Imran’s stand on the Taliban – by Dr Arif Alvi


“We believe in a Pakistan envisioned by Jinnah in his speech of Aug 11, 1947, and an Islam as understood by Iqbal in his well enunciated Reconstruction of Religious Thought in Islam. Pakistan should be a non-theocratic country, though steeped in its Muslim tradition of humanity, emancipation, equal opportunities, welfare and freedom for all to practice their respective faiths.” Very impressive words. Here is the complete article written by Dr Arif Alvi, secretary-general of the Pakistan Tehreek-e-Insaf.

The terror situation in Pakistan is getting worse every year. If the number of killings and suicide bombings are any indicator, statements by many politicians and by government functionaries that the terrorism is the terrorists’ last stand is based more on optimism than reality. Mr Imran Khan offered to negotiate peace much before the Americans started to talk to the Taliban in Afghanistan, but our lobby supporting the ”War-on-Terror” accused him of being a Taliban sympathiser.

The Pakistan Tehrik-e-Insaf is not a supporter of the Taliban. Far from it. We condemn the violence perpetrated by the Tehrik-e-Taliban or any other group against innocent people. The PTI condemns those who murder and slaughter people. However, we believe that the Taliban label also encompasses those who are reacting to the US presence in Afghanistan. They fight the army and target the civilian population because of the US presence in Pakistan. What are referred to as Taliban also include fundamentalists who believe that Sharia should be imposed, even against the wishes of the people, because of disillusionment with the present system of justice in Pakistan. Meanwhile, many who suffered the war’s collateral damage are out for revenge. This is not to mention “local” and “outside” agencies (the latter including those sponsored by India), and criminals belonging to land and drug mafias who want to take advantage of the strife.

The PTI and Imran Khan have advocated efforts to understand the problem, not support to the Taliban. We equally oppose this “War on Terror,” which is not a primary solution. When the army, prompted by foreign interests, calls the shots in an area infested by terrorists and in a situation with political-religious elements to it, its action will always lead to heavy-handed treatment of civilians and killing of innocents. This, in turn, increases hatred, ethnic polarisation and overall worsening of the situation. The army, which bears the brunt, has lost countless brave soldiers, and innocent civilians have been killed, in the so-called Taliban areas and throughout Pakistan.

The civil government is not calling the shots because it is under US-Pentagon pressure, from foreign officials in remote lands running a “joystick war.” Temporary gaps in this battle lull us into thinking that things are getting better. Justifications for the war will become untenable in a few years, but by that time we will have caused enormous damage to the Pakistan polity. A war on terror presumes tremendous collateral damage.

Far from justifying terror and offering excuses for it, the PTI and Imran Khan merely emphasise its multi-factor origin. We continue to be in a time warp of our own although, looking for solutions, even our US masters have started to identify the differences among the Taliban. Our policies and our elite opinion are just delayed echoes of Washington. The PTI believes that once we understand the reasons for the malady, we will come up with viable treatments for it, before the disease becomes terminal.

Somebody has to talk to what are labelled as Taliban and seek out their grievances. There are thousands of Taliban prisoners in Pakistan. The media should reach them and find for us the root causes of their frustration. We have adopted in our discourse about the problem the “Bushism” that they are simply against our “freedoms and liberties.” The elite in Pakistan believe that the Taliban have an extreme Sharia which they want to impose on us. This may be true of some groups, but I am also sure that if the media is allowed to hear them out and then inform us of the point of views of even the arrested criminals, we will be closer to understanding the reason for the phenomenon. If we choose to see only an extremist face, then the sight can only prompt extreme solutions.

A Rand Corporation study published in 2007, which had surveyed all terrorist situations from 1968 to 2006, concluded that military force has rarely been the primary reason for the defeat of terrorist groups. The phenomenon can only be handled through a range of policy instruments, which include negotiations. Army action has glaringly failed in Iraq and Afghanistan, not to mention Palestine the original “War on Terror.”

Pakistan is in trouble on too many fronts to be able to bear the colossal cost in human, political and financial terms. Like all Muslims since 9/11, Musharraf, while condemning terror, wanted to focus world attention on the causes of terror. Tragically the same argument was promptly forgotten when we ourselves were hit, becoming the victims of this senseless conflict too.

Let us not take dictates, because foreign dictation involves our losing our own perspective. Terror has no doubt also become our problem, but with reasons that remain beyond our borders. We should use our own medicine for this disease. Instead we are forced into entering the vicious cycle of terror begetting terror.

Talks and efforts for understanding do not exclude army action. But today it is more stick and little carrot. The PTI and Khan only advocate more carrot and less stick if we are to find a real solution. In any case, we will start talking sooner rather than later, since our masters have already begun to change course. They are no longer reluctant to commit the ”heresy” of grading the Taliban into different groups, the ultimate result of which will be talking to the enemy.

Let us likewise be open to possible solutions for which we may need a paradigm shift and some lateral thinking: in the beginning no one has a clear solution, ourselves included. It would be a long path to peace.

We believe in a Pakistan envisioned by Jinnah in his speech of Aug 11, 1947, and an Islam as understood by Iqbal in his well enunciated Reconstruction of Religious Thought in Islam. Pakistan should be a non-theocratic country, though steeped in its Muslim tradition of humanity, emancipation, equal opportunities, welfare and freedom for all to practice their respective faiths.

Email: arifalvi@ cyber.net.pk

Source: The News, 5 Apr 2010


6 responses to “Imran’s stand on the Taliban – by Dr Arif Alvi”

  1. Yes PTI is not the supporter of Taliban.

    Mr Khan said this after visiting Punjab University’s Professor Iftikhar Baloch on Sunday, who was allegedly thrashed by Islami Jamiat Talaba (IJT) activists, last week.
    He said such violence was being done under the very nose of Prime Minister Yousaf Raza Gilani and Chief Minister Shahbaz Sharif but they were unmoved. He alleged the IJT, a student wing of the Jamaat-i- Islami, was a terrorist group creating unrest in the otherwise peaceful atmosphere of the Punjab University. PU episode Imran holds PM, CM responsible By Our Staff Reporter Monday, 05 Apr, 2010 http://www.dawn.com/wps/wcm/connect/dawn-content-library/dawn/the-newspaper/local/lahore/pu-episode-imran-holds-pm,-cm-responsible-540

  2. I am amazed at the confusion of critcalppp aka letusbuildpakistan.
    Imran was never taliban’s sympathiser or supporter.He is just great.My vote for him and his party.He just needs to put more efforts.

  3. The problem is a simple one. If TTP wants something, lay down the weapons and start talking like a civilized people, or, be ready to be taken on.

  4. @tahir Perhaps it is Imran Khan himself, not criticalppp, who is confused. Read what Imran Khan’s key advisor (and promoter in media) is saying about him:

    http://www.jang.com.pk/jang/apr2010-daily/06-04-2010/col4.htm

    اپنی آنکھ کا شہتیر…ناتمام…ہارون الرشید

    سید ابو الاعلیٰ مودودی نے کہا تھا، جیسا دودھ ویسا مکھن۔ اور اللہ کے آخری رسول کا فرمان یہ ہے: تمہارے اعمال ہی تمہارے عمّال ہیں۔ کیا ہم ہمیشہ حکومتو ں کے در پے ہی رہیں گے اور معاشرے کی اصلاح کے لئے کبھی فکرمند نہ ہوں گے۔ ہمیشہ دوسروں کی آنکھ کاتنکا تاکاکریں گے، اپنی آنکھ کا شہتیر کبھی نہیں؟

    عمران خان اب اچانک کیوں برسر احتجاج ہیں کہ اسلامی جمعیت طلبہ نے پنجاب یونیورسٹی کو یرغمال بنا لیا۔ وزیراعلیٰ شہباز شریف اور وزیراعظم یوسف رضا گیلانی سے ان کا مطالبہ ہے کہ وہ یونیورسٹی میں امن قائم کریں۔ لاہور میں وہ قاتلانہ حملے کے شکار پروفیسر افتخار بلوچ کی تیمارداری کرنے گئے اور انہوں نے یہ کہا: صوبائی اور مرکزی حکومتیں محترم استاد پرحملے کی ذمہ دار ہیں۔جی نہیں، نہ صرف حکومت ہی ذمہ دار نہیں اور تنہا وہی مداوا نہیں کرسکتی۔ دوسروں کے علاوہ خود عمران خان بھی قصور وارہیں اور ان کی ذاتی ذمہ داری ہے کہ وہ یہ سنگین زخم مندمل کرنے میں مدد دیں ، بتدریج جو ناسور کی طرح رسنے لگا ہے۔ چھ ماہ قبل عمران خان نے اسی یونیورسٹی کے فیصل ہال میں، تالیوں کی گونج میں اعلان کیا تھا کہ انہوں نے ڈیڑھ برس پہلے خود پر حملہ کرنے والوں کو معاف کردیا ہے۔ پہلی بات تو یہ ہے کہ عمران خان سے معافی مانگی ہی کس نے تھی کہ وہ عالی ظرفی کا مظاہرہ کرنے کے لئے بے تاب ہوگئے۔ ثانیاً یہ کہ اپنے ساتھ کی جانی والی زیادتی وہ بھلا سکتے تھے لیکن دوسروں پر روا رکھے جانے والے مظالم؟ عام معافی کا اعلان کرنے کاحق انہیں کس نے دیا تھا؟ہم مفروضے قائم کرتے ہیں، مصلحتیں اختیارکرلیتے ہیں، خود کو دھوکہ دینے کی روش اور اس ذہنی فضا میں فیصلے کرنے کے بعد کامیابی کی تمنا پاتے ہیں۔ بہت سی صورتوں میں خود فریبی محض ایک وقتی فیصلہ نہیں ہوتا بلکہ ایک انداز ِفکر، جس کا ہم شکار ہو جاتے ہیں، خود کو، اپنی پوری زندگی کو ایک ناقص طرز ِ احساس کے سپرد کر ڈالتے ہیں اور جب ناکامی یا حادثے سے دوچار ہوتے ہیں تو قربانی کا کوئی نہ کوئی بکرا تلاش کرلیتے ہیں… اکثر حکمران کہ بیشتر ناقص رہے ہیں اور انہیں موردِ الزام ٹھہرانا آسان ہوتاہے۔ پروفیسر افتخار بلوچ پرحملے کی ذمہ داری میں کپتان برابر کے شریک ہیں اوراپنے حصے کا بوجھ انہیں خود اُٹھانا چاہئے۔

    ”آبِ گم“ اس نادر تصنیف میں، عصر رواں کے عظیم نثرنگار مشتاق احمد یوسفی نے، کسی کا ایک جملہ نقل کیاہے: آپ موت اور سورج کو بہت دیر نہیں دیکھ سکتے۔ کچھ اور چیزیں بھی ہیں، دیکھنا تو کیا، جن کے بارے میں بہت دیر تک سوچنا بھی اذیت ناک ہوتا ہے۔ ان میں سے ایک شاگرد کے ہاتھوں استاد کی توہین ہے؛ چہ جائیکہ وہ ایک گروہ بنالیں، اپنے معنوی باپ کو منصوبہ بندی سے ذہنی اور جسمانی اذیت دیں، مبینہ طور پر مار ڈالنے کی کوشش کریں اور اس سے بھی زیادہ کہ شرمندہ ہونے سے بھی انکار کردیں۔ تاویل فرمائیں، دلائل ارشاد کریں اورفریاد کرنے والوں کو جھوٹا ثابت کرنے کی کوشش۔

    کسی اور کو نہیں، عمران خان نے خود اس ناچیز کو بتایا تھا کہ پنجاب یونیورسٹی میں اسلامی جمعیت طلبہ کے کارکن تحریک ِ انصاف کے حامی طلبہ کو قتل کی دھمکیاں دیتے ہیں۔ ان کی ماؤں اورباپوں کو فون کرتے ہیں کہ اپنے فرزند کو روکو، ورنہ بھگتے گا۔ اس کے بعد کپتان کو کیا وہ اعلان زیبا تھا، جو انہوں نے کیا؟ جن ماؤں کے دل رنج و غم سے بھرے رہے، جو بے خواب راتوں اور اندیشوں سے بھرے دنوں کے ساتھ خوف کی زندگی گزارتی رہیں،کیا کپتان نے ان سے پوچھ لیا تھا کہ اپنے طرز ِ عمل پر مصر بلکہ فخر کرنے والوں کو معاف کردیا جائے۔ کس طرح یہ مفروضہ انہوں نے قائم کیا کہ ایسا کر گزرنے سے، وہ اپنی اصلاح کرلیں گے؟ 1970 میں جب حافظ محمد ادریس اوران کے ساتھیوں نے وائس چانسلر علامہ علاؤ الدین صدیقی کے گھر پر یلغار کی تو سید ابو الاعلیٰ مودودی نے ایک اخباری بیان جاری کیا: ”ان لوگوں نے میری عمر بھر کی کمائی برباد کردی“ لیکن کپتان نے برعکس طرز ِ عمل اختیار کیا اور کسی ادنیٰ جواز کے بغیر

    ہماری مصلحتیں ہیں، وہم ہیں اور بعض چیزوں کوہم نے مقدس سمجھ لیا ہے، خاص طور پر مذہب کا نام لینے والوں کے بارے میں اللہ کی وحدانیت، قرآن کریم اور رسول اللہ کی عظمت کے نعرے لگانے والوں کے باب میں۔ سادہ سی بات یہ ہے کہ خطاکار کو سزا ملنی چاہئے خواہ زندگی کے دوسرے پہلوؤں میں اجلا ہو۔ اس نے اپنے ہاتھوں میں کیسا ہی مقدس پرچم تھام رکھا ہو۔ اگر وہ واقعی خطاکار ہے اور فیصلہ کرنے والے اگر فیصلہ کردیں۔ جب خود قاضی حسین احمد اور امیر العظیم نے ان لوگوں کو مجرم ٹھہرایا تھا تو ان کے خلاف کارروائی ہونی چاہئے تھی، اتنی ہی جتنا کہ ان کا قصور تھا اور ایک قابل اعتبار ادارے کے ذریعے لیکن کوڑا کرکٹ قالین کے نیچے دھکیل دیا گیا… اب ”ہور چوپو

    عمران خان نے بات کو بھلا دینے کی کوشش کی اور یہ غالباً اسلئے بھی کہ خود ان کے خاندان میں ایسے لوگ تھے جو جماعت اسلامی اور اسلامی جمعیت طلبہ سے حسن ظن رکھتے تھے۔ رکھتے، ضرور رکھتے لیکن جب کوئی تنازع اٹھتا ہے تو ہم اسی کے سیاق و سباق میں اسے دیکھتے ہیں۔ کسی کے نظریات اور عقیدے سے کیا تعلق ؟ اگر مدینہ منورہ کاکوئی پاک باز مسلمان، کسی بیگناہ یہودی کو قتل کر ڈالتا تو کیا وہ سزا سے بچ جاتا؟ ہم سب جانتے ہیں کہ ہرگز نہیں لیکن عملاً ہمارا رویہ مختلف ہے۔اسلئے کے اصول سے زیادہ ہمیں اپنی پسند اور ناپسند عزیز ہے۔ جزا و سزاپر اعلیٰ ترین اخلاقی اصولوں پر استوار قوانین نہیں بلکہ اپنے تعصبات ہمارے فیصلوں کی بنیاد بنتے ہیں۔ حکومتوں پر ہمیشہ ہم برہم رہتے ہیں اور انہیں لتاڑنے میں ہمیں لطف محسوس ہوتا ہے کہ ہم انہیں اپنی زندگیوں کی ردا میں لگے زخموں کے ذمہ دار سمجھتے ہیں۔ حکومتیں ظالم ہیں، بداطوار ہیں اور بعض اوقات تو سفاک بھی۔ ان سے لڑنا چاہئے اور جب ضروری اور ممکن ہو تو انہیں ہٹادینا چاہئے لیکن کیادوسروں کی کوئی ذمہ داری نہیں؟ ہم اپنے جرائم ان کے کھاتے میں کیسے ڈال سکتے ہیں۔

    پنجاب یونیورسٹی میں جو کچھ برسوں اور عشروں سے برپا ہے، ظاہر ہے کہ اسلامی جمعیت طلبہ تنہا اس کی ذمہ دار نہیں، دوسرے بھی ہیں، حکومتیں بھی، حد سے زیادہ مصلحت پسند اساتذہ بھی، جن میں سے بعض جمعیت کے ذریعے مقرر ہوئے اوربعض مفادات کے لئے ان سے رابطہ رکھتے ہیں۔ جمعیت کے انتہاپسند نظریاتی مخالف بھی جو ان چیزوں کے لئے بھی طلبہ تنظیم کو ذمہ دارٹھہراتے ہیں، جن کی یہ مرتکب نہیں اور جو اس کے بارے میں عدل کے نہیں بلکہ انتقام کے آرزو مند ہیں۔ عمران خان اوردوسرے لیڈروں کو کس نے روکا ہے کہ وہ اسباب کا تعین کریں اور مسئلے کا جامع حل تجویز کرنے کی کوشش بھی۔ یہ مگر آشکار ہے کہ جمعیت نے جامعہ پر قبضہ جما رکھاہے اوراسے جماعت اسلامی کی تائید حاصل ہے۔ خبط عظمت اور زعم تقویٰ کے مارے یہ لوگ، جنہیں اسلام اور آئین نے ہرگز کوئی اختیار نہیں بخشا، نہ صرف اپنی ترجیحات کے مطابق مقدس تعلیمی ادارے کو چلانے کے خواہشمند ہیں بلکہ ذاتی زندگیوں میں مداخلت کے مرتکب بھی۔ دلیل نہیں، وہ طاقت پر انحصار کرتے ہیں۔ ان کا مغالطہ یہ ہے اور اکثر مذہبی لوگ اس مغالطے کاشکار ہوتے ہیں کہ چونکہ وہ برحق ہیں ؛ لہٰذا دوسروں کو ان کا مطیع ہونا چاہئے۔ وہ قرآن ، حدیث اور سیرت کا طالب علم ہونے کادعویٰ کرتے ہیں مگر نہیں ہوتے، ورنہ وہ میثاق مدینہ پرغور کرتے، ورنہ انہیں ادراک ہوتا کہ غیرمسلم شہری کے حقوق مسلمان کے برابر نہیں بلکہ اس سے زیادہ ہوتے ہیں۔ انہیں معلوم ہوتا کہ بدگمانی بجائے خود گناہ ہے اور تعصب پر اقدام کرنے والا جہالت کا ارتکاب کرتاہے۔ وہ درس قرآن سنتے ہیں مگر قرآن کریم کے اس فرمان پر ہرگز غور نہیں کرتے: ”کسی گروہ کی دشمنی تمہیں زیادتی پرآمادہ نہ کرے“ انہیں معلوم ہوتا کہ مظلوم کی آہ اور عرش الٰہی کے درمیان کوئی رکاوٹ نہیں اور یہ کہ اگرچہ مہلت دی جاتی ہے مگر ظلم کی سزا مل کر رہتی ہے۔ وہ اس حدیث پر تدبر فرماتے کہ خدا کی مخلوق خدا کا کنبہ ہے اور یہ کہ اس میں مسلم اور غیرمسلم کاامتیاز بھی نہیں، چہ جائیکہ محض ایک مکتب ِ فکر سے اختلاف۔

    جامعہ پنجاب کی غیرقانونی اور غیرشرعی حکمرانی سے اسلامی جمعیت طلبہ نے خود کو تباہ کرلیا، سیاست میں ساکھ ہی سب کچھ ہوتی ہے اور وہ برباد ہوچکی۔ جماعت اسلامی کو اس نے ناقابل تلافی نقصان پہنچایا ہے اور اگر میری خطا معاف کی جاسکے تو عرض کروں کہ خود دین اسلام کو… ایرانی مولویوں اور افغانستان کے طالبان سے بڑھ کر۔ وہ مقتدر تھے ، ہیں، لاہور کے لوگ سوچتے ہیں کہ اقتدار کے بغیر اگر ان کا حال یہ ہے تو حکومت ملنے پر کیا ہوگا؟

    ہم سب ذمہ دار ہیں۔ عدل نہیں، ہم انتقام کے لئے جیتے ہیں۔ اگر آج ہم پر آصف علی زرداری، نواز شریف اور چودھری پرویز الٰہی، الطاف حسین، اسفند یار ولی خان اور مولانا فضل الرحمن مسلط ہیں تو ہم اس کے مستحق ہیں۔ سبھی نا انصاف ہوسکتے ہیں لیکن ہمارا مالک تو کبھی نہیں۔ سید ابو الاعلیٰ مودودی نے کہ دانا و بینا تھے اور ذاتی زندگی میں اُجلے اور شائستہ بھی بہت، یہ کہا تھا: جیسا دودھ، ویسا ہی مکھن اور اللہ کے آخری رسول نے ارشاد کیا تھا: تمہارے اعمال ہی تمہارے عمّال (حاکم) ہوتے ہیں۔ کیا ہم ہمیشہ حکومتوں کی اصلا ح کے درپے رہیں گے اور معاشرے کی اصلاح کبھی ہماری ترجیح نہ ہوگی؟ ہمیشہ دوسروں کی آنکھ کا تنکا دیکھیں گے، اپنی آنکھ کا شہتیر کبھی نہیں؟