تکفیر ازم سندھ کے لئے حقیقی خطرہ اور سندھ کو کالونی بنانے کے لئے استعمال کیا جارہا ہے ۔ صوفی حضور بخش مرکزی صدر جئے سندھ محاذ سہتو گروپ

 

 

صوفی حضور بخش جھوک شریف سندھ میں مقیم ہیں۔وہ جئے سندھ محاذ کے قائم مقام صدر ہیں۔اور سندھ ہاری کمیٹی کے سابق مرکزی جنرل سیکرٹری بھی رہے ہیں۔وہ سندھ کے معروف قوم پرست رہنماء قاسم پتھر کے شاگردوں میں سے ہیں اور انھوں نے سندھ کے انقلابی ، باغی اور پہلے سوشلسٹ شاہ عنائت اور ان کی تحریک پہ دو کتابیں بھی لکھی ہیں۔ہم نے (عامر حسینی اور کامریڈ رشید آزاد ) نے جھوک شریف سندھ میں ان کی رہائش گاہ پہ ان سے ملاقات کی اور اس دوران ان سے گفتگو بھی کی۔ان سے دو سوال خاص طور پہ پوچھے گئے۔

ایک سوال تو یہ تھا کہ آج کل سندھ میں ایسے مڈل کلاس پس منظر کے دانشور ، بلاگر ، سوشل ميڈیا ایکٹوسٹ سامنے آئے ہيں جو شاہ عنائت کی فکر میں سے طبقاتی عنصر کی نفی کرتے ہیں اور ان کی مزاحمت اور لڑائی کو چھپاتے ہیں ، جبکہ دوسرا سوال سندھ کے اندر دیوبندی اور سلفی جہادی و تکفیری قوتوں جیسے سپاہ صحابہ پاکستان(اہلسنت والجماعت ) اور جماعت دعوہ جیسی قوتوں کا بڑھتا ہوا اثر ورسوخ ہے کے بارے میں تھا۔صوفی حضور بخش کا کہنا تھا کہ یہ سب ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ہورہا ہے۔سندھ میں امن پسند قوتیں اور جو استحصال و قومی جبر کے خلاف ہیں اور طبقاتی استحصال کو بے نقاب کرتی ہیں کے لئے جگہ تنگ کی جارہی ہے

جبکہ تکفیری اور نام نہاد جہادی ، سعودی فنڈنگ سے کام کرنے والی قوتوں کو پوری ریاستی سرپرستی حاصل ہے۔انہوں نے کہا کہ سندھ کے اندر بھی شیعہ ، صوفی سنّی ، ہندؤ ، احمدیوں ، کرسچن کے لئے جگہ تنگ کی جارہی ہے اور سندھ کے حقوق اور یہاں کے وسائل کی لوٹ مار کرنے والوں کے خلاف تحریک کو ریاستی جبر کا سامنا ہے

Sufi Hazoor Bakhsh lives in Jhok Sharif of district Sajawal of Sindh. He is writer,author of two books on renowned Socialist Sufi Martyred Shah Iynayat. He is Socialist and follower of some teaching of G.M.Syed a great nationalist Sufi leader of Sindh. He remained central General Secretary of Sindh Hari Committee and now he is acting President of Jiye Sindh Muhaz –Sehtu Group.

Comrade Rasheed Azad and me(Aamir Hussaini) made visit of Jhok Sharif Sindh and we met Sufi Hazoor Bakhsh at his residence.We asked him about those Sindhi having middle class background who deny role of Sufi Iynayat and his movement against big feudal class and against Mughal dynasty.They says that movement of that great Sufi was not class based and this movement has no links with socialist ideas. They stress just on some metaphysical aspects of this movement.Sufi Hazoor Bakhsh strongly condemned such intellectuals and called them agents of ruling classes and supporters of staus quo and these are pro imperialist forces.

Sufi Hazoor Bakhsh admitted that Saudi funded Deobandism and Salafism is growing and State is allowing so called Jihadists and Takfirees to roam and work here in Sindh. He pointed out that Takfiree Deobandi organizations like banned ASWJ , Salafi Jihadist and terrorist organizations Like JuD are setting up their network all over the Sindh and in the name of social and charity work they are spreading radical and Takfiree Ideas and destroying peaceful and diversified cultural and religious environment and they are being patronized by powerful Saudi lobbies present in state institutions even in our seculae liberal parties.

He said that if you resist against such organizations and raise your voice against destruction of Sindhi Culture and plundering of sources of Sindh then you are picked up and made missing or your mutilated bullet ridden body will be find.

“Takfirism is real danger for Sindh and this is great weapon is being used to colonize Sindh.” , Said Sufi Hazoor Bakhsh.

Comments

comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


*