Homophobia: Confession of a Pakistani guy – by Dr. Shazia Nawaz

Right-wing clerics of all Muslim sects suffer from homophobia.

Let’s call him Kasif. He is my cousin and a 28 year old young man. He is very handsome, went to English medium schools, lives in a posh area in Lahore, has several cars, and speaks English fluently. He read my posts on homosexuals and decided to share his story with me. “There are countless homosexuals in Lahore Baji”, he said.

“Last year a middle aged man who I met in a van started to flirt with me. I gave him a vague response. He asked me if I wanted to meet him up at a private place to have some fun. It made me so angry. What a bad person he was! And he thought that I could be a part of something like this? I decided to punish him. I said, ‘Sure dude, let’s meet tomorrow and I’ll pick you up from the same place.’ I spoke with my friend and he agreed that this pig needed a lesson. The next day, both of us picked him up and took him outside Lahore.

He sort of realized by that time that something bad was going to happen to him. He started to look afraid and said he wanted to go. I said, ‘We will let you go. Let us have our fun first.’ Then both of us beat him up, tore his clothes, broke his cell phone, took his wallet, broke his watch, and left him in the middle of no where, miles and miles away from Lahore. Sachi baat hay baji, now I regret it. I don’t know what happened to him. I wonder if he ever made it back to town?”

My cousin looked uneasy when he got to this part. He still seemed unsure if he had “punished” the guy correctly or had “punished” him too much.

It took me a few minutes to analyze it and offer a conclusion to my cousin. I asked him if he would have done this same thing if it was a woman who had asked him for some fun.

I told him that what he did fell under the category of a hate crime. That homosexual man did not try to molest him. An adult man asked another adult man for a date. If my cousin was not homosexual, or not in to dating, he could have just said NO. But what my cousin did to that homosexual man was truly a crime.

Interestingly, many reading this story would be confused and would find it difficult to comprehend where the blame exactly should go, and such is a Pakistani mind!

ایک پاکستانی لڑکے کا اعتراف

کہانی میں ان کو کاشف کہوں گی . وہ میرے کزن اور ایک 28 سال کی عمر نوجوان ہیں. وہ بہت اچھی شکل کے نوجوان ہیں ، انگریزی میڈ یم اسکول پرہے ، لاہور میں ایک متمول علاقے میں زندگی گزآر رہے ہیں ، کئی کاریں ہیں ، اور انگریزی روانی سے بولتے ہیں. انہوں نے ہم جنس پرستوں پر مرے خیالات پڑھ کر میرے ساتھ اس کہانی کے اشتراک کرنے کا فیصلہ کیا . انہوں نے
“کہا کہ لاہور میں ان گنت ہم جنس پرست ہیں ، انہوں نے کہانی کچھ اس طرح سےشروع کی

گزشتہ سال ایک درمیانی عمر کا شخص جو مجھے ایک وین میں ملا، اس نے مرے ساتھ فلرٹ شروع کر دیا. میں نے اسے مبہم سا” جواب دیا. اس نے مجھ سے کہا کہ میں اس سے ایک پرائیویٹ جگہ پر ملوں کچھ مزہ کرنے کے لئے. اس بات سے مجھے بوہت غصہ آیا . کیا برا آدمی تھا! اور اس نے سوچا کہ میں کچھ اس طرح کا ہوں ؟ میں نے اس کو سزا دینے کا فیصلہ کیا. میں نے کہا، بالکل یار، کل ملیں اور میں آپ کواس ہی جگہ سے اٹھا لوں گا . میں نے اپنے دوست کے ساتھ بات کی اور اس نے اس بات پر اتفاق کیا کہ اس سور کو سبق کی ضرورت ہے. اگلے دن، ہم دونوں نے اسے اٹھایا اور لاہور کے باہر لے گیۓ .اسے پتا چل گیا کے اس کے ساتھ کچھ برا ہونے جا رہا تھا. وہ ڈرگیا اور کہنے لگا کہ وہ جانا چاہتا ہے . میں نے کہا، ‘ہم تمہیں جانے دیں گے . ہمیں ہمارا مزہ تو کر لینے دو پہلے. اس کے بعد ہم دونوں اس کوبہت مارا ، اس کے کپڑے پھاڑ دیے ، اس کا موبائل فون توڑ دیا، اس کا پرس لے لیا، اس کی گھڑی توڑ دی ، اور لاہور سے کئی میل دور ویرانے میں اسے چھوڑ دیا. سچی بات ہے باجی ، اب میں اس “پر بہت نادم ہوں. مجھے نہیں معلوم کہ اس کے ساتھ کیا ہوا . کیا وہ واپس شہر پھنچ بھی سکا

یہاں اس کی کہانی ختم ہو گئی. مجھے چند منٹ لگے اس کا تجزیہ کرنے کے لئے اور میں نے اس سے پوچھا کہ کیا یہ وہ یہی کچھ کرتا اگر ایک عورت نے اس کو اکیلے میں بولایا ہوتا . میں نے اسے بتایا کہ جو اس نے کیا وہ ایک طرح سے نفرت کے جرم میں آتا ہے. مطلب کسی کے ساتھ زیادتی کرنا صرف اس لئے کہ اپ کو اس بندے کا مذ ہب ،رہن سہن ، یا طور طریقے پسند نہیں . ایک بالغ مرد نے ڈ یٹ کے لئے ایک اور بالغ شخص سے پوچھا. اگر میرے کزن کو بات پسند نہیں آی، تو وہ نہ کہ سکتا تھا . لیکن مرے کزن نے جو اس ہم جنس پرست آدمی کے ساتھ کیا ، وہ واقعی ایک جرم تھا

دلچسپ بات یہ ہے کہ بہت آپ میں سے پڑھنے والے اس الجھن میں ہوں گےکہ الزام کسے جانا چاہیے . کس نے یہاں جرم کیا تو سا ری دنیا میں لوگ کنفیوزڈ ہیں مگر ہم پاکستانی زیادہ ہی کنفیوزڈ ہیں.

Latest Comments
  1. Funny
    Reply -
  2. Fazil Brelvi
    Reply -
  3. AA
    Reply -
  4. Asma bint Marwan
    Reply -
  5. Fazil Barelvi
    Reply -

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You may use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <strike> <strong>

Current ye@r *