خرم زکی کا قتل : نیشنل ایکشن پلان کا امتحان

13151817_117227742021624_4629844145114738676_n

خرم زکی ایک معروف سماجی کارکن اور پاکستان میں بڑھتی ہوئی انتہاپسندی کے خلاف ایک مضبوط اور جرات مند آواز تھے۔ جنہیں ۷ مئی ۲۰۱۶ کو کراچی میں قتل کر دیا گیا۔  ان کا جرم یہی تھا کہ انہوں نے  مذہب کے نام پر  معاشرے میں منافرت پھیلانے اور قتل و غارت گری کو عام کرنے والے انتہاپسندوں اور ان کو فکری غذا اور عملی سہولت فراہم کرنے والے ریاستی و غیر ریاستی عناصر  کو چھپ کر نہیں بلکہ آگے بڑھ کر للکارا۔ سوشل میڈیا  سمیت مختلف ذرائع سے انتہاپسندی خلاف کھل کر آواز اٹھائی۔ قانون کی بالا دستی اور امن و سلامتی کی صورت حال کی بہتری کے لیے   سماجی سطح پر بھرپور مہم چلائی اور امن و سلامتی کے  لیے لاحق خطرات کے  ان  پہلؤوں کو اجاگر کیا جنہیں ریاست  مسلسل نظر انداز کرتی  آئی ہے۔

ان کے بعض خیالات سے اختلاف ممکن ہے لیکن اس بات سے انکار ممکن نہیں کہ خرم زکی پاکستان  کی وہ  دلیر آواز تھے جنہوں نے  کسی قسم کی مصلحت اور منافقت  کا لبادہ اوڑھنے یا انتہاپسندوں کے خوف سے خاموش رہنے کے بجائے شدت پسندوں کا آگے بڑھ کر مقابلہ کیا۔ انہوں نے کراچی، اسلام آباد اور دیگر شہروں میں موجود ان عناصر کے  بے نقاب کرنے اور ان انتہاپسندوں کے خلاف حکومت وقت کی مداہنت اور بزدلانہ پالیسیوں کو بھی طشت از بام کر دیا۔

یہ بات  پاکستان میں امن و سلامتی کی صورت حال اور حکومتی و عسکری اداروں کے دعؤوں کی قلعی کھولنے کے لیے کافی ہے کہ  ہر وہ آواز جو انتہاپسندوں کے لیے کھٹکتی ہے  اسے  گولی  کے زور پر خاموش کر دی جاتی ہے۔ جبکہ دہشت گردوں نے ریاستی اداروں اور حکومتی حلقوں میں  اتنے افراد  کی ذہنی تربیت کر دی ہے جو  حکومت اور  ریاست کے اداروں کو ان دہشت گرد عناصر کے خلاف   ٹھوس اقدامات کرنے  سے روکنے کے لیے کافی  ہو جاتے ہیں ۔

حالیہ ہفتوں میں    پشاور، ڈیرہ اسماعیل خان اور کراچی میں  ایک ہی مکتب فکر سے تعلق رکھنے والے  اساتذہ، وکلا اور سماجی کارکنوں  کا قتل پھر سے فرقہ وارانہ کشیدگی اور قتل و غارت کو بڑھانے کی ایک منظم کوشش نظر آتی ہے۔ اگر نیشنل ایکشن پلان کے ذریعے  حکومت ایسے منظم نیٹ ورک کو بے نقاب کر کے   ملوث عناصر کو کیفر کردار تک نہیں پہنچاتی تو ایک طرف نیشنل ایکشن پلان کا  ہی جنازہ نکلے گا تو  دوسری طرف  وطن عزیز ایک بار پھر بے گناہ لوگوں کے خون سے رنگین ہوگا جس کا براہ راست ذمہ دار حکومت اور ریاستی ادارے ہی ٹھہریں گے۔

Source:

http://www.dunyapakistan.com/81132/%D8%AE%D8%B1%D9%85-%D8%B2%DA%A9%DB%8C-%DA%A9%D8%A7-%D9%82%D8%AA%D9%84-%D9%86%DB%8C%D8%B4%D9%86%D9%84-%D8%A7%DB%8C%DA%A9%D8%B4%D9%86-%D9%BE%D9%84%D8%A7%D9%86-%DA%A9%D8%A7-%D8%A7%D9%85%D8%AA%D8%AD/#.Vy9YE0ZbTIW

Comments

comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


*