہ فوجی کارروائی شدید ہوگئی ہے اور مارٹر گولوں سے صرف آج سینتیس لوگ مرے ہیں۔

شام کو ہم پشاور پہنچے اور بہت تھکے ہوئے بھی تھے۔میں نے ایک نیوز چینل لگایا تو وہ بھی سوات کی بات کر رہا تھا۔اس میں لوگوں کو ہجرت کرتےہوئے دکھایا گیا ،لوگ پیدل جارہے تھے مگر وہ خالی ہاتھ تھے۔

میں نے سوچا کہ ایک وہ وقت تھا جب باہر سے لوگ تفریح کے لیے سوات آیا کرتے تھے اور آج سوات کے لوگ اپنے علاقے کو چھوڑ کرجارہے ہیں۔

میں نے دوسرا چینل لگایا جس پر ایک خاتون کہہ رہی تھی کہ ’ ہم شہید بے نظیر بھٹو کے خون کا حساب لیں گے۔’ میں نے پاس بیٹھے ابو سے پوچھا کہ یہ سینکڑوں سواتیوں کے خون کا حساب کون لے گا؟

پیر ، تین فروری ، سکول نہیں کھلے، میں بہت خفا ہوں
آج ہمارے سکول کھلنے کا دن تھا۔صبح اٹھتے ہی سکول بند ہونے کا خیال آیا تو خفا ہوگئی۔اس سے پہلے جب بھی سکول مقررہ تاریخ پر نہ کھلتا تو ہم خوش ہو جایا کرتے تھے۔ اس دفعہ ایسا نہیں ہے کیونکہ مجھے ڈر ہے کہ کہیں ہمارا سکول طالبان کے حکم پر ہمیشہ کے لیے بند نہ ہوجائے۔

ابو نے بتایا کہ پرائیویٹ سکولوں نے لڑکیوں کی تعلیم پر پابندی کے خلاف لڑکوں کے سکولوں کو آٹھ فروری تک نہ کھولنے کا اعلان بھی کیا۔ابو نے بتایا کہ لڑکوں کے پرائیویٹ سکولوں کے دروازوں پر یہ نوٹس لگایا گیا ہے کہ سکول نو فروی کو کھل جائیں گے۔

انہوں نے بتایا کہ لڑکیوں کے سکول پر یہ نوٹس نہیں لگا ہے جس کا مطلب ہے کہ ہمارے سکول اب نہیں کھلیں گے۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/02/090206_swat_diary_5_zs.shtml

’سوات میں لڑکوں کے سکول کھل چکے ہیں‘

سوات میں طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی لگادی ہے۔ اس صورتحال میں طالبات پر کیا گزر رہی ہے، بی بی سی اردو ڈاٹ کام ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کر رہی ہے۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھیں گی۔ اس سلسلے کی چھٹی کڑی:

سنیچر، سات فروری: بڑی داڑھیاں، لمبے بال اور توپ کے گولے

دوپہر کو میں اور میرا چھوٹا بھائی ابو کے ساتھ مینگورہ کے لیے روانہ ہوگئے۔امی لوگ پہلے ہی جاچکے تھے۔ بیس دن کے بعد مینگورہ جاتے ہوئے خوشی بھی ہو رہی تھی اور ساتھ میں ڈر بھی لگ رہا تھا۔ مینگورہ میں داخل ہونےسے پہلےجب ہم قمبر کےعلاقےسے گزر رہے تھے تو وہاں پرعجیب قسم کی خاموشی تھی۔

پانچویں قسط: کہیں سکول ہمیشہ کے لیے بند نہ ہوجائے
بڑی بڑی داڑھیوں اور لمبے لمبے بالوں والے کچھ لوگوں کے سوا وہاں پر کوئی اور نظر نہیں آیا۔ شکل و صورت سے یہ لوگ طالبان لگ رہے تھے۔ میں نے کچھ مکانوں کو بھی دیکھا جن پر گولوں کے نشانات تھے۔

مینگورہ میں داخل ہوئے تو وہاں پر بھی پہلے کی طرح رش نہیں تھا۔ ہم امی کے لیے تحفہ خریدنے شاہ سپر مارکیٹ گئے تو وہ بھی بند ہوگیا تھا حالانکہ پہلے یہ مارکیٹ دیر تک کھلی رہتی تھی۔ باقی دکانیں بھی بند ہوگئی تھیں۔ ہم نے امی کو مینگورہ آنے کا نہیں بتایا تھا کیونکہ ہم نے انہیں سر پرائز دینے کا فیصلہ کیا تھا۔گھر میں داخل ہوئے تو امی بہت حیران ہوئیں۔

اتوار،آٹھ فروری: یونیفارم، بستے اور جیومیٹری بکس دیکھ کر دکھ ہوا
میں نے جب اپنی الماری کھولی تو وہاں پر پڑے سکول کے یونیفارم، بستے اور جیومیٹری بکس کو دیکھ کر مجھے بہت دکھ ہوا۔ کل تمام پرائیویٹ سکولوں کے بوائز سیکشن کھل رہے ہیں۔ ہم لڑکیوں کی تعلیم پر تو طالبان نے پابندی لگا رکھی ہے۔

مولانا فضل اللہ نے پچھلی رات ایف ایم چینل پر اپنی تقریر میں کہا کہ مینگورہ میں پولیس اسٹیشن پر جو خود کش حملہ ہوا تھا اس سے پریشر ککر کا دھماکہ سمجھ لو، اس کے بعد بڑا دیگ پھٹے گا اور پھر ٹینکر کا دھماکہ ہوگا۔

میں نے جیومیٹری بکس کھولا تو اس میں دو سو روپے پڑے تھے۔ یہ سکول کے جرمانے کے پیسے ہیں۔ جب کوئی لڑکی سکول نہ آتی یا کبھی لیٹ آتی تو ان سے جرمانے کے پیسے لینے کی ذمہ داری ٹیچر نے میری لگائی تھی۔

الماری میں ہمارے کلاس کے بورڈ کا مارکر بھی پڑا تھا جس سے بھی میں اپنے ساتھ رکھا کرتی تھی۔ سکول کی بہت سی باتیں یاد آئیں، سب سے زیادہ لڑکیوں کے آپس کے جھگڑے۔

میرے چھوٹے بھائی کا سکول بھی کل ہی کھل رہا ہے،اس نے بالکل ہوم ورک نہیں کیا ہے۔ وہ بہت پریشان ہے اور سکول جانا نہیں چاہ رہا۔ امی نے ویسے کل کرفیو لگنے کی بات کی تو اس نے پوچھا کیا کل سچ مچ کرفیو لگ رہا ہے۔امی نے جب ’ہاں‘ کہا تو اس نے خوشی سے ناچنا شروع کر دیا۔

منگل، دس فروری: محبوب یا غربت وطن چھوڑنے پر مجبور کرتی ہے

سوات میں لڑکوں کے سکول کھل چکے ہیں اور طالبان کی طرف سے پرائمری تک لڑکیوں کے سکول جانے سے پابندی اٹھائے جانے کے بعد لڑکیوں نے بھی سکول جانا شروع کر دیا ہے۔ ہمارے سکول میں پانچویں تک لڑکے اور لڑکیاں ایک ساتھ پڑھتے ہیں۔

میرے چھوٹے بھائی نے بتایا کہ آج اس کے کلاس کے انچاس میں سےصرف چھ بچے حاضر تھے جس میں سے صرف ایک طالبہ تھی۔اسمبلی میں بھی ستر کے قریب بچے تھے۔ ہمارے سکول کی کل تعداد سات سو ہے۔

آج ہماری ایک نوکرانی آئی تھی جو ہفتے میں ایک بار ہمارے کپڑے دھونے آتی ہیں۔ ان کے ساتھ ایک اور خاتون بھی تھی۔ نوکرانی کا تعلق ضلع اٹک سے ہے لیکن وہ برسوں سے یہاں رہ رہی ہے۔ انہوں نے بتایا: ’حالات بہت خراب ہیں اور میرے خاوند نے کہا ہے کہ تم واپس اٹک چلی جاؤ۔‘

آج جمعرات ہے یعنی شبِ جمعہ ہے اس لیے مجھے ڈر بھی بہت لگ رہا ہے کیونکہ لوگ کہتے ہیں کہ اکثر دیکھا گیا ہے شبِ جمعہ یا جمعہ کے دن خود کش حملے زیادہ ہوتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ خودکش حملہ آور سمجھتا ہے کہ اسلامی طورپر یہ ایک مقدس دن ہے اور اس روز حملہ کرنے سے اسے ثواب زیادہ ملے گا۔

انہوں نے کہا کہ اتنے برسوں تک یہاں رہ کر سوات اب مجھے اپنا گھر جیسا لگ رہا ہے۔اپنے شہر اٹک جاتے ہوئے مجھے لگتا ہے کہ میں اپنا شہر چھوڑ کر ایک انجان شہر جا رہی ہوں۔ان کے ساتھ جو عورت آئی تھی وہ سوات کی ہے اور اس نے امی کو ایک پشتو ٹپہ سنایا۔

عالم پہ چار لہ مُلکہ نہ زی
یا ڈیر غریب شی یا د یار لہ غمہ زی نا
( ترجمہ: لوگ مرضی سے اپنا وطن نہیں چھوڑتے، یا بہت زیادہ غربت یا پھر محبوب انہیں ترکِ وطن پر مجبور کرتی ہے۔)

بدھ ، گیارہ فروری: خود کش حملے کو پریشر ککر کا دھماکہ سمجھ لو
آج بھی سارا دن خوف میں گزرا۔ بوریت بھی بہت تھی۔ گھر میں اب ٹیلی ویژن بھی نہیں ہے۔ جب ہم سردیوں کی چھٹیوں میں بیس دن کے لیے مینگورہ سے باہر گئے تھے تو اس وقت ہمارے گھر میں چوری ہوگئی تھی۔ پہلے اس قسم کی چوریاں نہیں ہوتی تھیں لیکن جب سے حالات خراب ہوئے ہیں ایسے واقعات بھی بڑھ گئے ہیں۔

شکر ہے ہمارے گھر میں نہ نقدی تھی اور نہ ہی سونا، میرا بریسلٹ اور پائل بھی غائب تھے لیکن بعد میں مجھے کہیں اور نظر آئے۔ شاید چور سونا سمجھ کر چرانا چاہ رہے تھے مگر بعد میں انہیں سمجھ آگئی ہوگی کہ یہ تو نقلی ہیں۔

مولانا فضل اللہ نے پچھلی رات ایف ایم چینل پر اپنی تقریر میں کہا کہ مینگورہ میں پولیس اسٹیشن پر جو خود کش حملہ ہوا تھا اس سے پریشر ککر کا دھماکہ سمجھ لو، اس کے بعد بڑا دیگ پھٹے گا اور پھر ٹینکر کا دھماکہ ہوگا۔

رات کو ابو نے سوات میں ہونے والے تمام واقعات سنائے۔ آج کل باتوں میں ہماری زبان پر فوجی، طالبان، راکٹ، گولہ باری، شیلنگ، مولانا فضل اللہ، مسلم خان، پولیس، ہیلی کاپٹر، ہلاک، زخمی جیسے الفاظ زیادہ ہوتے ہیں۔

جمعرات، بارہ فروری: جمعہ کو خودکش حملے کا ثواب زیادہ ہوتا ہے؟
کل ساری رات شدید گولہ باری ہوتی رہی۔اس حال میں بھی میرے دونوں بھائی سوئے ہوئے تھے مگر مجھے بالکل نیند نہیں آرہی تھی۔میں ایک دفعہ ابو کے پاس گئی وہاں آرام نہیں آیا پھر جاکر امی کے ساتھ لیٹ گئی۔ اس کے باوجود تھوڑی دیر کے لیے آنکھ لگ جاتی لیکن پھر دوبارہ جاگ اٹھتی۔

اسی لیے صبح دیر سے جاگی۔ سہ پہر کو ٹیوشن پڑھانے والا ٹیچر آیا، اس کے بعد قاری صاحب نے آکر دینی سبق پڑھایا۔ شام تک بھائیوں کے ساتھ کبھی لڑ کر کبھی صلح کر کے کھیلتی رہی۔ ٹی وی نہ ہونے سے کچھ دیر تک کمپیوٹر پر گیم بھی کھیلتی رہی۔

جب طالبان نے کیبل پر پابندی نہیں لگائی تھی اس وقت میں سٹار پلس کے ڈرامے دیکھا کرتی تھی اس میں ’راجہ کی آئے گی بارات‘ والا ڈرامہ مجھے بہت پسند تھا۔ مجھےکامیڈی بھی بہت پسند ہے، پاکستانی چینل جیو کا مزاحیہ پروگرام’ ہم سب امید سے ہیں‘ کو بھی میں بہت شوق سے دیکھا کرتی تھی۔

آج جمعرات ہے یعنی شبِ جمعہ ہے اس لیے مجھے ڈر بھی بہت لگ رہا ہے کیونکہ لوگ کہتے ہیں کہ اکثر دیکھا گیا ہے شبِ جمعہ یا جمعہ کے دن خود کش حملے زیادہ ہوتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ خودکش حملہ آور سمجھتا ہے کہ اسلامی طورپر یہ ایک مقدس دن ہے اور اس روز حملہ کرنے سے اسے ثواب زیادہ ملے گا۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/02/090213_swatgirl_diary_6.shtml

’ڈرو مت بیٹی یہ امن کی فائرنگ ہے‘

سوات میں طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی لگادی ہے۔ اس صورتحال میں طالبات پر کیا گزر رہی ہے، بی بی سی اردو ڈاٹ کام ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کر رہی ہے۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھیں گی۔ اس سلسلے کی ساتویں کڑی:

جمعہ، تیرہ فروری:’مولانا فضل اللہ روتے رہے‘

آج موسم بہت اچھا تھا۔ بہت زیادہ بارش ہوئی اور جب بارش ہوتی ہے تو میرا سوات اور بھی خوبصورت لگتا ہے۔مگر صبح جاگتے ہی امی نے بتایا کہ آج کسی نے رکشہ ڈرائیور اور بوڑھے چوکیدار کو قتل کردیا ہے۔یہاں اب زندگی بد سے بدتر ہوتی جارہی ہے۔

آس پاس کے علاقے سے روزانہ سینکڑوں لوگ مینگورہ آرہے ہیں جبکہ مینگورہ کے لوگ دوسرے شہروں کی طرف چلے گئے ہیں۔جو امیر ہیں وہ سوات سے باہر گئے ہیں اور جو غریب ہیں وہ یہاں سے کہیں اور جا نہیں سکتے۔

ہم نے اپنے تایا زاد بھائی کو فون کیا کہ وہ اس اچھے موسم میں اپنی گاڑی میں ہمیں مینگورہ کا چکر لگوائیں۔وہ آیا لیکن جب ہم باہر نکلے تو بازار بند تھا، سڑکیں سنسان تھیں۔ہم قمبر کے علاقے کی طرف جا نا چاہ رہے تھےکہ کسی نے بتایا کہ وہاں پر ایک بہت بڑا جلوس نکلا ہوا ہے۔

رات کو ایف ایم اسٹیشن پر مولانا فضل اللہ نے تقریر کی اور وہ دیر تک روتے رہے۔ وہ آپریشن کے بند ہونے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ انہوں نے لوگوں سے کہا کہ وہ ہجرت نہ کریں بلکہ اپنے گھروں میں واپس آجائیں۔

اتوار، پندرہ فروری:’ڈرو مت بیٹی یہ امن کی فائرنگ ہے‘

آج پشاور اورگاؤں سے مہمان آئے ہوئے تھے۔ دوپہر کو جب ہم کھانا کھا رہے تھے کہ باہر بہت زیادہ فائرنگ شروع ہوئی۔ اتنی زبردست فائرنگ میں نے اس سے پہلے کبھی نہیں سنی تھی۔ ہم سب ڈر گئے، سوچا کہ شاید طالبان آگئے ہیں۔ میں بھاگ کر ابو کے پاس گئی تو انہوں نے کہا ’ڈرو مت بیٹی یہ امن کی فائرنگ ہے‘۔

ابو نے بتایا کہ آج اخبار میں آیا ہے کہ کل حکومت اور طالبان کے درمیان سوات کے بارے میں امن معاہدہ ہو رہا ہے اس لیے لوگ خوشی سے فائرنگ کررہے ہیں۔ لیکن رات کو جب طالبان کے ایف ایم پر بھی امن معاہدے ہونے کا اعلان ہوا تو دوپہر سے بھی زیادہ زبردست فائرنگ ہوئی۔ کیونکہ لوگ حکومت سے زیادہ طالبان کے اعلان پر یقین کرتے ہیں۔

جب ہم نے بھی یہ اعلان سنا تو پہلے امی رونے لگی پھر ابو، میرے اور دو چھوٹے بھائیوں کے آنکھوں سے بھی آنسو نکل گئے۔

پیر، سولہ فروی: شاید اب لڑکیوں کے سکول دوبارہ کھل جائیں

آج میں صبح اٹھتے ہی بہت زیادہ خوش تھی کیونکہ حکومت اور طالبان کے درمیان امن معاہدہ جو ہو رہا تھا۔ آج ہیلی کاپٹر کی پرواز بھی بہت زیادہ نیچے تھی۔ میرے ایک کزن نے کہا کہ جیسے جیسے امن آرہا ہے ویسے ویسے ہیلی کاپٹر کی پرواز بھی نیچے ہو رہی ہے۔

دوپہر کو امن معاہدے کی خبر سن کر لوگوں نے مٹھائیاں بانٹیں۔ میری ایک سہیلی نے مجھے مبارکباد کا فون کیا، اس نے کہا کہ اب اسے گھر سے نکلنے کا موقع ملے گا کیونکہ وہ کئی مہینوں سے ایک ہی کمرے میں بند رہی ہے۔ہم دودنوں اس بات پر بھی بہت خوش تھے کہ شاید اب لڑکیوں کے سکول دوبارہ کھل جائیں۔

منگل، سترہ فروری: شہر کی رونق دوبارہ لوٹ آئی ہے

آج سے میں نے امتحانات کی تیاریاں دوبارہ شروع کر دی ہیں کیونکہ امن معاہدے کے بعد لڑکیوں کے سکول دوبارہ کھلنے کی امید پیدا ہوگئی ہے۔ آج میرے ٹیوشن پڑھانے والی ٹیچر بھی نہیں آئی کیونکہ وہ کسی منگنی میں شرکت کرنے گئی تھی۔

میں جب اپنے کمرے میں آئی تو میرے دو چھوٹے بھائی آپس میں کھیل رہے تھے۔ ایک کے پاس کھلونےوالا ہیلی کاپٹر تھا اور دوسرے نے کاغذ سے بندوق بنائی ہوئی تھی۔ایک کہہ رہا تھا کہ فائر کرو دو سرا پھر کہتا پوزیشن سنبھالو۔میرے ایک بھائی نے ابو سے کہا کہ ’میں ایٹم بم بناؤں گا‘۔

آج سوات میں مولانا صوفی محمد بھی آئے ہوئے ہیں، میڈیا والے بھی زیادہ تعداد میں آئے ہیں۔ شہر میں بہت زیادہ رش ہے۔ بازار کی رونق واپس لوٹ آئی ہے۔خدا کرے کہ اس دفعہ معاہدہ کامیاب ہو۔ مجھے تو بہت زیادہ امید ہے لیکن پھر بھی اگر اور کچھ نہیں ہوا تو کم ازکم لڑکیوں کے سکول تو کھل جائیں گے۔

بدھ، اٹھارہ فروری:صحافی کے قتل سے امن کی امیدیں ٹوٹ گئیں

آج میں بازار گئی تھی، وہاں بہت زیادہ رش تھا۔ لوگ امن معاہدے پر بہت خوش ہیں۔ آج بہت عرصے کے بعد میں نے بازار میں ٹریفک جام دیکھا مگر رات کو ابو نے بتایا کہ سوات کے ایک صحافی کو نامعلوم افراد نے قتل کردیا ہے۔ امی کی طبیعت بہت خراب ہوگئی۔ہم سب کی امن آنے کی امیدیں بھی ٹوٹ گئیں۔

جمعرات، انیس فروری: ہم اب جنگ کی نہیں امن کی باتیں کریں گے

آج ابو نے ناشتہ تیار کرکے دیا کیونکہ امی کی طبیعت کل سے ہی خراب ہے۔ انہوں نے ابو سے گلہ بھی کیا کہ انہیں صحافی کی موت کی خبر کیوں سنائی۔میں نے چھوٹے بھائیوں کو کہا کہ ہم اب جنگ کی نہیں امن کی باتیں کریں گے۔ آج پتہ چلا کہ ہماری ہپیڈ مسٹرس نے اعلان کیا ہے کہ گرلز سیکشن کے امتحانات مارچ کے پہلے ہفتے میں ہونگے۔میں نے بھی آج سے امتحان کی تیاری مزید تیز کردی ہے۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/02/090220_swat_girl_diary_7_zs.shtml

پردے کاخیال رکھو، برقعہ پہن کرآیا کرو

سوات میں طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی لگادی تھی مگر صوبائی حکومت اور کالعدم تحریکِ نفاذ شریعت محمدی کے درمیان ہونے والے ’امن معاہدے‘ کے بعد طالبان نے اپنا یہ فیصلہ صرف امتحانات کے انعقاد تک جزوی طور پر واپس لے لیا ہے۔مقامی طالبات کا کہنا ہے کہ وہ اب بھی غیر یقینی کی صورتحال سے گزر رہی ہیں۔
طالبہ کی ڈائری: ساتویں قسط
بی بی سی اردو ڈاٹ کام سوات سے تعلق رکھنے والی ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کر رہی ہے۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھ رہی ہیں۔ اس سلسلے کی آٹھویں کڑی:

سینیچر، اکیس فروری:’طالبان نے لڑکیوں کے سکولوں سے پابندی اٹھالی‘

سوات میں حالات رفتہ رفتہ صحیح ہو رہے ہیں۔ فائرنگ اور توپخانے کے استعمال بھی بہت حد تک کمی آئی ہے۔ لیکن لوگ اب بھی ڈرے ہوئے ہیں کہ کہیں امن معاہدہ ٹوٹ نہ جائے۔

لوگ ایسی افواہیں بھی پھیلارہے ہیں کہ طالبان کے کچھ کمانڈر اس معاہدے کو نہیں مان رہے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہم آخری دم تک لڑیں گے۔ایسی افواہیں سن کر دل دھڑکنےلگتا ہے۔ آخر وہ ایسا کیوں کررہے ہیں۔وہ کہتے ہیں کہ ہم جامعہ حفصہ اور لال مسجد کا بدلہ لینا چاہتے ہیں لیکن اس میں ہمارا کیا قصور ہے جنہوں نے یہ آپریشن کیا تھا ان سے یہ لوگ کیوں انتقام نہیں لیتے۔

ابھی کچھ دیر پہلے مولانا فضل اللہ نے ایف ایم پر اعلان کیا کہ لڑکیوں کے سکول پر پابندی سے متعلق اپنا فیصلہ واپس لیتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ لڑکیاں امتحانات تک جو سترہ مارچ سے شروع ہو رہے ہیں سکول جا سکتی ہیں مگر انہیں پردہ کرنا ہوگا۔

میں یہ سن کر بہت زیادہ خوش ہوئی۔میں یقین نہیں کر سکتی تھی کہ ایسا بھی کبھی ہوسکے گا۔

اتوار، بائیس فروری:’خواتین مارکیٹ سنسان پڑی تھی‘

آج ہم شاپنگ کرنے کے لیے خواتین مارکیٹ گئے۔ راستے میں ہمیں بہت زیادہ خوف محسوس ہو رہا تھا کیونکہ طالبان نے خواتین کی بازاروں میں شاپنگ کرنے پر پابندی لگا رکھی ہے۔ ہم مینگورہ کی چینہ مارکیٹ گئے جہاں پر صرف خواتین کی ضرورت کی چیزیں بکتی ہیں۔

مارکیٹ میں داخل ہوتے ہی حیران ہوگئے کہ وہاں پر چند ہی خواتین شاپنگ کرنے آئی تھیں۔پہلے جب ہم یہاں آتے تھےتو خواتین کا اتنا زیادہ رش ہوتا تھا کہ وہ ایک دوسرے کو دھکا دے کر اپنے لیے راستہ بناتی تھیں۔ مارکیٹ میں کچھ دکانیں بند تھیں اور بعض پر لکھا ہوا تھا’ دکان برائے فروخت‘۔ اور جو کھلی بھی تھیں تو ان میں سامان کم پڑا تھا اور وہ بھی بہت پرانا۔

پیر، تیئس فروی: ’سکول کھل گئے‘

میں آج اٹھتے ہی بہت زیادہ خوش تھی کہ آج سکول جاؤں گی۔سکول گئی تو دیکھا کچھ لڑکیاں یونیفارم اور بعض گھر کے کپڑوں میں آئی ہوئی تھیں۔اسمبلی میں زیادہ تر لڑکیاں ایک دوسرے سے گلے مل رہی تھیں اور بہت زیادہ خوش دکھائی دے رہی تھیں۔

اسمبلی ختم ہونے کے بعد ہیڈ مسٹرس نے بتایا کہ تم لوگ پردے کا خصوصی خیال رکھا کرو اور برقعہ پہن کر آیا کرو کیونکہ طالبان نے لڑکیوں کے سکول جانے کی اجازت دینے میں یہ شرط بھی رکھی ہے کہ لڑکیاں پردے کا خیال رکھیں۔

ہماری کلاس میں صرف بارہ لڑکیاں آئی تھیں کیونکہ کچھ سوات سے نقل مکانی کر چکی ہیں اور کچھ ایسی ہیں جنہیں اپنے والدین خوف کی وجہ سے سکول جانے کی اجازت نہیں دے رہے ہیں۔ میری چار سہیلیاں پہلے ہی سوات چھوڑ کر جا چکی ہیں اور آج ایک اور نے بھی کہا کہ وہ لوگ بھی راولپنڈی منتقل ہو رہے ہیں۔ میں بہت خفا ہوئی اور ان سے کہا بھی کہ اب تو وہ رک جائیں کیونکہ امن معاہدہ ہوگیا ہے اور حالات بھی آہستہ آہستہ ٹھیک ہورہے ہیں مگر وہ کہہ رہی تھی کہ نہیں حالات کا کوئی بھروسہ نہیں۔

مجھے بہت دکھ ہوا کہ میری چار سہیلیاں پہلے ہی جاچکی ہیں اور صرف ایک رہ گئی تھی اب وہ بھی چھوڑ کر جا رہی ہے۔

بدھ، پچیس فروری: ’مت اٹھاؤ تاکہ مولانا فضل اللہ کا کلیجہ ٹھنڈا ہو سکے‘

امی بیمار ہیں اور ابو کسی میٹنگ کے سلسلے میں سوات سے باہر گئے ہوئے ہیں اس لیے صبح میں نے ہی ناشتہ تیار کیا اور پھر سکول گئی۔ آج ہم نے کلاس میں بہت زیادہ مستی کی ویسے کھیلے جیسے پہلے کھیلا کرتے تھے۔

آج کل ہیلی کاپٹر بھی زیادہ نہیں آتے اور ہم نے بھی فوج اور طالبان کے بارے میں زیادہ باتیں کرنا چھوڑ دی ہیں۔ شام کو امی، میری کزن اور میں برقعہ پہن کر بازار گئے۔ ایک زمانے میں مجھے برقعہ پہننے کا بہت شوق تھا لیکن اب اس سے تنگ آئی ہوئی ہوں کیونکہ مجھ سے اس میں چلا نہیں جاسکتا۔

سوات میں آجکل ایک بات مشہور ہوگئی ہے کہ ایک دن ایک عورت شٹل کاک برقعہ پہن کر کہیں جا رہی تھی کہ راستے میں گر پڑی۔ ایک شخص نے آگے بڑھ کر جب اسے اٹھانا چاہا تو عورت نے منع کرتے ہوئے کہا ’رہنے دو بھائی مت اٹھاؤ تاکہ مولانا فضل اللہ کا کلیجہ ٹھنڈا ہوجائے‘۔

ہم جب مارکیٹ میں اس دکان میں داخل ہوئے جس سے ہم اکثر شاپنگ کرتے ہیں تو دکاندار نے ہنستے ہوئے کہا کہ میں تو ڈر گیا کہ کہیں تم لوگ خود کش حملہ تو کرنے نہیں آئے ہو۔وہ ایسا اس لیے کہہ رہے تھے کہ اس پہلے ایک آدھ واقعہ ایسا ہوا بھی ہے کہ خود کش حملہ آور نے برقعہ پہن کر حملہ کیا ہے۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/02/090227_swat_diary_girl_8_zs.shtml

ف ایم کے ہوتے ہوئے امن نہیں آئے گا

’اے اللہ سوات میں امن لے آنا اگر نہیں آتا تو پھر امریکہ یا چین کو یہاں لے آنا‘
سوات میں طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی لگادی تھی مگر صوبائی حکومت اور کالعدم تحریکِ نفاذ شریعت محمدی کے درمیان ہونے والے ’امن معاہدے‘ کے بعد طالبان نے اپنا یہ فیصلہ صرف امتحانات کے انعقاد تک جزوی طور پر واپس لے لیا ہے۔مقامی طالبات کا کہنا ہے کہ وہ اب بھی غیر یقینی صورتحال سے گزر رہی ہیں۔
پردے کا خیال رکھو، برقعہ پہن کر آیا کرو
بی بی سی اردو ڈاٹ کام سوات سے تعلق رکھنے والی ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کر رہی ہے۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھ رہی ہیں۔ اس سلسلے کی نویں کڑی:

جمعہ ستائیس فروری: ’اپنے گاؤں کی یاد آرہی ہے‘
آج سکول گئی تو اپنی دو سہیلیوں کو دیکھ کر بے انتہا خوشی ہوئی۔ آپریشن کے دوران دونوں راولپنڈی چلی گئی تھیں۔ انہوں نے بتایا کہ راولپنڈی میں امن بھی تھا اور زندگی کی دیگر سہولیات بھی اچھی تھیں مگر ہم انتظار کررہے تھے کہ کب سوات میں امن آئے گا اور سکول کھلیں گے تاکہ ہم واپس چلے جائیں۔

آج ہماری ایک ٹیچر موٹر وے کے بارے میں سبق پڑھا رہی تھیں اور وہ مثال دینے کے لیے سوات کے چہار باغ کے علاقے کا نام بار بار لیتی رہیں۔ میں نے پوچھا میڈم آپ بار بار کیوں چہار باغ کی مثال دے رہی ہیں تو انہوں نے کہا کہ میں چہار باغ میں رہتی تھی وہاں گھر پر مارٹر گولے لگے تو ہم مینگورہ منتقل ہوگئے۔ اب اپنے چہار باغ کی بہت یاد آرہی ہے اس لیے میری زبان پر اس کا نام آجاتا ہے۔ ہمارے محلے سے بھی لوگوں نے نقل مکانی کی تھی اور آج ایک پڑوسی گھر واپس آگئے۔

پیر دو مارچ: ’دن کو مزدور اور رات کو طالب بن جاتا ہے‘
ہماری کلاس میں لڑکیوں کی تعداد اب رفتہ رفتہ بڑھ رہی ہے۔ آج ستائیس میں سے انیس لڑکیاں آئی ہوئی تھیں۔ نو مارچ سے امتحانات شروع ہو رہے ہیں اس لیے ہم زیادہ وقت پڑھنے میں گزارنے کی کوشش کرتے ہیں۔

آج خواتین کے ساتھ چینہ مارکیٹ گئی تھی اور وہاں میں نے خوب شاپنگ کی کیونکہ وہاں ایک دوکاندار اپنی دوکان ختم کر رہا ہے۔ وہ کم قیمت پر چیزیں بیچ رہا ہے۔ چینہ مارکیٹ میں زیادہ تر دوکانیں اب بند ہوگئی ہیں۔

آج کل مارٹر گولوں کی آوازیں بھی ختم ہوگئی ہیں لہٰذا رات کو اچھی طرح سے سو جاتے ہیں۔ سنا ہے کہ طالبان اب بھی اپنے علاقوں میں کارروائیاں کرتے ہیں۔ وہ بےگھر ہونے والے افراد کے لیے آنے والا امدادی سامان بھی لوٹ لیتے ہیں۔

میری ایک سہیلی نے کہا کہ اس کے بھائی نے اپنے ایک جاننے والے کو ایک رات طالبان کے ساتھ گاڑیوں کی تلاشی لیتے ہوئے دیکھا تو حیران ہوا۔ ان کے بھائی کا کہنا تھا کہ یہ لڑکا صبح کو مزدوری کرتا ہے اور رات کو طالبان کے ساتھ ہوتا ہے۔ اس نے کہا میں نے ان سے پوچھا کہ میں تو تمہیں جانتا ہوں تم تو طالب نہیں ہو پھر ایسا کیوں کررہے ہو۔ اس نے جواب دیا کہ صبح کو مزدوری کرکے کماتا ہوں اور رات کو طالبان کے ساتھ ہوتا ہوں تو اچھا خاصا خرچہ نکل آتا ہے اور گھر کے لیے کھانے پینے کی چیزیں بھی مل جاتی ہیں۔

منگل تین مارچ: ’امن معاہدہ دراصل جنگ کے درمیان کا وقفہ ہے‘
میرے چھوٹے بھائی کو سکول جانا پسند نہیں ہے۔ وہ صبح سکول جاتے وقت روتا ہے اور واپسی پر ہنستا ہے۔ لیکن آج روتے ہوئے واپس آیا تو امی نے رونے کی وجہ پوچھی۔ وہ کہنے لگا کہ مجھے سکول سے آتے وقت ڈر لگ رہا تھا۔ جب بھی کوئی شخص نظرآتا تو میں ڈر جاتا کہ کہیں وہ مجھے اغواء نہ کرلے۔

میرا یہ چھوٹا بھائی اکثر دعا کرتا ہے کہ ’اے اللہ سوات میں امن لے آنا اگر نہیں آتا تو پھر امریکہ یا چین کو یہاں لے آنا‘۔

سوات میں آج پھر طالبان اور فوج کے درمیان لڑائی ہوئی ہے۔ کچھ دنوں سے ایسے واقعات ہورہے ہیں۔ آج میں نے کئی دنوں کے بعد پہلی مرتبہ مارٹر گولوں کی آوازیں سنیں۔ لوگوں میں پھر امن معاہدے کے ٹوٹنے کا خوف پیدا ہوگیا ہے۔ بعض لوگ کہتے ہیں کہ ’دراصل امن معاہدہ مستقل نہیں بلکہ یہ جنگ کے درمیان کا وقفہ ہے‘۔

بدھ چار مارچ: ’طالبان ایف ایم بند ہوگا تو امن آئے گا‘
آج کلاس میں استانی نے پوچھا کہ تم میں سے کون کون طالبان کا ایف ایم چینل سنتا ہے تو زیادہ تر لڑکیوں نے کہا کہ اب سننا چھوڑ دیا ہے۔ لیکن کچھ لڑکیاں اب بھی سن رہی ہیں۔ لڑکیوں کا خیال تھا کہ جب تک ایف ایم چینل بند نہیں ہوتا تب تک امن نہیں آسکتا۔

طالبان کہتے ہیں کہ وہ ایف ایم چینل کو درسِ قرآن کے لیے استعمال کرتے ہیں لیکن کمانڈر خلیل ابتداء میں کچھ دیر کے لیے درس قرآن دینا شروع کردیتے ہیں مگر پھر آہستہ سے موضوع بدل کر اپنے مخالفین کو دھمکیاں دینا شروع کردیتے ہیں۔ جنگ، تشدد اور قتل کے سبھی اعلانات ایف ایم سے ہوتے ہیں۔

آج ہم جب ریسس کے دوران کلاس سے باہر نکلے تو فضاء میں ہیلی کاپٹر نظر آیا۔ جہاں ہمارا سکول واقع ہے وہاں پر ہیلی کاپٹر کی پرواز بہت نیچی ہوتی ہے۔ لڑکیوں نے فوجیوں کو آوازیں دیں اور وہ بھی جواب میں ہاتھ ہلاتے رہے۔ فوجی اب ہاتھ ہلاتے ہوئے تھکے ہوئے معلوم ہو رہے ہیں کیونکہ یہ سلسلہ گزشتہ دو سالوں سے جاری ہے۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/poll/story/2009/03/090306_swat_diary_9_rh.shtml

’جنت میں حوریں انتظار کر رہی ہیں‘

مینگورہ میں تباہ ہونے والے ایک سکول میں بچے ملبے پر بیٹھ کر پڑہ رہے ہیں

سوات میں طالبان نے پندرہ جنوری سے لڑکیوں کے سکول جانے پر پابندی لگادی تھی مگر صوبائی حکومت اور کالعدم تحریکِ نفاذ شریعت محمدی کے درمیان ہونے والے ’امن معاہدے‘ کے بعد طالبان نے اپنا یہ فیصلہ صرف امتحانات کے انعقاد تک جزوی طور پر واپس لے لیا ہے۔ مقامی طالبات کا کہنا ہے کہ وہ اب بھی غیر یقینی کی صورتحال سے گزر رہی ہیں۔

بی بی سی اردو ڈاٹ کام سوات سے تعلق رکھنے والی ساتویں جماعت کی ایک متاثرہ طالبہ کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کر رہی ہے۔ سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر وہ ’گل مکئی‘ کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھ رہی ہیں۔ اس سلسلے کی دسویں کڑی:

پیر، نو مارچ:’طالبان اب گاڑیوں کی تلاشی نہیں لیتے‘

امی نے بتایا کہ طالبان مسلح نظر آ رہے تھے لیکن وہ گاڑیوں کی تلاشی نہیں لے رہے تھے

آج سے ہمارے امتحانات شروع ہو رہے ہیں لہذا اٹھتے ہی بہت پریشان تھی۔ امی اور ابو ہمارے کسی رشتہ دار کی فاتحہ خوانی کے لیے گاؤں گئے ہوئے ہیں اس لیے آج میں نے خود ہی چھوٹے بھائیوں کے لیے ناشتہ تیار کیا۔

میرا سائنس کا پیپر بہت اچھا ہوا۔ دس سوالوں میں سے آٹھ کرنے تھے مگر مجھے دس کے دس یاد تھے۔ جب گھر واپس آئی تو امی ابو کو گھر میں پاکر بہت خوش ہوئی۔ امی نے بتایا کہ وہ طالبان کے زیر کنٹرول علاقے سے ہوکرگاؤں گئے تھے۔ وہاں طالبان مسلح نظر آ تو رہے تھے لیکن وہ پہلے کی طرح گاڑیوں کی تلاشی نہیں لے رہے تھے۔

منگل، دس مارچ: ’مولانا شاہ دوران گاؤں واپس آگئے‘

آج جب میں سکول سے واپس آرہی تھی تو میری ایک سہیلی نے مجھ سے کہا کہ سر اچھی طرح ڈھانپ کر جاؤں نہیں تو طالبان سزاد دے دیں گے۔ آج بھی مینگورہ کے قریب قمبر کے علاقے میں سکیورٹی فورسز پر فائرنگ ہوئی ہے۔
طالبان کے ایف ایم چینل پر تقریر کرنے والے مولانا شاہ دوران بھی آج اپنے گاؤں قمبر واپس آگئے ہیں۔ کہتے ہیں کہ وہاں کے طالبان نے ان کا استقبال کیا۔ طالبان نے اب بھی لوگوں سے کہا ہے کہ وہ نماز یں پڑھا کریں اور خواتین پردے کا خاص خیال رکھیں۔

بدھ، گیارہ مارچ: ’بہت عرصے بعد گانے سنے‘

سوات میں جہادی گانوں اور تقریروں کی کیسٹوں کا ایک سٹال

آج کا پیپر بھی اچھا ہوا اور خوش ہوں کہ کل چھٹی ہے۔آج میں نے اور دو چھوٹے بھائیوں نے چوزے خریدے مگر میرے چوزے کو سردی لگ گئی ہے اور بیمار ہوگیا۔ امی نے اس سے گرم کپڑے میں رکھ دیا ہے۔

آج بازار بھی گئی جہاں بہت زیادہ رش تھا۔ کہیں کہیں پر ٹریفک بھی جام تھی۔ پہلے رات ہوتے ہی بازار بند ہوجاتا لیکن اب رات دیر تک کھلا رہتا ہے۔

آج میں نے ریڈیو آن کیا تو حیرت ہوئی کہ ایک خاتون پروگرام کررہی تھی اور لوگ فون کر کے اپنی پسند کےگانے کی فرمائش کر رہے تھے۔ ابو نے بتایا کہ یہ حکومت کا چینل ہے۔ بہت عرصے بعد میں نے ریڈیو پر پشتو کے گانے سنے۔ دور دراز سے لوگ فون کرتے ہیں ایک لڑکے نے تو بلوچستان سے فون کیا۔

جمعرات، بارہ مارچ: ’جنت میں حوریں انیس کا انتظار کر رہی ہیں‘

میرا دو دنوں سے گلا خراب ہے لہذا ابو مجھے آج ایک ڈاکٹر کے پاس لے گئے۔ وہاں ویٹنگ روم میں دو خواتین بھی بیٹھی ہوئی تھیں اور دونوں کا تعلق قمبر کے علاقے سے تھا۔

ان میں سے ایک نے بتایا کہ ان کے علاقے میں اب بھی طالبان کا کنٹرول ہے۔ انہوں نے بعض لوگوں کو سزائیں بھی دی ہیں۔ خاتون نے اپنے محلے کے ایک لڑکے کا واقعہ بھی سنایا۔ انہوں نے کہا کہ ان کے محلے میں ایک لڑکا ہے جس کا نام انیس ہے۔

وہ طالبان کا ساتھی تھا۔ ایک دن اس کے طالبان ساتھی نے اسے بتایا کہ اس نے ایک خواب دیکھا ہے جس میں جنت کی حوروں نے اس سے کہا کہ ‘ہمیں انیس کا انتظار ہے‘۔

خاتون نے بتایا کہ یہ بات سن کر انیس بہت خوش ہوا اور اپنے والدین کے پاس گیا اور کہا کہ حوریں ان کا انتظار کر رہی ہیں اور وہ ‘خودکش حملہ‘ کر کے ‘شہید‘ ہونا چاہتا ہے۔ ماں باپ نے ان کو اجازت نہیں دی تو اس نے کہا کہ وہ افغانستان جا کر جہاد کرنا چاہتا ہے۔

خاتون کے بقول گھر والوں نے لڑکے کو اجازت نہیں دی مگر لڑکا گھر سے بھاگ گیااور کل ڈیڑھ سال بعد سوات کے طالبان نے ان کے گھر والوں کو بتایا کہ انیس سوات میں سکیورٹی فورسز پر خودکش حملے میں ہلاک ہوگیا ہے۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/2009/03/090313_swat_diary_part10_aw.shtml

Postscript: It was later revealed the the diary was written by Malala Yousafzai, 11, an honourable Pashtun girl who opposed Taliban’s restrictions on girls education.

Comments

comments

Latest Comments
  1. Khudi Ali
    -
  2. muralikrishna
    -
  3. vishnu kayar
    -
  4. Shaukat Maseeh
    -