Pakistani state throws Ahmadi Muslims out of electoral process

Pakistani state throws Ahmadi Muslims out of electoral process

ahmadis

The Jamaat-i-Ahmadiya has announced a boycott of the general elections in protest at the “extraordinary discrimination” against the minority group. In a press statement on Sunday (5 May 2013), JA spokesman Saleemuddin said that the Ahmadis were the only minority group with a separate voters list, which was not in the spirit of a joint electorate. There was one list for Ahmadis, and one list for all other Pakistanis. “This is the worst kind of discrimination and bigotry,” he said, as well as an attempt to exclude Ahmadis from the national discourse.
It was also against the sayings of the Quaid-i-Azam, the fundamental rights enshrined in the Constitution and the international human rights conventions ratified by Pakistan. The spokesman said that the voter registration forms issued by the Election Commission of Pakistan required Ahmadis to dissociate themselves from the Holy Prophet (pbuh), which was against their religion. The Jamaat raised these issues with the Election Commission, but their concerns went unheeded, Saleemuddin said. “In order to register our protest, Jamaat-i-Ahmadiya Pakistan is announcing its disassociation from the general elections for 2013,” he said.

http://tribune.com.pk/story/544858/religious-discrimination-jamaat-i-ahmadiya-to-boycott-elections/

The Ahmadiya community will not cast votes in the May 11 elections because of the “attitude of the State”, Jamaat-i-Ahmadiya Pakistan Spokesperson Saleemudin told The Express Tribune. Ahmadis are unable to register as Muslim voters. The election commission used the NADRA data to register Ahmadis in a separate roll. However Ahmadis say they will not avail their right to vote. Saleemudin said there were up to 200,000 members of the community in the country. Every government, he said, has pandered to anti-Ahmadiya elements which was why Ahmadis had been unable to cast their votes.
“The separate voter list for Ahmadis published by the election commission contains our latest addresses…this exposes us to great risk,” Saleemudin said. Anyone can obtain these rolls, he said. Ahmadis have dissociated themselves from elections for nearly four decades. “We do not have voting rights to any assembly or district. We don’t even have representation in the town council of Chenab Nagar where 95 per cent of the population is Ahmadi,” Saleemudin said.
Ahmadis had participated in elections from 1947 to 1977 when there was a single electorate.

Separate electorates were introduced in 1985 through the eighth amendment. Those who claimed to be Muslim now had to sign a ‘certificate of faith’ denouncing the Ahmadi faith. “Because the form compelled us to call ourselves non-Muslims we were effectively excluded from the voting process,” said Saleemudin. Hope was raised during former president Pervaiz Musharaf’s regime after he announced a return to the joint electorate, he said. However, anti-Ahmadi elements protested against that in May 2002, forcing Musharaf to rescind his decision. On June 17, 2002, the government issued a separate list of voters in which Ahmadis were listed as non-Muslims. “That order…remains in force,” he said. Saleemudin said many people had asked him why Ahmadis did not simply fill out the form and get themselves registered. “I tell them we would never disassociate ourselves from the Holy Prophet (pbuh) to get registered as voters,” he said.

In December 2007, several members of the Ahmadiya community wrote letters to the acting prime minister, the chief election commissioner and the president protesting the laws discriminating against their community. Saleemudin said no one had responded except the election commissioner’s office which said he was busy. Saleemudin said a delegation of Ahmadis had met with Election Commissioner Fakhruddin G Ebrahim to convey their grievance, but the election would still be held under the same rules. Saleemudin said the government should revise the rules and facilitate their participation through joint electorate that should bear no reference to religion. “We will continue boycotting the elections till our demand is met,” he said.

Form A for voter’s registration states that if a voter claims to be a Muslim, he or she must not be associated with the Qadiani or Lahori Group nor call him or herself an Ahmadi.

http://tribune.com.pk/story/538686/franchise-ahmadis-still-out-of-electoral-process/

کہاں کا انتخاب، کون سا الیکشن؟

جمعرات 9 مئ 2013

انتخابات کی گہماگہمی کے دوران ایک بستی ایسی بھی ہے جس میں نہ کوئی انتخابی بینر، نہ کوئی پوسٹر، نہ جلسہ نہ جلوس
ملک کے طول و عرض میں الیکشن کی گہماگہمی عروج پر ہے اور آج انتخابی مہم کا آخری دن ہے۔
اسی طرح انتخابات اور اس کے بعد آنے والی حکومت کے بارے میں قیاس آرائیاں اور پیش گوئیاں بھی جاری ہیں جن کی شدت میں اب شاید مزید اضافہ ہو گیا ہے۔

ووٹوں کا تو پتا نہیں لیکن مسلم لیگ ن اور تحریکِ انصاف کے درمیان جلسہ جلسہ کھیل دلچسپ مرحلے میں جا پہنچا ہے۔ عمران خان کا اچانک گر جانا اور میاں صاحب کا اس پر کمال فراخ دلی سے اپنی مہم کو آخری اور اہم دنوں میں روک دینا ایک نئی روایت ہے۔
انتخابات کے حوالے سے مختلف سرگرمیوں پر نظر رکھنا شاید صحافتی ذمہ داریوں کا حصہ ہی ہے تو اسی سلسلے میں قدیم شہر چنیوٹ سے گزر رہے تھے تو خان صاحب کا جلسہ دیکھا جس میں خان صاحب ایک مخصوص مذہبی گروہ سے لاتعلقی کا اعلان کر رہے تھے اور حاضرین کو بتا رہے تھے کہ ان کے خلاف سازش ہو رہی ہے کہ ان کا نام احمدیوں کی حمایت کے حوالے سے لیا جا رہا ہے۔
چنیوٹ سے دس کلومیٹر دور احمدیوں کی بستی ہے تو سوچا وہاں سے بھی ہوتے چلیں۔ دریائے چناب سے گزرے تو بے ساختہ سوہنی کا خیال آیا کہ اس کے پاس بھی کچے گھڑے کے سوا شاید کوئی انتخاب نہ تھا شاید وہ یہ بھی جانتی ہو کہ بیچ منجدھار کوئی اس کو نہ بچا پائے گا۔

انہی سوچوں میں غلطاں چناب نگر میں داخل ہوئے جو کبھی ربوہ کہلاتا تھا۔ اس بستی میں داخلے کے وقت لگا کہ شاید یہاں الیکشن برائے نام ہی ہو رہا ہے کیونکہ مسلم کالونی کے علاقے سے گزرتے ہوئے تو کچھ جھنڈے اور بینرز نظر آئے مگر جیسے ہی آگے بڑھے تو فرق ایسا تھا جیسا مشرقی برلن سے مغربی برلن کے درمیان ہوا کرتا تھا۔

حیرانی کا عالم یہ تھا کہ نہ کسی امیدوار کا بینر، نہ کسی پارٹی کا جھنڈا، اور ان حالات میں انتخابی دفتر کا سوچنا شاید جرم ہوتا۔

دیواروں پر نظر پڑی تو کچھ ڈھارس بندھی کیونکہ جگہ جگہ مختلف تحریریں تھیں مگر قریب ہو کر دیکھا تو سگریٹ نوشی کو صحت کا دشمن قرار دے کر اس سے دور رہنے کی نصیحتیں لکھی تھیں۔
“یہ مٹی میری ماں ہے، یہ جیسا بھی سلوک کرے مگر میرے دل سے اس مٹی کی محبت کم نہ ہو سکے گی۔”
ربوہ کے ایک صاحب
ایک بزرگ کو روک کر پوچھا کہ آپ کس کو ووٹ دیں گے تو انھوں نے انکار میں سر ہلا دیا۔ خیال آیا کہ شاید اپنے گذشتہ نمائندے سے ناراض ہیں۔ جب اصرار کیا تو ان کا جواب سادہ سا تھا کہ جب میرے مذہبی عقائد کی بنا پر امتیازی سلوک ہو گا اور مجھے ووٹ دینے سے روکنے کے لیے روڑے اٹکائے جائیں گے تو پھر ووٹ کیسا اور کہاں کا انتخاب۔

ایک صاحب قریب ہی کھڑے تھے انہوں نے گفتگو میں شامل ہوتے ہوئے کہا کہ جناب ووٹ کا پیمانہ ایک ہے اور وہ ہے شناختی کارڈ تو پھر فلاں حلف نامہ اور فلاں فہرست کا مقصد کیا ہے؟ وہ بھی صرف ایک میرے فرقے کے لیے؟

انہوں نے الٹا سوال کر ڈالا کہ سارے پاکستانی خواہ وہ مسلمان ہوں یا سکھ، ہندو ہوں یا یہودی، مسیحی ہوں یا پارسی یا کسی بھی مذہب کا پیروکار تو ان کے لیے تو ایک فہرست ہے اور میرے لیے الگ فہرست؟ کیا میں اچھوت ہوں یا میں سوتیلا ہوں؟ کیا میں پاکستانی نہیں ہوں؟
اب اس کا جواب کیا دیا جاتا یہ آپ پر چھوڑتے ہیں مگر جواب سن کر آگے بڑھنے کو ہی تھے کہ بزرگ نے ہاتھ پکڑ کر کہا کہ ’یہ مٹی میری ماں ہے یہ جیسا بھی سلوک کرے مگر میرے دل سے اس مٹی کی محبت کم نہ ہو سکے گی‘۔

سارا شہر گھوم لیا، کئی خواتین و حضرات سے بات کی مگر سب کا ایک ہی جواب تھا کہ ’یہ تفریق ان کے ساتھ ہی کیوں؟‘

ربوہ اس ملک میں ایک جزیرہ سا لگا جہاں نہ تو انتخابات ہیں اور نہ ہی ووٹ دینے پر آمادہ شہری۔ ایسا کیوں ہے، اس کا جواب دینے کے لیے کوئی بھی راضی نہیں۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2013/05/130508_election2013_ahmadi_zis.shtml

This video explains why Ahmadis are not voting in Pakistan elections 2013: https://vimeo.com/65828484

[youtube id=”Opkt1vx9Ko0″ width=”600″ height=”340″ position=”left”]