داعش اور تکفیری تنظیموں کے خلاف کامیابی کے لئے سعودیہ سے آنے والے تکفیری نظریات اور فنڈنگ کو بھی روکنا ہوگا – خرم زکی

isis-army-700x430

جبھت النصرہ اورداعش دہشت گرد تنظیم ہو نے کے ساتھ ساتھ تکفیری سوچ اور نظر یہ بھی رکھتے ہیںاگر ہم واقعتًا ان جیسی تنظیموں سے لڑنا چا ہتے ہیں تو یہ دیکھنے کی ضرورت ہے کہ کہا ں سے یہ سوچ جنم لے رہی ہے اور پوری دنیا میں پھیل رہی ہے


کیا یونایٹڈ نیشن سیکیورٹی کونسل اتنی مضبوط ہے کہ وہ اپنے فیصلے آزادانہ کر سکے اورسعودی عرب یا کویت یا دیگر امریکی اتحادی پٹھوجو وہاں پربیٹھے ہیں جن کو برطانیہ نے زبردستی مسلط کر دیا تھا سو سال قبل ، ان کے خلاف وہ کوئی بات کر سکے


داعش کی ساری سوشل نیٹ ورکنگ اور اکاونٹ سعودی عرب سے کنٹرول ہو رہے ہیں ان کو سار ی فنڈنگ کویت ،قطر اور سعودی عرب سے مل رہی ہے تو کیا یونایٹڈ نیشن سیکیورٹی کونسل اسکے خلاف فیصلے لینےکےلیے تیار ہے اسکا جواب ظا ہر ہے کہ نہیں ہے کیوں کے سلا متی کونسل کے فیصلے امریکہ کے مفادات کے تا بع ہیں اور امریکہ نہیں چاہتا کہ اس علا قے میں امن قائم ہو


خود مسلمانوں اور ہما رے حکمرانوں کو بیدار ہونا پڑنا پڑ ے گا کہ یہ جوسعودی گورنمنٹ خطے میں اپنا تسلط قائم کرنے کے لیے تکفیری سوچ کو انڈونیشیا تک پھیلا رہی ہے اس سلسلے کو رکنا چاہیے – یونایٹڈ نیشن اگرچاہتی ہے کہ یہ فتنہ اور دہشت گردی ختم ہو جو انکو بھی نقصان پہنچا رہی ہے تو اسکے لیے ضروری ہے کہ ان کے جو سہولت کار ہیں انکو پکڑا جائے اور ان سے پوچھ گچھ کی جائے تا کہ پتہ چلے کہ کون لوگ ہیں جو ان تکفیری نظریات کو پھیلا رھے isisہیں

 

Comments

comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


*