جنوبی پنجاب میں بہاولپور، راجن پور اور دیگر علاقوں میں سعودی ریالوں کی بھرمار، دیوبندی اور اہلحدیث مدرسوں اور مسجدوں میں عام اہل سنت مسلمانوں کو دیوبندی اور وہابی خوارج میں تبدیل کیا جا رہا ہے

13256520_1303705196326314_2600576673265762709_n

رحیم داد (فرضی نام) ان درجنوں مقامی نوجوانوں میں سے ہیں جو سنہ 2007 میں ’غازی فورس‘ کے رکن بنے تھے۔

یہ تنظیم اسلام آباد میں لال مسجد آپریشن میں اسی مسجد کے نائب خطیب عبدالرشید غازی کی ہلاکت کے بعد ان کے نام پر تشکیل دی گئی تھی اور بعد ازاں اسے کالعدم بھی قرار دے دیا گیا تھا۔

رحیم داد کا کہنا ہے کہ وہ اس تنظیم میں کسی دینی جذبے کے تحت نہیں بلکہ اپنے خاندان کا مالی سہارا بننے کے لیے شامل ہوئے تھے۔

کچھ عرصہ قبل وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے جنوبی وزیرستان سے اپنے آبائی علاقے میں واپس آنے کے بعد بی بی سی کو اپنی کہانی سناتے ہوئے رحیم داد کا کہنا تھا کہ عبدالرشید غازی کی ہلاکت کے بعد اُن کے نام پر غازی فورس بنانے کے اعلانات علاقے میں لال مسجد کے زیر انتظام مدارس میں اعلانات کیے گئے تھے۔

انھوں نے بتایا کہ ان مدارس کے ذمہ داران مختلف علاقوں میں جا کر وہاں کے نوجوانوں اور اُن کے والدین کو اس بات پر آمادہ کرتے رہے کہ وہ اس فورس میں شامل ہو جائیں اور اس سے ’ان کی دنیا اور آخرت بہتر ہو جائے گی۔


رحیم داد کے مطابق اُن سمیت اس فورس میں شامل ہونے والے افراد کی اکثریت مذہبی رجحان نہیں رکھتی تھی اور غالب امکان یہی ہے کہ ان کی طرح مالی آسودگی کی امید ہی اس کا محرک بنی ہوگی۔

اُنھوں نے بتایا کہ تنظیم کے لوگوں کی طرف سے اس فورس میں شمولیت پر مالی معاونت کی پیشکش پر جب انھوں نے اپنے گھر کے حالات سامنے رکھے تو یہ فیصلہ ان کے لیے زیادہ مشکل نہ رہا۔

رحیم داد کا کہنا تھا کہ اس فورس میں شمولیت کے بعد پانچ برس سے زیادہ کے عرصے میں انھوں نے نہ صرف غازی فورس کی ترویج کے لیے کام کیا بلکہ مختلف نوعیت کا اسلحہ چلانے کی تربیت اور کمانڈو تربیت بھی حاصل کی۔

اُن کے مطابق اس عرصے میں اُن کے گھر کی کفالت اس فورس کے کرتا دھرتاؤں کے ذمے تھی اور اسی دوران اُن کی دو بہنوں کی شادی بھی غازی فورس کے ذمہ داران نے کی۔

اس سوال پر کہ انھوں نے غازی فورس کب اور کیوں چھوڑی، رحیم داد کا کہنا تھا کہ جب قبائلی علاقے میں سکیورٹی فورسز کی کارروائیاں تیز ہوئیں اور ان کے ساتھیوں نے افغانستان کا رخ کیا تو وہ واپس اپنے گھر آ گئے۔

کالعدم تنظیم میں شامل علاقے کے دیگر افراد کے بارے میں رحیم داد کا کہنا تھا کہ ان میں سے پانچ افراد کے بارے میں معلوم ہوا تھا کہ وہ پاک افغان سرحد کے قریب سکیورٹی فورسز کے ساتھ جھڑپ میں مارے گئے تھے۔

پاکستان کے خفیہ اداروں کا بھی کہنا ہے کہ شمالی اور جنوبی وزیرستان میں سکیورٹی فورسز کے شدت پسندوں کے خلاف آپریشن کے بعد غازی فورس سے تعلق رکھنے والے شدت پسندوں کی ایک قابل ذکر تعداد افغانستان کے علاقوں میں روپوش ہوئی ہے۔
خفیہ اداروں کے مطابق روجھان مزاری میں بھی اس تنظیم کے ارکان موجود ہیں

لال مسجد کے سابق خطیب کا کہنا تھا کہ اُن کے آبائی علاقے میں 30 مدارس ہیں جہاں 700 کے قریب بچے زیر تعلیم ہیں اور اس علاقے میں ایک بھی پرائمری سکول موجود نہیں ہے۔

Source:

http://www.bbc.com/urdu/pakistan/2016/05/160519_south_punjab_special_ghazi_force_zs

Comments

comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


*