جو ہم کہتے ہیں یہ بھی کیوں نہیں کہتا، یہ کافر ہے


Source of picture

جو ہم کہتے ہیں یہ بھی کیوں نہیں کہتا، یہ کافر ہے
ہمارا جبر یہ ہنس کر نہیں سہتا، یہ کافر ہے

یہ انساں کو مذاہب سے پرکھنے کا مخالف ہے
یہ نفرت کے قبیلوں میں نہیں رہتا، یہ کافرہے

بہت بے شرم ہے یہ ماں جو مزدوری کو نکلی ہے
یہ بچہ بھوک اک دن کی نہیں سہتا، یہ کافر ہے

یہ بادل ایک رستے پر نہیں چلتے یہ باغی ہیں
یہ دریا اس طرف کو کیوں نہیں بہتا، یہ کافر ہے

ہیں مشرک یہ ہوائیں روز یہ قبلہ بدلتی ہیں
گھنا جنگل انہیں کچھ بھی نہیں کہتا، یہ کافر ہے

یہ تتلی فاحشہ ہے پھول کے بستر پہ سوتی ہے
یہ جگنو شب کے پردے میں نہیں رہتا، یہ کافرہے

شریعاً تو کسی کا گنگنانا بھی نہیں جائز
یہ بھنورا کیوں بھلا پھر چپ نہیں رہتا یہ کافر ہے

Further readings

Just who is not a kafir? – by Amir Mir

Kafir factory: Shia kafir, Qadiani kafir – by Mohammed Hanif

Only 50 percent Sunnis in Pakistan accept Shias as Muslims – Pew Survey

Kafir kafir Shia kafir, jo na manay wo bhi kafir – by Zalaan

7 September 1974: When Pakistan formally became a Takfiri Republic

Takfiri Deobandi militants’ jihad against mushrik Barelvis and kafir Shias

Let’s burn a Shia mosque!

Manqabat: Everyone who recites Kalima of Allah and Muhammad is a Muslim (Hum Muhammad kay kalma go Musalman hain)

Latest Comments
  1. Abdul Nishapuri
    Reply -
  2. saima
    Reply -

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You may use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <strike> <strong>

Current ye@r *