Year of missing persons? – by Hasan Mujtaba


Two most powerful kidnappers in Pakistan

لاپتہ لوگوں کا سال

حسن مجتییٰ | 2011-01-19 ،16:32

اب تو امریکہ نے بھی پاکستان میں ایجنسیوں کے ہاتھوں سینکڑوں افراد کی گمشدگيوں پر تب تشویش کی ہے جب بلوچستان سے گمشدہ افراد کی لاشیں بر آمد ہونا شروع ہوئی ہیں۔

ہ وہ لوگ ہیں جن میں سے ایک سابق لاپتہ عبدالستار بھٹو کی اہلیہ کے بقول کہ ‘انہیں زمین کھا گئی کہ آسمان نگل گیا’۔

امریکی محکمۂ خارجہ کی کانگریس کو بھیجی گئی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ پاکستان میں پولیس اور انٹیلیجنس ایجینیسوں کے ہاتھوں گزشتہ ایک دہائی سے ہزاروں افراد بشمول بلوچستان کے قوم پرستوں اور عام شہریوں کے غائب کر دیے گئے ہیں۔

یہاں تک کہ پاکستان میں ان گمشدہ افراد میں بڑی تعداد میں عورتیں اور بچے تک شامل ہیں۔ مجھے ملیر کراچی، لاہور کے چڑیا گھر کے نزدیک اور چکلالہ راولپنڈی میں بیس ماہ تک قید رہ کر رہا ہو کر آنے والے ایک سابق لاپتہ نے بتایا تھا کہ ان عقوبت گھروں میں لاپتہ لوگوں کو رکھے جانے کا ایک بہت بڑا ‘نظام’ ہے۔ آنکھوں پر پٹی بندھے اس گمشدہ شخص نے اپنی بیس ماہ کی گمشدگی کے دوران شاذ و نادر ہی کبھی سورج کی روشنی دیکھی۔

یہ گمشدہ لوگ کراچی سے لے کر کوٹلی کشمیر تک سے ہیں۔ ان میں طالبان عسکریت پسند بھی ہیں، تو بلوچ علیحدگی پسند بھی، پر امن، روشن خیال اور سیکولر لوگ، بلوچ شہری بھی ہیں، تو سندھی قوم پرست بھی تو سابق

اور حالیہ فوجی بھی، تو صرف مذہبی لوگ بھی۔

ایسے بھی ہیں جو ایک دو اور تین بار بھی غائب کر دیے گئے ہیں۔ ایسے لوگوں میں سندھی قوم پرست آکاش ملاح بھی شامل ہیں جن کیلیے سندھ ہائی کورٹ میں متعلقہ پولیس نے لکھ کر دیا کہ انہیں آئی ایس آئی والے اٹھا کر لے گئے تھے۔ کوئی نماز پڑھنے گھر سے نکلا غائب کر دیا گیا تو کو‏ئی شیو کرواتے حجام کی دکان سے غائب۔ کوئی ایئرپورٹ پر اترتے غائـب، تو کوئی گھر میں سوتے ہوئے غائب۔ اڈیالہ جیل سے مشرف پر حملہ کرنے والے مبینہ حملہ آور مقدمے سے بری ہو کر نکلے ہی تھے کہ غائب کر دیے گئے۔

بلوچ قوم پرست کہتے ہیں کہ اب تک غائب ہو کر مردہ حالت میں برآمد ہونے والوں کی تعداد چالیس ہے۔

عافیہ صدیقی تو پاکستان کی بیٹی ہیں لیکن گمشدہ بلوچ لڑکی زرینہ مری نہیں!

سابق فوجی آمر جنرل پرویز مشرف نے آج تک پیارے پاکستان کو گمسشدگیوں میں کل کے چلی، ارجینٹینا اور ایلسلواڈور سے بھی آگے پہنچا دیا۔

گزشتہ دس برس سے دو ہزار دس تک ہر برس پاکستان میں گمشدگيوں کا سال رہا۔ کاش دو ہزار گیارہ ان کئی گمشدہ لوگوں کے گھر واپس آنے یا ظاہر کر دیے جانے کا سال ثابت ہو۔ بقول فیض:

جن کی آنکھوں کو رخ صبح کا یارا بھی نہیں
انکی راتوں میں کوئی صبح منور کر دے

Source: BBC Urdu


3 responses to “Year of missing persons? – by Hasan Mujtaba”

  1. SC declares 2011 as year of missing persons’ recovery

    ISLAMABA (SANA): Supreme Court of Pakistan has declared the Year 2011 as recovery of missing persons year.

    Three-member bench of SC headed by Justice Javed Iqbal and comprising Justice Tassadaq Hussain Jillani and Justice Raja Fayyaz Ahmed heard the case of missing person on Monday.

    The SC has sought reply from the government over the report of Judicial Commission on missing persons. During the hearing, Justice Javed Iqbal observed that 2011 would be the year of missing persons’ recovering, adding that kidnapers would have to go behind the bars.
    Justice Javed said that some people were missed due to the state and some relatives of the missing persons do not want to report about the missing of their relatives, adding that family members of the missing persons are worried about their loved ones that where they had gone. Justice Raja Fayyaz in his remarked said that the relatives of missing persons do not appear in courts just because of fear.

    Additional Attorney General, KK Agha told the SC that the Judicial Commission has recovered 134 missing people so far, adding that the contents of report were classified and it should not be made public because he has to take instructions from the government in this regard.

    Justice Javed observed that there should be tribunal for the recovery of missing persons adding that commission also has recommended that there should be a body which keep the check on the missing persons cases. He said the Commission’s recommendation of the legislation in this respect should be given serious consideration.

    Justice Javed enquired that what action had been taken by the Government against those who had been declare the responsible for missing the people in commission report. Court observed that the government has to inform the court that which strategy has been adopted by the government for action in this regard. Justice Javed Iqbal said that the hearing of the missing persons case would be conducted three days in a week.

    Hashmat Habib Advocate informed the court that some missing persons were kidnapped by the state agencies whereas Chairperson Defence of Human Rights Amna Masood Janjua contended that SC recovered 334 persons and commission also recovered the 134 missing persons but problem is still there.

    Seeking report from the government, the court adjourned the further hearing of the case until next Monday.

    http://www.sananews.net/english/2011/01/11/sc-declares-2011-as-year-of-missing-persons%E2%80%99-recovery/

  2. Bai Jaan yah sub jo la patha loog hai . Inn sub ka naam
    ajenceu per laga deya jata hai. Mager sub haqiqut nahi huta hai in ka talaq maheqmay ko bednaam kernay aur ajenceiun per perceshore dalnay kay laya kya jata hai. Iak sawal yah hai kya tum amreca ki bath per yaqeen kerthay ho kya wo app kay harhwa hai. baki jess tazi say dushman mulak pakistan ko turnay kay laya paygarath looguno ko hareid rahi hai pakistani ajenceunu ko bahth tazee say kaam kerna ho ga. Wathen ferosh loggoo ko kathem kerna ho ga bess yah hi hall hai. God bless our country and nation .