منّو بھائی کی ایک نظم: ابھی قیامت نہیں آئی – عامر حسینی

 

منیر احمد قریشی /منّو بھائی (1933-2018) جنوری 17 بروز جمعرات لاہور میں انتقال کرگئے۔وہ پنجابی کے ایسے شاعر تھے جن کی آواز اپنی تھی اور پنجابی شاعری میں وہ ترقی پسند سوچ کے ترجمان تھے۔ان پہ تعزیتی مضمون میں لکھ چکا اور وہ ‘سجاگ نکتہ نظر’ میں شایع ہوچکا۔ان کی ویسے تو قریب قریب سبھی ہی نظمیں ہمارے سماج کا آشوب ہیں لیکن ایک نظم ایسی ہے جو طویل ہے اور یہ نظم 1988ء کے فوری بعد کی ہے جب اسحاق خان اور ضیاء الحق کی باقیات اپنا کھیل کھیل رہی تھی۔آج بھی منظر نامہ کچھ بدلا نہیں ہے لیکن اسٹبلشمنٹ آپس میں ہی ایک دوسرے سے برسر پیکار ہے۔فرق صرف اتنا ہے کہ اسٹبلشمنٹ کا ایک علمبردار نواز شریف اپنے آپ کو اینٹی اسٹبلشمنٹ کہتا ہے اور اپنے جرائم پہ پردہ ڈال کر اسٹبلشمنٹ کے نئے کھلاڑیوں کو منہ بھربھر گالیاں نکالتا ہے:

وال ودھا لئے رانجھے نیں تے ٹِنڈ کرا لئی ہِیراں نیں
مِرزے خاں نال دھوکہ کیتا اوہدے اپنیاں تِیراں نیں
مِیٹر لا کے خوب چلائی صاحباں اوہدیاں وِیراں نیں
پر اجے قیامت نئیں آئی
رانجھے نے بال بڑھائے اور ہیروں نے گنج کرالئے
مرزا خان سے ان کے اپنے تیروں نے دھوکہ کرلیا
مٹیر لگاکر خوب چلائی (اس کی ) صاحباں اس کے بھائیوں نے
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

سُکھ سرہانے بانہہ گوری، دُکھ سُوٹے چرسی چِلماں دے
بچے ٹیسٹ ٹیوباں دے، لَو لیٹر فِقرے فِلماں دے
مَت ماری گئی سیانف دی تے بھٹھے بہہ گئے عِلماں دے
پر اجے قیامت نئیں آئی

گورے بازؤں کے سکھ سرہانے ،چرسی چلموں سے دکھ کے سوٹے
بچے ٹسٹ ثیوب سے ، پریم پتر (سجے) فلم کے فقروں سے
دانائی کی مت ماری گئی اور علم کا ہوا بیڑا غرق
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

تاریخ تماشا بُھکھاں دا، تہذیب کھڈونا رَجاں دا
تنقید جگالی لفظاں دی، تشہیر سیاپا لَجاں دا
موسیقی راتب کُتیاں دا تے ادب گتاوا مجھاں دا
پر اجے قیامت نئیں آئی
تاریخ تماشا بھوکوں کا، تہذیب کھلونا بھرے پیٹوں کا
تنقید جگالی لفظوں کی ،تشہیر سیاپا لچوں کا
موسیقی رات کتّوں کا ،ادب چارہ بھینسوں کا
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

دھیاں تِن بشیراں دے گھر، پُتر چار کمالے دے
پَوہڑیاں دے وِچ قِصہ مُکا، لوتھ گئی وِچ نالے دے
لوکی بیٹھے رِشتے جوڑن، پِپل تے پرنالے دے
پر اجے قیامت نئیں آئی
بیٹیاں تن بشیراں کی،بیٹے چار کمالے کے
سیڑھیوں پہ قصّہ ہوا تمام،کیچڑ گئی اندر نالے کے
لوگ تھے بیٹھے رشتے جوڑنے،پیپل اور پرنالے پہ
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

روگ ہزاراں، اِکو نُسخہ، اکو راہ گزارے دی
مکھن تاندلیانوالے دا تے ماکھی ضلع ہزارے دی
تِیراں اگے سینہ تانے جُرات جھوٹھ غُبارے دی
پر اجے قیامت نئیں آئی
روگ ہزار، ایک ہی نسخہ ، اک ہی راہ گزارے کی
مکھن تاندلیانوالہ کا اور شہد ضلع ہزارے کا
تیروں کے سامنے سینہ تانے جرات جھوٹ غبارے کی
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

دھک مکوڑے پڑھن نمازاں ، دعوے کرن خدائیاں دے
بند کران شراباں نالے پرمٹ لین عیسائیاں دے
وعدے پیندے آپیں کردے ناں بدنام ڈیسائیاں دے
پر اجے قیامت نئیں آئی
کیڑے مکورے پڑھتے نمازیں،دعوے کرتے خدائی کے
بند کرتے شرابوں کو اور لیتے پرمٹ عیسائیوں کے
وعدے پیتے آپ ہی کرتے بدنام ڈیسائی کو
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

پارا تھرما میٹر دا، سیاست چوھدری طالب دی
ہیرا منڈی شاہیے دی تے دِلی مرزا غالب دی
چادر جنرل رانی دی تے چاردیورای جالب دی
پر اجے قیامت نئیں آئی

پارہ تھرما میٹر کا، سیاست چوہدری طالب کی
ہیرا منڈی شاہے کی اور دلّی مرزا غالب کی
چادر جنرل رانی کی چار دیواری (جیل) جالب کی
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

زیراں دی پَٹی دے مطلب نِکلن لگ پئے زبراں چوں
عینک پا کے انھے لبھن حق حقیقت خبراں چوں
ٹی وی دیاں قوالیاں سُن کے مُردے جاگے قبراں چوں
پر اجے قیامت نئیں آئی

زیر کی تختی سے مطلب نکلنے لگے زبر کے
عینک لگاکر اندھے ڈھونڈیں حقیقت خبروں میں
ٹی وی کی قوالیاں سنکر مردے جاگے قبروں میں
لیکن ابھی قیامت نہیں آئي

روزگار دی سولی ٹنگے جِیویں کریلے دلاں دے
لوکی بکرے، لیڈر لوبھی قربانی دیاں کھلاں دے
پھل کھڑے قبراں دے اُتے سوہنیاں سوہنیاں گَلاں دے
پر اجے قیامت نئیں آئی

روزگار کی سولی پہ لٹکے ایسے کریلے دلوں کے
لوگ بکرے، لیڈر لالچی قربانی اور کھالوں کے
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

حرف شکایت، ہونٹھ تروپے، قافیئے تنگ ردیفاں دے
سنگھی نونہہ غریباں دی، ہتھ کَٹے گئے غریباں دے
لوہلے لنگڑے پار اُتارن، پُل صراط تریفاں دے
پر اجے قیامت نئیں آئی

حرف شکایت ، ہونٹ پیاسے، قافیے تنگ ہوئے ردیفوں کے
ننگی بہو غریبوں کی ،ہاتھ کٹے غریبوں کے
لولے لنگرے یار پار کراتے، پل صراط تعریفوں کے
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

چِٹے ورقے دَین شہادت کالی شاہ جہالت دی
سچل وعدہ معاف گواہی، نئیں رہی لوڑ وکالت دی
غصے دے نال تھر تھر کنبے کرسی عرش عدالت دی
پر اجے قیامت نئیں آئی

سفید کاغذ دیتے ہیں شہادت کالی سیاہ جہالت کی
‎سچل ہی وعدہ معاف گواہ ہے، ضرورت نہیں رہی وکالت کی
غصّے سے تھر تھر کانپتی کرسی عرش عدالت کی
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

ویری اُچیاں محلاں دے پئے منگن راہ فصیلاں توں
منگن رحم قصائیاں کولوں تے خیرات بُخیلاں توں
خواباں دے وِچ بڑھکاں مارن موت ڈراوے مِیلاں توں
پر اجے قیامت نئیں آئی
دشمن اونچے محلوں کے مانگیں راہ فیصلوں سے
مانگیں رحم قصائیوں سے اور خیرات بخیلوں سے
خوابوں میں بڑھک مارں موت ڈرائے میلوں میں
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

عزت گئی اُستاداں دی تے بستہ غیب پڑھاکو دا
سیر گھیو دے مُل وِچ لبھے ہُن اِک پان تمباکو دا
ہنیرے دے وِچ پتہ نئیں لگدا تھانیدار تے ڈاکو دا
پر اجے قیامت نئیں آئی
عزت گئی استادوں کی اور بستہ غیب پڑھاکو کا
سیر گھی کے مول میں ملتا اب ایک پان تمباکو کا
اندھیرے میں پتا نہیں لگتا تھانے دار اور ڈاکو کا
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

نقلی دنداں ولے بُڈھے پُچھن بھاء اخروٹاں دے
سب توں بوہتیاں پڑھن کتاباں بوجھے اوور کوٹاں دے
لیندے پھرن مبارکباداں خالی ڈبے ووٹاں دے
پر اجے قیامت نئیں آئی

نقلی دانتوں والے بوڑھے ،پوچھیں بھاؤ اخروٹوں کا
سب سے زیادہ پڑھیں کتابیں جیبیں اوور کوٹوں کی
لیتے پھرتے مبارک بادیں خالی ڈبّے ووٹوں کے
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

بیڑی پھرے آل دوالے ریت وِچ کھبے چَپو دے
رنڈیاں وانگوں وِکدے فتوے مولوی مال ہڑپو دے
پھانسی میلے وِچ پٹھورے ویچن قاتل پپو دے
پر اجے قیامت نئیں آئی

کشتی پھرے آس پاس ریت میں دھنسے چپو کے
رنڈیوں کی طرح بکتے فتوے مولوی “مال ہڑپ” کے
پھانسی میلے اندر پٹھورے بیچتے قاتل پپو کے
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

لوکی گھراں تے مورچے لا کے کرن حفاظت فوجاں دی
گُردیاں اُتے بنھ سرہانے ملہم لواندے سوجاں دی
سینسر لا کے کرن نمائش اپنے سارے کوہجاں دی
پر اجے قیامت نئیں آئی

لوگوں نے گھروں میں مورچے لگا کے کرتے حفاظت فوجوں کی
گردوں پہ تکّے باندھ کر بام لگاتے سوجوں کی
سنسنر لگا کر کرتے نمائش اپنے سارے کوجھوں کی
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

اں دا دُدھ سمجھ کے پی گئے نیک کمائی نانی دی
ملکہ دے دربار وِچ دادے دی تصویر جوانی دی
پوتریاں نوں نامنظور حکومت کِسے زنانی دی
پر اجے قیامت نئیں آئی

شیر مادرسمجھ کر پی گئے نیک کمائی نانی کی
ملکہ کے دربار کے اندر دادے کی تصویر جوانی کی
پوتوں کو نامنظور حکومت کیسے زنانی کی
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

جمعے بزار سیاست وِکدی ودھ گئی قیمت گَڈواں دی
میئں شریف دے پُتراں نیں وی ڈھیری لا لئی لڈواں دی
بھٹو دی دھی تولن بیٹھی بھر ترکڑی ڈڈوآں دی
پر اجے قیامت نئیں آئی
حمعہ بازار سیاست بکتی بڑھ گئی قیمت کیڑوں کی
میاں شریف کے بیٹوں نے ڈھیری لگالی لڈؤوں کی
بھٹو کی بیٹی تولنے بیٹھی بھر تراوز مینڈکوں کی
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

اینی ہوئی منصوبہ بندی نوبت آگئی فاقے دی
ہر اِک چیز کھلوتی لگے ساہنوں ایس علاقے دی
دھوکہ چلدا اے یا فیر چلدی اے مرضی بابے ساقے دی
پر اجے قیامت نئیں آئی
اسقدر ہوئی منصوبہ بندی نوبت آگئی فاقے کی
ہر چیز کھڑی لگے ہمیں اس علاقے کی
دھوکہ چلتا ہے یا پھر جلتی مرضی بابا اسحاقے دی
لیکن ابھی قیامت نہیں آئی

Comments

comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


*